30

وزیراعظم عمران خان نے قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس طلب کرلیا

وزیراعظم عمران خان نے جمعرات کو قومی سلامتی کمیٹی (این ایس سی) کا اجلاس کل (جمعہ) کو طلب کیا ہے جس میں کالعدم تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کی جانب سے شروع کیے جانے والے مظاہروں سے متعلق ملک میں جاری صورتحال پر غور کیا جائے گا۔

خبر کی تصدیق وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات فواد چوہدری نے کی ہے۔

فواد نے لکھا کہ کالعدم تنظیم کی غیر قانونی سرگرمیوں کے باعث پیدا ہونے والی صورتحال کے پیش نظر وزیراعظم عمران خان نے قومی سلامتی کمیٹی کا اجلاس کل طلب کر لیا ہے، اجلاس میں قومی سلامتی سے متعلق دیگر امور پر بھی غور کیا جائے گا۔ ٹویٹر.


خیال رہے کہ کالعدم گروپ کے ارکان کا احتجاج آج (جمعرات) ساتویں روز میں داخل ہوگیا، مظاہرین نے گزشتہ رات سے ہی کاموکے میں ڈیرے ڈال رکھے تھے۔

ابتدائی طور پر کالعدم گروپ نے ملتان اور لاہور میں دھرنا دیا جس کے بعد اسلام آباد کی طرف مارچ کا اعلان کیا گیا۔

سیکورٹی فورسز نے مظاہرین کو اسلام آباد پہنچنے سے روکنے کے لیے اہم سڑکوں کو گھیرے میں لے لیا تھا۔ مظاہرین نے گزشتہ کئی دنوں سے جی ٹی روڈ پر دھرنا دے رکھا ہے جس سے ٹرانسپورٹ خدمات متاثر ہیں۔

ٹی ایل پی کے مارچ نے وفاقی دارالحکومت اور پنجاب کے مختلف شہروں میں نظام زندگی کو متاثر کیا ہے۔

راولپنڈی میں سیکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے ہیں۔ اسلام آباد اور راولپنڈی کو ملانے والی اہم شاہراہوں کو سیل کر دیا گیا ہے اور فیض آباد میٹرو سروس معطل کر دی گئی ہے۔ متبادل راستوں پر شدید ٹریفک جام ہونے کی اطلاعات ہیں اور شہریوں کو شدید مشکلات کا سامنا ہے کیونکہ ہسپتالوں میں جانا بھی مشکل ہو گیا ہے۔

اسلام آباد کی طرف مارچ کرنے والے کالعدم تنظیم کے کارکنوں نے جی ٹی روڈ کے کاموکے حصے پر کیمپ لگا رکھا ہے، جب کہ وہ اپنے مارچ میں آگے بڑھنے کی تیاریاں کر رہے ہیں۔ شہر اور جی ٹی روڈ پر کاروباری مراکز بند ہیں اور ہائی وے پر دکانیں اور ریستوراں بھی بند ہیں۔

جی ٹی روڈ اور اس سے ملحقہ علاقوں میں واقع سرکاری و نجی تعلیمی ادارے بھی بند ہیں اور کاموکے میں انٹرنیٹ سروس معطل ہے۔

جھڑپوں میں اب تک پانچ پولیس اہلکار شہید ہو چکے ہیں۔
حکومت پاکستان نے ایک روز قبل کالعدم ٹی ایل پی کو عسکریت پسند تنظیم قرار دینے کے اپنے فیصلے کا اعلان کیا تھا، جس میں وزیر داخلہ شیخ رشید کا کہنا تھا کہ حکومت نے صوبے میں دو ماہ کے لیے امن و امان کی صورتحال برقرار رکھنے کے لیے پنجاب رینجرز کو طلب کیا تھا۔ .

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے وزیر داخلہ نے کہا تھا کہ حکومت امن قائم کرنا چاہتی ہے کیونکہ پاکستان پر بہت زیادہ بین الاقوامی دباؤ ہے۔

رشید نے کہا تھا کہ “ہم نے صوبے میں امن و امان کی صورتحال کو برقرار رکھنے کے لیے رینجرز کو 60 دن کے لیے طلب کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔” “کراچی کی طرح، رینجرز کو پنجاب میں انسداد دہشت گردی ایکٹ 1997 کے سیکشن 4 (2) کے تحت بلایا گیا ہے، جسے پاکستان کے آئین کے آرٹیکل 147 کے ساتھ پڑھا گیا ہے۔”

گزشتہ روز احتجاج میں مزید 3 پولیس اہلکار شہید ہوگئے تھے جب کہ تشدد میں متعدد پولیس اہلکار زخمی بھی ہوئے تھے۔

ٹی ایل پی کے احتجاج کے آغاز سے اب تک تشدد میں پانچ پولیس اہلکار جان کی بازی ہار چکے ہیں اور مظاہرین کی جانب سے پولیس کی لاتعداد گاڑیوں کو آگ لگا دی گئی ہے۔

ٹی ایل پی کو بیرونی حمایت حاصل ہونے کا ثبوت: اسد عمر
وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی و ترقی اسد عمر نے جیو نیوز کے پروگرام ’آج شاہزیب خانزادہ کے ساتھ‘ میں پیشی کے دوران کہا کہ ریاست نے طویل عرصے تک کالعدم ٹی ایل پی کو بات چیت کے ذریعے قائل کرنے کی کوشش کی، لیکن گروپ نے تشدد کا سہارا لیا۔

انہوں نے کہا کہ ایسے شواہد موجود ہیں کہ ٹی ایل پی کو بیرونی حمایت حاصل ہے۔ حکومت نے جو فیصلے کیے ہیں وہ فوج کی مشاورت سے کیے گئے ہیں۔

حکومت سعد رضوی اور ٹی ایل پی کے دیگر رہنماؤں سے مذاکرات کر رہی ہے۔
دریں اثنا، وزارت داخلہ کالعدم تنظیم کے ساتھ بات چیت کر رہی ہے، بشمول اس کے رہنما سعد رضوی، جو اس وقت قید ہیں۔

کالعدم تنظیم کے ترجمان نے بتایا کہ علامہ غلام عباس فیضی اور مفتی عمیر الازہری بھی حکومت سے مذاکرات کرنے والے وفد کا حصہ ہیں۔

ترجمان نے مزید کہا کہ کالعدم تنظیم اپنے مطالبات پر قائم ہے جو وہ مذاکرات کے دوران حکومت کے سامنے پیش کرے گی۔

ترجمان نے کہا کہ “پہلے دن سے ہمارا واحد مطالبہ فرانسیسی سفیر کو ہٹانا ہے۔”

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں