22

سنیارٹی کی بنیاد پر سپریم کورٹ کے ججوں کی تقرری کے لیے آئینی ترمیم منظور

منگل کو اعلیٰ عدالتوں میں ججوں کی تقرری سے متعلق پارلیمانی کمیٹی کے اجلاس میں متفقہ طور پر آئینی ترامیم کی منظوری دی گئی جو سپریم کورٹ میں ججوں کی ان کی سنیارٹی کے مطابق تقرری کی حمایت کرتی ہے۔

اجلاس سینیٹر فاروق حامد نائیک کی صدارت میں پارلیمنٹ ہاؤس میں منعقد ہوا۔

کمیٹی نے چیئرمین کمیٹی سینیٹر فاروق ایچ نائیک کی تجویز کردہ عدلیہ کے حوالے سے آئین کی متعلقہ شق میں آئینی ترامیم کی متفقہ طور پر منظوری دی۔

کمیٹی نے فیصلہ کیا کہ سپریم کورٹ میں ججوں کی تقرری ان کی سنیارٹی کے مطابق کی جائے گی “جس کا تعین ہائی کورٹ کے جج کی حیثیت سے ان کی تقرری کی تاریخ کے حوالے سے کیا جائے گا اور اگر ان کی تقرریوں کی تاریخیں جج ایک جیسے ہیں پھر فیصلہ ان کی عمر کی بنیاد پر کیا جائے گا۔

کمیٹی نے فیصلہ کیا کہ سپریم کورٹ میں ایڈہاک یا قائم مقام ججوں کی تقرری پارلیمانی کمیٹی کی تصدیق سے مشروط ہوگی۔

کمیٹی نے آئین کے آرٹیکل 184 کی شق 3 میں ترمیم کی بھی منظوری دی ، جس کے مطابق جب سپریم کورٹ انسانی حقوق کے مقدمات میں ازخود اختیارات استعمال کرے گی تو اس کیس کی سماعت سپریم کورٹ کے تین جج کریں گے اور اس کے خلاف اپیل حکم 30 دن کے اندر دائر کیا جا سکتا ہے ، جس کا فیصلہ سپریم کورٹ کے پانچ ججوں پر مشتمل بنچ 60 دن کے اندر کرے گا۔

مزید فیصلہ کیا گیا کہ اگر اس آرٹیکل کے تحت کسی آرڈر کے خلاف اپیل کی گئی ہے تو اپیل کے فیصلے کے زیر التواء اس اپیل پر عمل نہیں کیا جائے گا۔

پارلیمانی کمیٹی نے اس سفارش کی بھی منظوری دی کہ ہائی کورٹ کے جج کی ریٹائرمنٹ کی عمر موجودہ 62 سال سے بڑھا کر 65 سال کر دی جائے ، جیسا کہ سپریم کورٹ کے جج کی صورت میں ہے۔

کمیٹی نے چیئرمین کی تجویز کردہ آئین کے آرٹیکل 209 میں ترمیم کی بھی منظوری دیتے ہوئے فیصلہ کیا کہ اعلیٰ عدلیہ کے جج کے خلاف بدتمیزی کی وجہ سے ریفرنس کا فیصلہ سپریم جوڈیشل کونسل 90 دنوں کے اندر کرے گی۔

اس میں آئین کے آرٹیکل 175- اے پر سپریم کورٹ آف پاکستان کے ججوں کی تقرری اور سپریم جوڈیشل کونسل کی تشکیل پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔

یہ فیصلہ کیا گیا کہ کمیٹی کے آئندہ اجلاس میں اس مسئلے پر مزید غور کیا جائے گا۔

کمیٹی نے اپنے اگلے اجلاس میں وفاقی وزیر قانون و انصاف کو مدعو کرنے کا بھی فیصلہ کیا۔

اجلاس میں سینیٹر اعظم نذیر تارڑ اور سرفراز احمد بگٹی ، ایم این اے علی محمد خان ، راجہ پرویز اشرف ، اور رانا ثناء اللہ خان نے شرکت کی۔ اور سیکرٹری سینیٹ محمد قاسم صمد خان۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں