26

نمرہ کاظمی، ہراسنگ کا بادشاہ، شہلا، لاؤ کا آسیس

اے آر وائی نیوز نے جمعرات کو رپورٹ کیا کہ نمرہ کاظمی کے شوہر کی نمائندگی کرنے والے وکیل نے عدالت کو آگاہ کیا ہے کہ پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کی رہنما شہلا رضا کے کہنے پر لڑکی کو شیلٹر ہوم میں ہراساں کیا جا رہا ہے۔

وکیل نمرہ کاظمی کے شوہر شاہ رخ کا کہنا تھا کہ لڑکی کو شیلٹر ہوم کے اہلکار ہراساں کر رہے ہیں جن پر شہلا رضا کی جانب سے دباؤ ڈالا جا رہا ہے اور انہوں نے اسے روزانہ کھانا دینا بند کر دیا ہے۔

یہ انکشافات کراچی کی سٹی کورٹ میں کاظمی اغوا کیس کی سماعت میں ہوئے۔ بازیاب ہونے والی لڑکی کو عدالت میں پیش کیا گیا۔

ایڈووکیٹ محمد فاروق نے شہلا رضا پر الزام لگایا کہ وہ شیلٹر ہوم کی انتظامیہ پر نمرہ کاظمی کو ہراساں کرنے کے لیے دباؤ ڈال رہی ہے اور وہ لڑکی پر بھی دباؤ ڈال رہی ہے۔

انہوں نے مزید الزام لگایا کہ شاہ رخ کے اہل خانہ کو ان سے ملنے کی اجازت نہیں دی جارہی ہے اور صرف کاظمی کے اہل خانہ کو ہی اجازت دی جارہی ہے۔

وکیل نے عدالت سے استدعا کی کہ کاظمی کو ہراساں کرنے سے روکنے کے احکامات جاری کیے جائیں۔

عدالت نے تفتیشی افسر کو فوری طور پر روسٹرم پر طلب کیا اور استفسار کیا کہ کاظمی سے ملنے کے خواہشمند افراد پر کسی قسم کی پابندیاں لگائی جائیں گی۔

آئی او نے عدالت کو آگاہ کیا کہ سندھ ہائی کورٹ (ایس ایچ سی) کے حکم میں کسی پابندی کا ذکر نہیں کیا گیا۔ عدالت نے لوگوں کو ان سے ملنے اور کھانا پیش کرنے کی اجازت نہ دینے کی وجوہات پر سوال اٹھایا۔ جج نے شیلٹر ہوم کے اہلکاروں کے لڑکیوں کے ساتھ برتاؤ پر برہمی کا اظہار کیا۔

اس پر، آئی او نے جواب دیا کہ وہ اس طرح کی بدتمیزی سے لاعلم ہیں اور ملاقاتوں پر کوئی پابندی نہیں لگائی گئی۔

سماعت کے دوران شاہ رخ کے وکیل نے ضمانت کی درخواست دائر کی۔ عدالت نے اغوا کیس کی چارج شیٹ پیش نہ کرنے پر تفتیشی افسر سے استفسار کیا۔

آئی او نے جج کو بتایا کہ اغوا کیس میں سندھ چائلڈ ایکٹ کی دفعات شامل کی گئی ہیں اور وہ نمرہ کاظمی کا بیان ریکارڈ کرنے کے بعد چارج شیٹ جمع کرائیں گے۔

شاہ رخ کے وکیل نے آئی او کے بیان پر دلائل دیتے ہوئے شادی کی جگہ پر سوال اٹھایا۔ آئی او نے جواب دیا کہ نکاح پنجاب میں ہوا ہے۔ وکیل نے سوال کیا کہ جب نکاح پر سندھ چائلڈ پروٹیکشن ایکٹ کا نفاذ ہو سکتا ہے۔

جج نے سوال کیا کہ سندھ چائلڈ پروٹیکشن ایکٹ کی دفعات شامل کرنے کا حکم کس نے دیا؟ آئی او کو جواب دیا کہ مجسٹریٹ نے اسے حکم دیا تھا۔

فاضل جج نے ریمارکس دیئے کہ عدالت کوئی زبانی حکم جاری نہیں کرتی۔ جب لڑکی کا سندھ ہائی کورٹ میں بیان ریکارڈ کیا گیا تو اس کی دوبارہ گواہی ریکارڈ کرنے کی کیا وجہ ہے؟

جج نے سماعت کے دوران لڑکی کا بیان ریکارڈ کرنے کی ہدایت کی۔

اس کے بعد نمرہ کامزہ نے دفعہ 164 کے تحت جوڈیشل مجسٹریٹ کے سامنے اپنا بیان ریکارڈ کرایا۔ کاظمی نے اغوا ہونے سے انکار کیا اور اس نے اپنی مرضی سے نجیب شاہ رخ کے ساتھ شادی کا معاہدہ کیا۔ بعد ازاں جج نے آئی او کو عدالت میں چارج شیٹ پیش کرنے کی ہدایت کی۔

بعد ازاں عدالت نے نمرہ کاظمی کو 5 لاکھ روپے کے ضمانتی مچلکے جمع کرانے کے بعد رہا کرنے کا حکم دیا۔

عدالت نے شاہ رخ کی درخواست ضمانت ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج کو بھیجنے کی بھی ہدایت کی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں