16

این ڈی یو کا طالب علم اینٹی نیوکلیئر ویپن اکیڈمی کے لیے پہلا پاکستانی منتخب ہوا

یہ پروگرام 2019 میں شروع ہوا تھا اور ہر سال ہوتا ہے۔ اس سال کومل ان 41 شرکاء میں شامل تھی جنہیں منتخب کیا گیا تھا۔ وہ نہ صرف پہلی پاکستانی ہیں بلکہ اس کورس کے لیے منتخب ہونے والی پہلی پاکستانی خواتین ہیں۔

میں کرسکتا ہوں ایک وسیع، جامع مہم ہے جو دنیا بھر میں سول سوسائٹی کو متحرک کرنے پر مرکوز ہے تاکہ جوہری ہتھیاروں کو ممنوع اور ختم کرنے کے مقصد کی حمایت کی جا سکے۔

جوہری ہتھیاروں اور عالمی سلامتی کے پروگرام کے ذریعے میں کرسکتا ہوں عالمی رہنماؤں کی پرورش کرتا ہے جو جوہری تخفیف اسلحہ کے لیے کام کرتے ہیں اور زیادہ پرامن اور محفوظ دنیا کے لیے ٹھوس شراکت کر سکتے ہیں۔

کومل کہتی ہیں، “میں تعلیمی نقطہ نظر سے جوہری تخفیف اسلحہ کے بارے میں مہمات کی حوصلہ افزائی کرکے بحث کو بڑھاؤں گی۔ وہ جوہری ہتھیاروں کی جانچ کی جگہوں کے ارد گرد ماحولیاتی خطرات پر بھی تحقیق کرے گی۔

کومل کہتی ہیں کہ جب بھی جوہری پالیسیاں بنائی جاتی ہیں تو عام طور پر انسانی ہمدردی کے تناظر کو چھوڑ دیا جاتا ہے۔

پروگرام کا معیار یہ ہے کہ جوہری ہتھیار رکھنے والی ریاستوں جیسے کہ برطانیہ، امریکہ، جرمنی، روس اور چین سے آدھے شرکاء کا انتخاب کیا جائے اور باقی شرکاء پاکستان، بھارت اور اسرائیل جیسی غیر تسلیم شدہ جوہری ہتھیار رکھنے والی ریاستوں سے ہوں۔ .

نیوکلیئر ہتھیار جنوبی ایشیا میں ایک فلیش پوائنٹ ہیں کیونکہ پاکستان اور بھارت ایک دوسرے کے حریف ہیں۔ پاکستان نے پہلی بار 1998 میں جوہری ہتھیاروں کا تجربہ کرنا شروع کیا، جو کہ باضابطہ طور پر جوہری ہتھیار کا تجربہ کرنے والی دنیا کی ساتویں ریاست بن گئی۔ اس پروگرام کے بانی ڈاکٹر اے کیو خان ​​کا ابھی اسی اکتوبر میں انتقال ہوگیا۔

اس سال اس پروگرام کے دو موضوعات ہیں، جوہری ہتھیاروں کے انسانی اثرات اور جوہری ہتھیاروں کے سیاسی، قانونی اور تکنیکی پہلو اور عالمی سلامتی۔

پروگرام کو دو حصوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔ پہلا حصہ آن لائن سیشنز کے بارے میں ہے اور اس میں مضامین اور ویبینرز شامل ہیں اور دوسرا حصہ ہیروشیما میں ہوگا۔

پہلا ابھی ختم ہوا ہے اور تمام طلباء نے اپنے حتمی مضامین جمع کرائے ہیں جبکہ حصہ دو کی تاریخیں عارضی ہیں۔ یہ فروری یا مارچ میں شروع ہوگا۔

کومل علی شاہ کراچی میں پیدا ہوئیں۔ اس کا ایک چھوٹا بھائی ہے۔ اس کی والدہ ایک گھریلو خاتون ہیں اور اس کے والد ایک تاجر ہیں۔ اسکول کی تعلیم مکمل کرنے کے بعد، اس کا خاندان 2012 میں اسلام آباد چلا گیا اور یہیں سے اس نے اسٹریٹجک اور نیوکلیئر اسٹڈیز میں ماسٹرز کیا۔ وہ اس وقت نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی میں ایم فل کر رہی ہیں۔

کومل کہتی ہیں، ’’میں اپنی فیملی میں اس فیلڈ میں آنے والی پہلی خاتون ہوں۔ وہ اپنے طور پر موضوع کا انتخاب کرتی ہیں، یہ جان کر کہ یہ کتنا مشکل ہے کیونکہ اس شعبے میں شاید ہی کوئی خواتین ہوں۔ وہ کہتی ہیں کہ پالیسی سازی پر مردوں کا غلبہ ہے اس لیے ہمیں کوئی عورت نظر نہیں آتی۔ “اس کورس میں، میں دوسرے ممالک کے اسٹریٹجک کلچر اور ان کی جوہری پالیسیوں کے بارے میں سیکھ رہا ہوں۔”

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں