21

پی ٹی آئی رہنماؤں کے درمیان ’اختلاف‘ نے وزیراعظم عمران خان کو ناراض کردیا

ذرائع نے جیو نیوز کو بتایا کہ وزیر اعظم عمران خان نے پیر کے روز پی ٹی آئی رہنماؤں کے درمیان “اتفاق” پر “غصے” کا اظہار کیا اور انہیں ہدایت کی کہ وہ وفاقی وزرا اعظم سواتی اور فواد چوہدری کی حمایت کریں جو الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کے ساتھ تنازع کے درمیان ہیں، ذرائع نے جیو نیوز کو بتایا۔

مبینہ طور پر وزیر اعظم نے یہ ریمارکس ایک روز قبل پی ٹی آئی کی کور کمیٹی کے اجلاس کے دوران کہے جس میں کالعدم تحریک لبیک پاکستان (ٹی ایل پی) کے احتجاج کے بعد ملک میں جاری سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

ذرائع کے مطابق وزیراعظم اپنی کابینہ کے وزراء اور پارٹی قیادت سے غیر مطمئن نظر آئے اور ارکان سے شکایت کی کہ ’’آپ لوگ کسی معاملے پر ساتھ نہیں کھڑے‘‘۔

ذرائع نے مزید کہا کہ اس نے ان سب کو قومی اور سیاسی مسائل پر “ایک ہی زبان بولنے” کو کہا۔

اندرونی ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے ایم کیو ایم پی کے قانون سازوں کی مثال دی، جو ان کے مطابق ہمیشہ ایک دوسرے کی پشت پناہی کرتے تھے۔ انہوں نے مبینہ طور پر پارٹی رہنماؤں کو بتایا کہ “جب میں ایم این اے تھا، ایم کیو ایم کے قانون ساز وہی زبان بولتے تھے۔”

ٹی ایل پی کے بحران کے دوران وفاقی وزراء میں ابہام واضح تھا جب وہ کالعدم تنظیم سے مذاکرات سے متعلق متضاد بیانات جاری کر رہے تھے۔

کور کمیٹی کے اجلاس کے دوران وزیراعظم نے پارٹی قیادت کو ہدایت کی کہ وہ اعظم سواتی اور فواد چوہدری کے ساتھ ای سی پی کے سامنے پیش ہوں۔ دونوں وزراء کو ای سی پی اور چیف الیکشن کمشنر کے خلاف الزامات لگانے پر توہین عدالت کے الزامات کا سامنا ہے۔

پی ٹی آئی کی کور کمیٹی نے ای سی پی کی جانب سے جاری کیے گئے نوٹسز پر بھی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ یہ غیر منصفانہ ہیں اور انہیں فوری طور پر واپس لیا جانا چاہیے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ وزیراعظم نے وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کو بلدیاتی انتخابات کے مسودے کی جلد کابینہ سے منظوری لینے کی بھی ہدایت کی۔

کالعدم تنظیم کے ساتھ ہونے والے معاہدے پر بحث کے دوران وزیراعظم نے ارکان کو عوامی سطح پر معاہدے پر بات کرنے سے روک دیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں