21

یوم سیاہ: وزیر اعظم عمران نے دنیا پر زور دیا کہ وہ کشمیر میں بھارتی مظالم بند کرے

حق خودارادیت کے لیے کشمیریوں کی منصفانہ جدوجہد میں پاکستان کی مسلسل حمایت کا اعادہ کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ وہ اپنے کشمیری بھائیوں کے ساتھ کندھے سے کندھا ملا کر کھڑے ہیں۔

کشمیر کے یوم سیاہ کے موقع پر اپنے پیغام میں وزیر اعظم عمران نے کہا کہ میں اپنے کشمیری بھائیوں اور بہنوں کو یقین دلاتا ہوں کہ پاکستان ان کے جائز اور ناقابل تنسیخ حق خودارادیت کے حصول تک ان کے ساتھ ہر ممکن تعاون اور کندھے سے کندھا ملا کر کھڑا رہے گا۔ -عزم.”

وزیراعظم نے کہا کہ بھارتی قابض افواج کی 7 دہائیوں کی ظالمانہ حکمرانی کے بعد بھی کشمیریوں کا عزم مضبوط ہے۔

انہوں نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو فوری طور پر روکنے کے لیے بھارت پر دباؤ ڈالنے کے لیے اپنا کردار ادا کرے اور کشمیریوں کو اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں کے مطابق اپنے مستقبل کا فیصلہ خود کرنے دیں۔

کشمیر کے یوم سیاہ کا ذکر کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے کہا کہ یہ دن کشمیریوں کی ان لاتعداد قربانیوں کو یاد کرنے کا بھی دن ہے جو ان کی مرضی کے خلاف بھارت کے غیر انسانی قبضے اور محکومیت کے خلاف مزاحمت کرتے ہوئے دیتے رہیں گے۔

انہوں نے مزید کہا کہ “بھارت کے غیر قانونی قبضے کا مقصد کشمیری عوام کی آزادانہ طور پر اپنے مستقبل کا تعین کرنے کی جائز خواہشات کو دبانا تھا۔”

’کشمیری تمام آزادی پسند لوگوں کے لیے تحریک ہیں‘
وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ہم کشمیری مردوں، خواتین اور بچوں کے عزم، حوصلے اور عزم کو سلام پیش کرتے ہیں۔ کشمیری دنیا کے تمام آزادی پسند لوگوں کے لیے تحریک ہیں۔

انہوں نے کہا، “آج کے ہندوستان میں آر ایس ایس کے نظریے کی حکمرانی ہے جس کے انتہا پسند عالمی نظریے میں مسلمانوں یا دیگر اقلیتوں کے لیے کوئی جگہ نہیں ہے۔”

انہوں نے کہا کہ بھارت نے 5 اگست 2019 کو یکطرفہ اور غیر قانونی اقدام کیا اور گزشتہ 815 دنوں سے میڈیا بلیک آؤٹ اور دیگر پابندیوں کا سہارا لیتے ہوئے کشمیریوں کو فوجی محاصرے میں رکھا ہوا ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ جعلی مقابلے، عصمت دری اور انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیاں اور ماورائے عدالت قتل کشمیریوں کے خلاف ناقابل بیان جرائم میں شامل ہیں۔

وزیراعظم نے مزید کہا کہ پاکستان نے جموں و کشمیر کا مسئلہ اقوام متحدہ، او آئی سی سمیت ہر فورم پر اٹھایا اور دو طرفہ طور پر اہم عالمی رہنماؤں اور دارالحکومتوں کے ساتھ اٹھایا۔

وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ 55 سال میں پہلی بار جموں و کشمیر کا تنازع اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں زیر غور آیا ہے۔

“آئی او کے میں ہندوستان کی انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے بارے میں ڈوزیئر جس کی پاکستان نے گزشتہ ماہ نقاب کشائی کی وہ دنیا کے لیے چشم کشا ہونا چاہیے۔ اس میں ہندوستان کے بدمعاش رویے کے ناقابل تردید ثبوت موجود ہیں۔”

وزیر اعظم نے کہا کہ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی ذمہ داری تھی کہ وہ اپنی قراردادوں پر عمل درآمد کو یقینی بنانے کے لیے اقدامات کرے، جس سے جموں و کشمیر کے لوگوں کو ان کے حق خود ارادیت کا احساس ہو سکے۔

وزیراعظم نے مزید کہا کہ سلامتی کونسل کی قراردادوں اور کشمیری عوام کی خواہشات کے مطابق جموں و کشمیر تنازعہ کا منصفانہ اور پرامن حل جنوبی ایشیا میں پائیدار امن اور استحکام کے لیے ناگزیر ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں