49

غداری کیس میں فواد چوہدری کی گرفتاری کے بعد عمران خان کہتے ہیں کہ ‘جیلوں سے نہیں ڈرتے’

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان نے بدھ کے روز اس بات کا اعادہ کیا کہ وہ جیل جانے یا مرنے سے نہیں ڈرتے، انہوں نے کہا کہ ملک میں قانون کی حکمرانی کے لیے ان کی آواز کو دبانے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

وہ اپنی اشتعال انگیز تقریر میں الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کے اہلکاروں اور ان کے اہل خانہ کو مبینہ طور پر دھمکیاں دینے کے الزام میں مقدمہ درج ہونے کے بعد پی ٹی آئی رہنما فواد چوہدری کی گرفتاری کے ردعمل میں قوم سے خطاب کر رہے تھے۔

انہوں نے کہا کہ ملک کو کیلے کی جمہوریہ بنا دیا گیا ہے جہاں “شاید درست ہے” اور صرف کمزور لوگوں کے خلاف کارروائیاں کی گئیں۔ یہ کہتے ہوئے کہ موجودہ حالات پاکستان کو نون ریٹرن کی طرف دھکیل دیں گے، انہوں نے کہا کہ لوگ ملک سے بھاگ رہے ہیں کیونکہ وہ ملک کی موجودہ صورتحال کی وجہ سے اپنی امیدیں کھو چکے ہیں۔

فواد چوہدری کی گرفتاری پر تنقید کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ جمہوریت میں ایسا نہیں ہوا کہ کسی شخص کو اپنے خیالات کے اظہار یا کسی اہلکار پر تنقید کرنے پر گرفتار کیا گیا ہو۔ خان نے سوال کیا کہ فواد نے صرف چیف الیکشن کمیشن کو ’’منشی‘‘ کہا اور اس نے اور کیا جرم کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت صرف اپنے خلاف اٹھنے والی آوازوں کو خاموش کرنا چاہتی ہے۔

وکلاء برادری اور عام طور پر عوام پر زور دیتے ہوئے، انہوں نے کہا کہ ناانصافی کے خلاف کھڑے ہونے کا وقت آگیا ہے کیونکہ اس طرح کی صورتحال ملک میں تباہی کے سوا کچھ نہیں لائے گی۔

انہوں نے محسن نقوی کو پنجاب کا نگراں وزیراعلیٰ منتخب کرنے پر ای سی پی پر بھی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ پی ٹی آئی کی حکومت گرانے میں اس شخص نے فعال کردار ادا کیا۔ انہوں نے الیکشن کمیشن کے شفاف انتخابات کے انعقاد کے عزم پر بھی سوال اٹھایا۔

پی ٹی آئی کے سربراہ نے اعلان کیا کہ وہ نقوی کی تقرری کے خلاف قانونی کارروائی کریں گے۔

سابق وزیر اعظم نے وزیر آباد میں ہونے والے قاتلانہ حملے کی تحقیقات کرنے والی مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) کو ختم کرنے کے بارے میں بھی بات کی، یہ دعویٰ کیا کہ جے آئی ٹی کے ارکان پر دباؤ ڈالا گیا کہ وہ خود کو تحقیقات سے دور رکھیں کیونکہ اس سے ان کے قتل کی سازش ثابت ہو سکتی تھی۔

انہوں نے انتخابات کی تاریخ کا اعلان نہ کرنے پر پنجاب اور خیبر پختونخوا (کے پی) کے گورنروں کو بھی تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ یہ آئین کی خلاف ورزی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں