21

ایون فیلڈ اپٹس موٹر وے معاہدے پر دستخط کے وقت خریدے گئے تھے: فواد چوہدری

وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات فواد چوہدری نے اتوار کو کہا کہ لندن میں ایون فیلڈ اپارٹمنٹس خریدے جا رہے تھے جب لاہور اور اسلام آباد موٹروے کا معاہدہ کیا جا رہا تھا۔

یہ بیان اسلام آباد میں وفاقی وزراء چوہدری اور مراد سعید کی مشترکہ پریس کانفرنس کے دوران دیا گیا۔

چوہدری نے کہا کہ “زرداری اور شریف خاندانوں نے پاکستان سے پیسہ لیا اور ملک سے باہر سرمایہ کاری کی”۔

انہوں نے مزید کہا کہ کہا جاتا ہے کہ ان خاندانوں نے پیسہ روس میں چھپایا ہے۔

وزیر نے کہا کہ “اپوزیشن مگرمچھ کے آنسو بہا رہی ہے لیکن یہ ان کی وجہ سے ہے کہ پاکستان ایسی حالت میں ہے”۔

چوہدری نے کہا کہ سڑکوں اور ٹھیکوں کے ٹھیکوں کے نام پر بڑی کرپشن کی گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ “سابق وزیر اعظم نے کابینہ کے ساتھ مل کر کرپشن کرنے کی سازش کی”۔

چوہدری نے الزام لگایا کہ شہباز شریف اور فیملی کے کھاتوں میں 25 ارب روپے منتقل کیے گئے۔

سڑکوں کے بغیر ترقی نہیں
انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان سڑکوں کے نام پر کی جانے والی کرپشن کے خلاف کھڑے ہیں۔

چودھری نے مزید کہا ، “تاہم ، موٹرویز ضرور بننی چاہیے کیونکہ سڑکوں کے بغیر ترقی کا کوئی تصور نہیں ہے۔”

پچھلی حکومتوں کی طرف سے لیے گئے قرضوں کے بارے میں بات کرتے ہوئے چوہدری نے کہا کہ پچھلے قرضوں کی ادائیگی کے لیے قرض لینے سے “خود مختاری کم ہوتی ہے اور افراط زر میں اضافہ ہوتا ہے”۔

مسلم لیگ (ن) ، پیپلز پارٹی نے پیسہ ضائع کیا۔
دریں اثناء وفاقی وزیر مواصلات مراد سعید نے اپنے خطاب میں کہا کہ وزیراعظم عمران خان نے ہمیشہ قرضوں کے ذریعے حاصل کی گئی رقم سے سڑکوں کی تعمیر کی مخالفت کی ہے۔

پی ٹی آئی کی حکومت کا مسلم لیگ (ن) اور پیپلز پارٹی کی حکومت سے موازنہ کرتے ہوئے ، سعید نے کہا کہ “پی ٹی آئی نے مسلم لیگ ن کی تعمیر کردہ سڑکوں کے مقابلے میں 200 ملین روپے فی کلومیٹر تک سستی سڑکیں بنائیں”۔

انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کی جانب سے بنائی جانے والی ڈبل سڑکیں پیپلز پارٹی سے 120 ملین روپے اور مسلم لیگ (ن) سے 60 ملین روپے سستی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ (ن) نے عوام کا پیسہ ضائع کیا جو تعلیم اور صحت کے شعبوں میں لگایا جا سکتا تھا۔

کرپشن کا پیسہ واپس لینا چاہیے
چوہدری نے کہا کہ کرپشن میں ضائع ہونے والی رقم کو واپس لینا چاہیے۔

چوہدری نے کہا کہ وزارت مواصلات سڑکوں کی تعمیر کے تحت ہونے والی بدعنوانی کا معاملہ اسمبلی اور پبلک اکاؤنٹس کمیٹی میں لے جائے گی۔

پٹرول کی قیمتوں میں اضافے پر تبصرہ کرتے ہوئے چوہدری نے کہا کہ اگر حکومت پٹرول کی قیمت 60 روپے فی لیٹر پر لانا چاہتی ہے تو اسے قومی خزانے سے پیسہ لگانا چاہیے لیکن اسے سرمایہ کاری کے لیے پیسہ کہاں سے ملے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں