17

آئی ایچ سی نے ایون فیلڈ ریفرنس کے فیصلے کو چیلنج کرنے والی مریم کی نئی درخواست سے اعتراضات کو ہٹا دیا

جیو نیوز نے بدھ کو خبر دی ہے کہ مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز کی ایون فیلڈ ریفرنس کے فیصلے کو چیلنج کرنے والی نئی درخواست پر اعتراضات ہٹا دیے گئے ہیں۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے رجسٹرار آفس نے مریم کی درخواست پر منگل کو ہائی کورٹ میں دائر ہونے کے بعد ہی دو اعتراضات اٹھائے تھے۔

مریم اپنے وکیل ایڈووکیٹ عرفان قادر کے ساتھ عامر فاروق اور جسٹس محسن اختر کیانی پر مشتمل دو رکنی بینچ کے سامنے آئی ایچ سی میں پیش ہوئیں تاکہ ان کی درخواست کو برقرار رکھنے کے لیے دلائل دیں۔

سماعت کے آغاز پر جسٹس فاروق نے ریمارکس دیئے کہ عدالت رجسٹرار آفس کے اعتراضات کو دور کر رہی ہے۔

انہوں نے ایڈووکیٹ قادر کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ قومی احتساب بیورو (نیب) نے ایک درخواست بھی دائر کی ہے ، جس میں درخواست کی سماعت روزانہ کی بنیاد پر کرنے اور اسے ایک ماہ کے اندر ختم کرنے کی درخواست کی گئی ہے۔

اس پر ، ایڈووکیٹ قادر نے پیرا نمبر 3 کا حوالہ دیتے ہوئے نیب کی درخواست کی “تضحیک” کی ، اور عدالت سے درخواست کی کہ اس درخواست کو خارج کرنے کے دوران احتساب واچ ڈاگ کو اس طرح کی درخواست دائر کرنے پر جرمانہ جاری کیا جائے۔

عدالت نے فریقین کو نوٹس جاری کرتے ہوئے نئی اور اہم درخواست کی سماعت 13 اکتوبر تک ملتوی کردی۔

مریم نے ایون فیلڈ ریفرنس کے فیصلے کو کالعدم قرار دینے کی استدعا کی
مریم نے اسلام آباد ہائیکورٹ میں منگل کو ایون فیلڈ اپارٹمنٹس ریفرنس سے متعلق فیصلے کو کالعدم قرار دینے کی درخواست دائر کی۔

مریم نے اپنی درخواست میں کہا کہ یہ فیصلہ قانون کی مکمل خلاف ورزیوں اور پاکستان کی تاریخ میں سیاسی انجینئرنگ کی کلاسیکی مثال ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ “سپریم کورٹ نے کیس کی تحقیقات کے پورے عمل کی نگرانی کی اور پراسیکیوشن کی نگرانی کی۔”

درخواست میں آئی ایچ سی سے درخواست کی گئی کہ وہ “سنگین خلاف ورزیوں” کا نوٹس لے اور ایون فیلڈ ریفرنس کے فیصلے کو کالعدم قرار دے جبکہ تمام مجرموں کو بری کر دیا جائے۔

آئی ایچ سی رجسٹرار نے مریم کی درخواست پر دو اعتراضات لگائے۔ آئی ایچ سی رجسٹرار آفس نے برقرار رکھا کہ مریم نے وہی اپیل کی جو مرکزی درخواست میں ایون فیلڈ ریفرنس کے فیصلے کو چیلنج کرتی ہے۔

دوسری بات یہ کہ درخواست گزار صرف عدالت کی اجازت سے تازہ بنیادیں حاصل کر سکتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں