20

مریم نے پی ٹی آئی کو مزاری کی گرفتاری پر ’ویمن کارڈ‘ کھیلنا بند کرنے کا مشورہ دے دیا

پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کی نائب صدر مریم نواز نے ہفتے کے روز کہا کہ اگر ان کے خلاف الزامات جھوٹے نکلے تو وہ پی ٹی آئی رہنما شیریں مزاری کے ساتھ کھڑی ہونے والی پہلی خاتون ہوں گی۔

مسلم لیگ (ن) کے سوشل میڈیا کارکنوں سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ پاکستان وینٹی لیٹر پر ہے اور معیشت ابتر حالت میں ہے۔

مسلم لیگ ن کی حکومت صرف چار ہفتے پرانی ہے اور ملک انتہائی مشکل حالت میں ہے، انہوں نے اس بات پر زور دیتے ہوئے کہا کہ اس کی بہتری کے لیے سب کو مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے۔

مزاری کی گرفتاری اچھا نہیں لگا
آج سہ پہر پی ٹی آئی رہنما شیریں مزاری کی گرفتاری پر بات کرتے ہوئے مریم نے کہا کہ انہیں اس بارے میں سن کر اچھا محسوس نہیں ہوا اور دعویٰ کیا کہ مزاری کے خلاف مقدمہ بزدار کے دور میں درج ہوا تھا۔

انہوں نے پی ٹی آئی کو مزاری کی گرفتاری پر ’ویمن کارڈ‘ کھیلنے سے باز رہنے کا مشورہ دیتے ہوئے دعویٰ کیا کہ ان پر کوئی الزام نہ ہونے کے باوجود انہیں پی ٹی آئی کے دور میں پکڑا گیا تھا۔

جب میں اپنے والد نواز شریف سے ملنے کوٹ لکھپت جیل گیا تو جیل کا ایک اہلکار وہاں آیا اور بتایا کہ مجھے شہباز شریف نے باہر بلایا ہے۔ جب میں باہر گئی تو میں نے شہباز شریف کو قومی احتساب بیورو (نیب) کے اہلکاروں کے ساتھ دیکھا۔

مسلم لیگ ن کی رہنما نے کہا کہ انہیں نیب حکام نے ان کے والد کے سامنے گرفتار کیا۔

مریم نے کہا کہ انہیں مزاری جیسی خاتون عہدیداروں نے بھی بک نہیں کیا۔ اس نے یہ بھی دعویٰ کیا کہ نیب اہلکار اس کے سیل پر چھاپہ مارتے تھے اور اس کی ویڈیوز ریکارڈ کرتے تھے جو ابھی تک ان کے پاس تھی۔

مسلم لیگ (ن) کی رہنما نے کہا کہ جب وہ نیب کی حراست میں تھیں تو وہ کسی اور وقت ان کے طرز عمل کے بارے میں کہانیاں منظر عام پر لائیں گی۔

مریم نے پیشکش کی کہ اگر پی ٹی آئی رہنما ان کے خلاف لگائے گئے الزامات کو کامیابی سے ثابت کر دیتے ہیں تو وہ مزاری کے ساتھ کھڑی ہونے والی پہلی خاتون ہوں گی۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ نواز شریف نے اداروں پر تعمیری تنقید کی۔

انہوں نے کہا کہ نواز شریف کے برعکس عمران خان اب بھی ‘پسندیدہ بچہ’ ہیں جو اداروں کا نہیں عوام کا پسندیدہ ہے۔

مریم نے کہا کہ عمران خان ناقابل تردید شواہد کے باوجود گزشتہ 7 سال سے غیر ملکی فنڈنگ ​​کیس سے بھاگ رہے ہیں اور انہوں نے شکایت کی کہ اگر ایسا کوئی کیس ہوتا تو مسلم لیگ (ن) کا صفایا ہو جاتا۔

انہوں نے مزید کہا کہ پی ٹی آئی نے الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کے باہر احتجاج کیا لیکن اس کی تعریف کی جب اس نے اپنے اراکین کی ڈی سیٹنگ کا فیصلہ دیا جسے پی ٹی آئی نے اپنے حق میں سمجھا۔

انہوں نے کہا کہ اداروں کو دوبارہ غور کرنے کی ضرورت ہے کہ وہ عمران خان جیسے غنڈے کو کیوں پال رہے ہیں۔

مریم نواز نے کہا کہ وہ عمران خان کا نام لینا پسند نہیں کرتیں لیکن وہ ایسا کرنے پر مجبور ہوئیں کیونکہ انہوں نے ملکی معیشت اور خارجہ تعلقات کو بہت زیادہ نقصان پہنچایا۔

مریم نے دعویٰ کیا کہ انہوں نے کبھی بھی عمران خان پر ذاتی حملہ نہیں کیا لیکن ان کی تنقید ہمیشہ ان کی کارکردگی پر ہوتی ہے۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان نے ان پر زبانی حملہ نہیں کیا بلکہ یہ پورے ملک کی ماؤں بہنوں کے خلاف ہے۔

مسلم لیگ (ن) کی رہنما نے کہا کہ انہیں عمران خان پر ذاتی حملہ کرنے کی ضرورت نہیں جب کہ ان کے خلاف سیاسی چیزوں کی بہتات ہے، انہوں نے مزید کہا کہ عمران خان جیسا شخص مشرقی اقدار کو تباہ کر رہا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں