19

شوگر ملز کے حکومت کے خلاف تحفظات دور، حالات جلد معمول پر آجائیں گے: چیئرمین ایسوسی ایشن

پاکستان شوگر ملز ایسوسی ایشن (پی ایس ایم اے) کے مرکزی چیئرمین چوہدری ذکاء اشرف نے جمعہ کو کہا کہ حکومت کے خلاف تحفظات اب دور ہو گئے ہیں اور چینی کی پیداوار اور فروخت سے متعلق تمام معاملات جلد معمول پر آ جائیں گے۔

اشرف کا یہ تبصرہ وزیراعظم عمران خان سے ملاقات کے بعد سامنے آیا، جہاں چینی کے موجودہ بحران سمیت شوگر انڈسٹری پر بات چیت ہوئی۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ گنے کی صنعت ملک کی اہم صنعت ہے۔

وزیر اعظم نے نوٹ کیا کہ اشرف “اچھا کام کر رہے ہیں” اور انہیں یقین دلایا کہ دیگر صنعتوں کی طرح شوگر انڈسٹری کو بھی تحفظ فراہم کیا جائے گا۔

وزیر اعظم نے کہا، “حکومت اپنا کام کرے گی اور شوگر انڈسٹری کو اپنا کام کرنا چاہیے۔”

ملاقات کے بعد میڈیا سے بات کرتے ہوئے اشرف نے کہا کہ حکومت اور انڈسٹری کے درمیان تمام زیر التوا مسائل حل ہو گئے ہیں۔

ایسوسی ایشن کے چیئرمین نے کہا، “(مشیر برائے خزانہ) شوکت ترین نے یہ بھی کہا ہے کہ وزیر اعظم نے ہمیں مکمل اختیار دیا ہے،” انہوں نے مزید کہا کہ وزیر اعظم نے صنعت کو حکومت کے “مکمل تعاون” کی یقین دہانی کرائی ہے۔

پنجاب میں شوگر کرشنگ سیزن کے آغاز کے حوالے سے بات کرتے ہوئے اشرف نے کہا کہ جنوبی پنجاب میں 15 نومبر اور وسطی پنجاب میں 20 نومبر سے سرگرمیاں شروع ہوں گی۔

اشرف نے کہا کہ ہم حکومت کے ساتھ مل کر کام کریں گے۔

انہوں نے ریمارکس دیئے کہ گنے کی قیمتیں مقرر کرنا “صوبوں کا اختیار” ہے اور انہوں نے کہا کہ پنجاب میں 225 روپے فی من اور سندھ میں 250 روپے فی من ہے۔

انہوں نے کہا کہ مارکیٹ فورسز چینی کی قیمت کا تعین کریں گی اور اس اعتماد کا اظہار کیا کہ کرشنگ سیزن شروع ہوتے ہی قیمتیں گر جائیں گی۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ مشیر خزانہ نے ایسوسی ایشن کو یقین دلایا ہے کہ حکومت “گنے اور چینی کی قیمت طے نہیں کرے گی”۔

انہوں نے کہا، “حکومت چینی کے اسٹریٹجک ذخائر کو برقرار رکھے گی اور چینی کے لیے کوئی سبسڈی نہیں دے گی۔”

انہوں نے مزید کہا کہ “قیمتیں ایسی ہوں گی کہ وہ لوگوں کے لیے قابل برداشت ہوں اور ہمیں کسی قسم کے نقصان کا سامنا بھی نہیں کرنا پڑے گا۔”

اشرف نے کہا کہ چینی کی پیداوار 65 لاکھ ٹن متوقع ہے۔

شوگر مل مالکان اور انتظامیہ کے خلاف حکومتی کریک ڈاؤن کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ اگر چینی بیچنے والوں کو جیلوں میں ڈالا جائے گا تو چینی کون بیچے گا؟

اشرف نے کہا کہ حکومت بینکوں کو شوگر ملوں کو ورکنگ کیپیٹل فراہم کرنے پر آمادہ کرے گی اور انکشاف کیا کہ اس نے ملوں سے کسانوں کو 15 سے 20 دن میں ادائیگی کرنے کی تاکید کی ہے۔

آج دی نیوز کی ایک رپورٹ کے مطابق پنجاب حکومت اور پی ایس ایم اے کے درمیان مذاکرات کامیاب ہو گئے ہیں۔

ذرائع نے جمعرات کو بتایا کہ حکومت ان ملوں کو نو آبجیکشن سرٹیفکیٹ (این او سی) جاری کرے گی، جو بینک قرضے حاصل کر سکیں گی۔

گنے کی امدادی قیمت 225 روپے فی من مقرر کی گئی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ ملز کے خلاف ایف آئی اے اور ایف بی آر کے مقدمات مشاورت سے طے کیے جائیں گے اور ملز مالکان اور انتظامیہ کے خلاف کریک ڈاؤن بند کیا جائے گا۔

ذرائع کا مزید کہنا تھا کہ پنجاب کین کمشنر ملز کے معاملات میں غیر ضروری مداخلت نہیں کریں گے۔ تاہم، کسانوں کو ہر قیمت پر ادائیگی کو یقینی بنایا جانا چاہیے۔

وزیراعظم عمران خان کی ہدایت پر شوگر ملز کے مطالبات پورے کرنے کے لیے مشیر خزانہ شوکت ترین کی سربراہی میں 8 رکنی کمیٹی تشکیل دے دی گئی۔ چار وفاقی سیکرٹریز اور اتنے ہی وفاقی وزراء کمیٹی کے ممبر ہوں گے جو شوگر ملز کے خلاف ایف آئی اے اور ایف بی آر کے تمام کیسز کا جائزہ لے گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں