52

لاہور ہائیکورٹ نے وزیراعلیٰ کے انتخاب میں تاخیر پر سیکرٹری پنجاب اسمبلی کو طلب کر لیا

لاہور ہائیکورٹ کے چیف جسٹس محمد امیر بھٹی نے جمعہ کو مسلم لیگ (ن) کے رہنما حمزہ شہباز اور ڈپٹی سپیکر دوست محمد مزاری کی جانب سے دائر الگ الگ درخواستوں کی سماعت کرتے ہوئے وزیراعلیٰ پنجاب کے انتخاب سے متعلق متعلقہ ریکارڈ طلب کر لیا۔ سیکرٹری پنجاب اسمبلی

تاہم جسٹس بھٹی نے مزاری کے وکیل کی پنجاب اسمبلی میں داخلے کی درخواست مسترد کر دی۔ لاہور ہائیکورٹ کے چیف جسٹس نے کہا کہ اس حوالے سے مناسب حکم دینے کے لیے ریکارڈ عدالت میں پیش کیا جائے۔

حمزہ اور مزاری نے وزیراعلیٰ پنجاب کے انتخاب کے سلسلے میں ہائی کورٹ میں دو الگ الگ درخواستیں دائر کی تھیں۔

حمزہ نے عدالت سے استدعا کی تھی کہ متعلقہ حکام کو وزیراعلیٰ کی نشست پر ووٹنگ کے لیے جلد از جلد اسمبلی کا اجلاس بلانے کا اعلان کیا جائے جبکہ مزاری نے پی اے اسپیکر کے اس فیصلے کو منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا تھا جس نے ان کے قائم مقام اسپیکر کے اختیارات چھین لیے تھے۔

سماعت کے آغاز پر مزاری کے وکیل نے بینچ کو آگاہ کیا کہ اسپیکر پرویز الٰہی نے غیر قانونی طور پر اختیارات واپس لیے اور وزیراعلیٰ کے انتخاب میں رکاوٹیں ڈال رہے ہیں۔

جسٹس بھٹی نے استفسار کیا کہ اگر سپیکر انہیں سونپ سکتے ہیں تو وہ اختیارات واپس کیوں نہیں لے سکتے؟

مزاری کے وکیل نے جواب دیا کہ سپیکر الٰہی وزیراعلیٰ کے عہدے کے لیے نامزد ہیں۔ اس لیے وہ بطور اسپیکر فرائض سرانجام نہیں دے سکے۔

وکیل نے بتایا کہ ڈپٹی اسپیکر آئین کے آرٹیکل 127 کے ساتھ پڑھے گئے آرٹیکل 53 کی شق (3) کے تحت اسپیکر کے فرائض سرانجام دے رہے ہیں۔ انہوں نے عدالت کو بتایا کہ آرٹیکل 53 کی شق (3) کے مطابق جب سپیکر کا عہدہ خالی ہو یا سپیکر غیر حاضر ہو یا کسی وجہ سے اپنے فرائض سرانجام دینے سے قاصر ہو تو ڈپٹی سپیکر بطور سپیکر کام کرے گا۔ .

وزیراعلیٰ کے بغیر صوبہ
حمزہ شہباز کے وکیل نے کہا کہ صوبہ چیف ایگزیکٹو کے بغیر ہے اور کابینہ کے ارکان اپنے مفادات پر عمل پیرا ہیں۔ انہوں نے کہا کہ “مسلم لیگ ن کے قانون سازوں کو اسمبلی میں جانے کی اجازت نہیں دی جا رہی ہے،” انہوں نے مزید کہا کہ الٰہی نے الیکشن کو سبوتاژ کرنے کے لیے تاخیری حربے استعمال کیے ہیں۔

انہوں نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ ووٹنگ کے لیے 3 اپریل مقرر تھا لیکن ایوان کی کارروائی 6 اپریل تک ملتوی کر دی گئی۔” 5 اپریل کو حکم جاری کیا گیا کہ انتخابات 16 اپریل کو ہوں گے، انہوں نے مزید کہا کہ ڈپٹی سپیکر مزاری نے حکم عدولی کی۔ آئینی ذمہ داری کے مطابق اور کہا کہ ایوان کا اجلاس شیڈول کے مطابق 6 اپریل کو ہوگا۔

وکیل نے دعویٰ کیا کہ ’’اس دن سے سپیکر الٰہی نے ذاتی طور پر چیزیں لینا شروع کیں اور الیکشن میں رکاوٹ ڈالنے کے لیے اسمبلی رولز کی خلاف ورزی کی‘‘۔

چیف جسٹس بھٹی نے رجسٹرار کی جانب سے قبل ازیں اٹھائے گئے اعتراضات کو دور کرتے ہوئے ایڈووکیٹ جنرل پنجاب کو عدالت میں پیش ہونے کی ہدایت کی۔ عدالت کی جانب سے ایڈووکیٹ جنرل کی عدم دستیابی کے بعد سماعت 11 اپریل تک ملتوی کر دی گئی۔

لاہور ہائیکورٹ کے سامنے درخواست
اس سے قبل گزشتہ روز مسلم لیگ (ن) کے رہنما اور وزیراعلیٰ پنجاب کے لیے اپوزیشن کے نامزد امیدوار حمزہ شہباز نے وزیراعلیٰ کے انتخاب میں عدالت سے مداخلت کی درخواست جمع کرائی تھی۔

تاہم، ایل ایچ سی کے رجسٹرار نے دونوں درخواستوں پر اعتراضات اٹھاتے ہوئے کہا کہ اسمبلی کی کارروائی کو عدالتوں میں چیلنج نہیں کیا جا سکتا۔ تاہم مسلم لیگ (ن) کے وکیل اعظم نذیر تارڑ نے درخواست کو اب بھی سماعت کے لیے مقرر کرنے کی استدعا کرتے ہوئے کہا کہ وہ اعتراض پر بھی دلائل دیں گے۔

حمزہ نے اپنی درخواست میں عدالت سے استدعا کی کہ متعلقہ حکام کو ہدایت کی جائے کہ وہ مناسب تقاضے پورے کرنے کے بعد پنجاب اسمبلی کا اجلاس بلائیں اور بغیر کسی تاخیر کے وزیراعلیٰ کے عہدے کے لیے ووٹنگ کرائیں۔

درخواست میں عدالت سے سیشن ملتوی کرنے، احاطے کو سیل کرنے اور قانون سازوں کو ووٹنگ سے روکنے کے اقدامات کو بھی غیر قانونی قرار دینے کی استدعا کی گئی۔ درخواست میں کہا گیا کہ وزیر اعلیٰ کا عہدہ یکم اپریل سے خالی ہے لیکن نئے چیف ایگزیکٹو کے انتخاب کے لیے انتخابات میں تاخیر ہو رہی ہے۔

درخواست میں جلد از جلد اجلاس بلانے اور بغیر کسی التوا کے وزیر اعلیٰ کے عہدے کا انتخاب کرنے کی بھی مانگ کی گئی۔ عدالت سے یہ بھی استدعا کی گئی کہ وزیر اعلیٰ کے انتخاب کے لیے ووٹنگ کے دوران کوئی رکاوٹ نہ آئے۔

حمزہ نے اپنی درخواست میں چیف سیکرٹری، سپیکر/ڈپٹی سپیکر، سیکرٹری پی اے پرویز الٰہی اور انسپکٹر جنرل پولیس پنجاب کو فریق بنایا۔

انہوں نے اپنی درخواست میں موقف اختیار کیا کہ حقائق اور حالات نے آئینی بحران کو جنم دیا ہے جس کا صوبے کی پارلیمانی تاریخ میں مشاہدہ نہیں کیا گیا۔

“یہ معاملہ عوامی اہمیت کا حامل ہے جو درخواست گزار سمیت صوبے کے شہریوں کے کئی بنیادی حقوق کے نفاذ سے متعلق ہے۔ لہٰذا، درخواست گزار اس عدالت سے درخواست کرتا ہے کہ وہ مذکورہ بالا اعلانات اور ہدایات جاری کرے۔

پنجاب اسمبلی کا اجلاس
حمزہ اور مسلم لیگ (ق) کے سینئر رہنما اور پی اے کے سپیکر چودھری پرویز الٰہی کے درمیان مقابلہ کرنے والے وزیراعلیٰ کے عہدے کے انتخاب کے لیے اجلاس 2 اپریل 2022 کو طلب کیا گیا تھا۔ الیکشن 3 اپریل کو ہونا تھا لیکن ہنگامہ آرائی کے بعد اجلاس ملتوی کر دیا گیا۔

ڈپٹی سپیکر دوست محمد مزاری نے اجلاس ملتوی کر دیا۔
ای کارروائی 6 اپریل تک۔ لیکن 5 اپریل کو پی اے سیکرٹریٹ نے ایک نوٹیفکیشن جاری کرتے ہوئے ایوان کے اجلاس کی تاریخ 16 اپریل تک بڑھا دی۔ لیکن بعد میں ایک اور حکم جاری کیا گیا جس میں کہا گیا کہ ایوان کا اجلاس 6 اپریل کو ہوگا۔

بعد ازاں اسپیکر کے حکم پر پی اے کے سیکریٹری اور دیگر انتظامی افسران نے پی اے کو سیل کردیا اور کسی بھی قانون ساز کو اسمبلی کی عمارت میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دی گئی۔ مسلم لیگ ن اور اس کے اتحادیوں نے لاہور کے مقامی ہوٹل میں علامتی اجلاس منعقد کیا جس میں حمزہ کو وزیراعلیٰ منتخب کیا گیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں