13

پاکستان نے دنیا پر زور دیا کہ وہ افغان حکومت کے بینک اکاؤنٹس کو منجمد کرے

وزیر داخلہ شیخ رشید احمد نے اتوار کو دنیا سے اپیل کی کہ وہ افغانستان کی حکومت کے بینک اکاؤنٹس کو منجمد کرے۔

اطلاعات کے مطابق امریکہ نے طالبان کے ملک پر قبضے کے بعد امریکی بینکوں میں افغان حکومت کے تقریبا 9 9.5 بلین ڈالر کے ذخائر منجمد کر دیے ہیں۔ افغانستان کو اس وقت ڈالر کی کمی کا سامنا ہے کیونکہ دوسرے ممالک کی طرح بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) اور ورلڈ بینک نے بھی اس کے ذخائر پر قبضہ کر لیا ہے۔

صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے شیخ رشید احمد نے کہا کہ “افغانستان کی حکومت کے بینک اکاؤنٹس منجمد کرنے میں کوئی حکمت نہیں تھی۔”

بھارتی میڈیا کے جھوٹے پروپیگنڈے کو مسترد کرتے ہوئے وزیر داخلہ نے کہا کہ پاک افغان سرحد پر باڑ لگانے کا مقصد دہشت گردی کو روکنا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم امن کے سہولت کار ہیں ، انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان نے ملا عبدالغنی برادر اور امریکی حکام کے درمیان دوحہ میں ملاقات کا اہتمام کیا۔

افغانستان میں امن کے لیے پاکستان کی کوششوں کے بارے میں بات کرتے ہوئے وزیر داخلہ نے کہا کہ ڈائریکٹر جنرل انٹر سروسز انٹیلی جنس (ڈی جی آئی ایس آئی) لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید نے افغانستان سے متعلق مختلف ممالک کے آٹھ انٹیلی جنس سربراہوں کے اجلاس کی میزبانی کی۔

شیخ رشید نے کہا کہ پاکستان صرف پڑوسی ملک میں امن اور استحکام میں دلچسپی رکھتا ہے۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ملک بھر میں ایک بھی مہاجر کیمپ نہیں ہے۔

امریکہ میں افغان ذخائر طالبان کے لیے قابل رسائی نہیں ہوں گے
17 اگست کو امریکی انتظامیہ کے ایک عہدیدار نے کہا تھا کہ طالبان کو امریکی اکاؤنٹس میں موجود کسی بھی افغان ذخائر تک رسائی سے انکار کر دیا جائے گا۔

امریکی عہدیدار نے اے ایف پی کو بتایا ، “افغان حکومت کا امریکہ میں موجود کوئی بھی مرکزی بینک اثاثہ طالبان کو دستیاب نہیں کیا جائے گا۔

آئی ایم ایف کے مطابق اپریل کے آخر میں مرکزی بینک کے مجموعی ذخائر 9.4 بلین ڈالر تھے۔ معاملے سے واقف شخص کے مطابق ان میں سے زیادہ تر فنڈز افغانستان سے باہر رکھے گئے ہیں۔ یہ فوری طور پر واضح نہیں ہو سکا کہ امریکہ میں اثاثوں کا کیا حصہ ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں