69

افغان جنگ کے دوران مغربی میڈیا پاکستان کو کریڈٹ دینے میں ناکام رہا، وزیراعظم عمران خان

وزیر اعظم عمران خان نے پیر کو کہا کہ افغانستان میں غلطیاں امریکہ نے کیں لیکن پاکستان کو اس صورتحال کا خمیازہ بھگتنا پڑا۔

لاہور میں سالانہ مارگلہ ڈائیلاگ کے افتتاحی اجلاس کے دوران خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے مغربی میڈیا کو تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ پاکستان کی قربانیوں کا کریڈٹ پاکستان کو دینے کے بجائے ملک پر ’ڈبل گیم‘ کھیلنے کا الزام لگایا گیا اور اس کی ساکھ کو نقصان پہنچا۔ بین الاقوامی سطح پر بدنام کیا گیا۔

وزیراعظم نے کہا کہ امریکہ کی کوتاہیوں کا ذمہ دار پاکستان کو ٹھہرایا گیا۔

وزیر اعظم نے مزید کہا کہ افغانستان میں جنگ کے دوران پاکستان کو سب سے زیادہ نقصان اٹھانا پڑا کیونکہ یہ واحد امریکی اتحادی تھا جس نے 80,000 سے زیادہ جانی نقصان اٹھایا، لاکھوں افراد بے گھر ہوئے اور 100 بلین ڈالر سے زیادہ کا نقصان ہوا۔

انہوں نے کہا کہ “قومی قیادت کی افغان صورت حال کو سمجھداری سے سنبھالنے میں ناکامی نے ملک کو دو اہم حامی اور امریکہ مخالف تقسیموں میں ڈال دیا۔”

وزیر اعظم نے کہا کہ عالمی برادری کی جانب سے پاکستان پر غلط وجوہات کا الزام لگایا گیا، جب کہ وہ نئی دہلی کی طرف سے بھارتی مقبوضہ جموں و کشمیر (آئی او جے کے) میں ہونے والے مظالم پر خاموش رہا۔

قانون کی حکمرانی، تعلیم اور کرپشن
وزیر اعظم نے دیگر معاملات پر بھی روشنی ڈالی اور کہا کہ معاشرے کے پسماندہ طبقات کی ترقی پوری قومی سلامتی کو یقینی بنانے کے لیے اہم ہے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ قانون کی حکمرانی اور سب کے لیے مساوات جمہوریت کے لیے پیشگی شرائط ہیں اور افسوس کا اظہار کیا کہ پاکستان میں بیک وقت تین تعلیمی نظاموں یعنی انگریزی اور اردو میڈیم اسکولوں اور مدارس کی وجہ سے عدم مساوات کا سامنا ہے۔

وزیر اعظم نے یہ بھی نشاندہی کی کہ نظام کے تعلیمی معیارات میں فرق کے نتیجے میں تین مختلف قسم کی نسلیں ملازمتوں کے مواقع میں امتیازی سلوک کا شکار ہوئیں۔

انہوں نے کہا، “کرپشن، خاص طور پر اشرافیہ کی، ملک کی ترقی کے لیے نقصان دہ ہے،” انہوں نے مزید کہا کہ پاکستانی سکالرز اور ماہرین تعلیم کو تحقیق اور ترقی میں سرمایہ کاری کرنے کی ضرورت ہے کیونکہ تحقیق معاشرے کے اندر اصل سوچ کو جنم دیتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ “دوسروں کو آپ کی تعریف کرنے کی بجائے آپ کو اپنی تعریف کرنی ہوگی۔”

وزیر اعظم نے یہ بھی کہا کہ گہرائی سے تحقیق کی کمی کی وجہ سے افغانستان جیسے اہم مسائل پر مغربی تھنک ٹینکس کی سیکنڈ ہینڈ معلومات پر انحصار کرنا پڑا۔

انہوں نے کہا کہ اس صورتحال میں مقامی تھنک ٹینکس کا کردار اہم ہے تاکہ مغربی لابیوں کی طرف سے مسلسل تنقید کا نشانہ بننے کے بجائے دنیا میں پاکستان کے نقطہ نظر کو مؤثر طریقے سے اجاگر کیا جا سکے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں