56

قندیل بلوچ کے بھائی کو کیوں بری کیا گیا؟

سوشل میڈیا اسٹارلٹ قندیل بلوچ کے بھائی کو حال ہی میں لاہور ہائی کورٹ (ایل ایچ سی) کے ملتان بینچ نے عدم ثبوت کی بنا پر بری کر دیا تھا۔

محمد وسیم اس سے قبل غیرت کے نام پر قتل کے مقدمے میں اپنی بہن کا گلا دبا کر قتل کرنے کا اعتراف کر چکا ہے اور اسے ٹرائل کورٹ نے عمر قید کی سزا سنائی تھی۔

اس خبر کے نشر ہونے کے فوراً بعد، ایل ایچ سی کے فیصلے پر خواتین کے حقوق کے کارکنوں اور سول سوسائٹی کی طرف سے غم و غصے کا اظہار کیا گیا، جنہوں نے محمد وسیم کو جانے کی اجازت دینے پر عدالتی نظام کو تنقید کا نشانہ بنایا۔

وسیم کو کیوں رہا کیا گیا؟
ایل ایچ سی کے فیصلے کی اہم جھلکیاں یہ ہیں:

قتل کی رات بلوچ کے والد محمد عظیم نے پولیس کو بتایا تھا کہ اس کے بیٹے وسیم نے غیرت کے نام پر قتل کیا ہے اور اسے دوسروں نے سہولت فراہم کی تھی۔
عظیم نے حق نواز، عبدالباسط، محمد عبدالقوی، محمد ظفر حسین اور محمد عارف کو بھی ملوث کیا۔

ٹرائل کورٹ نے مجرم وسیم کو عمر قید کی سزا سنائی لیکن دیگر افراد کو بری کر دیا۔

بعد میں، وسیم نے اصرار کیا کہ اسے “اس کیس میں جھوٹا پھنسایا گیا”، یہ دعویٰ کرتے ہوئے کہ پولیس نے ان کے والد پر دباؤ ڈالا کہ وہ کسی کو پھنسائیں ورنہ وہ بھی ملوث ہوں گے۔

بیان میں وسیم نے یہ بھی کہا کہ ان سے تشدد کے ذریعے عدالتی اعترافی بیان حاصل کیا گیا۔

پھر اگست 2019 میں بلوچ کے والدین نے ٹرائل کورٹ کو بتایا کہ انہوں نے وسیم کو معاف کر دیا ہے اور انہیں بری ہونے پر کوئی اعتراض نہیں ہے۔

والدین کے بیانات موصول ہونے پر، ٹرائل کورٹ نے “فی الحال” درخواست کی اجازت نہیں دی۔ اس پر لاہور ہائیکورٹ کے فیصلے میں کہا گیا ہے کہ ’’یہ واضح تھا کہ دونوں فریقین کے درمیان سمجھوتہ مکمل ہوچکا تھا تاہم اس کا اثر ایک خاص وقت تک ملتوی کردیا گیا‘‘۔

لاہور ہائیکورٹ نے وسیم کے اعترافی بیان کا بھی حوالہ دیا، جہاں اس نے کہا کہ اس نے اپنی بہن کو اس کے بارے میں گردش کرنے والی ویڈیوز اور تصاویر کی وجہ سے قتل کیا۔ یہاں، ایل ایچ سی نے دلیل دی کہ بلاشبہ وسیم نے “تصاویر اور ویڈیوز کی وجہ سے اپنی بہن کے قتل کی وجہ بتائی لیکن پھر بھی اس کا یہ مطلب نہیں کہ قتل غیرت کے نام پر کیا گیا۔”

لاہور ہائیکورٹ نے یہ بھی نوٹ کیا کہ وسیم کا اعترافی بیان قابل اعتراض حالات میں ریکارڈ کیا گیا۔ جیسا کہ اسے دوپہر 02:30 بجے مجسٹریٹ کے سامنے پیش کیا گیا، جبکہ مبینہ اعتراف جرم 3:00 بجے ریکارڈ کیا گیا۔ فیصلے میں کہا گیا ہے کہ “اس طرح کے ایک سنگین اور ہائی پروفائل کیس میں، اپیل کنندہ کے لیے مصالحت کے لیے صرف 30 منٹ کا وقت ان پر خوف اور غیر ضروری اثر و رسوخ کے تاثر کو دور کرنے یا اسے ختم کرنے کے لیے غیر معقول تھا۔”

اس میں مزید کہا گیا ہے کہ یہ واضح نہیں ہے کہ کیا وسیم کو اعتراف جرم کے دوران ہتھکڑیوں میں پیش کیا گیا تھا، جو اعتراف جرم ریکارڈ کرانے کے لیے عدالت عظمیٰ کے مقرر کردہ قوانین کے خلاف ہوگا۔

عدالت کا حکم ہے کہ مندرجہ بالا حالات کو دیکھتے ہوئے اعترافی بیان کی قدر کو کاغذ کے ٹکڑے سے زیادہ نہیں سمجھا جا سکتا۔

اس میں مزید کہا گیا ہے کہ “ایک بار جب اعترافی ثبوت ضائع کر دیے جاتے ہیں، تو استغاثہ کے پاس یہ ثابت کرنے کے لیے کوئی اور مواد موجود نہیں ہے کہ یہ غیرت کے نام پر قتل کا معاملہ تھا۔”

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں