15

نواز شریف کی لاہور کی جائیداد 19 نومبر کو نیلام کی جائے گی، اسسٹنٹ کمشنر

اسسٹنٹ کمشنر لاہور کینٹ نے پیر کو احتساب عدالت کے اپریل کے فیصلے کے مطابق سابق وزیراعظم نواز شریف کی لاہور میں جائیداد نیلام کرنے کا حکم دیا۔

احتساب عدالت نے 23 اپریل کو قومی احتساب بیورو (نیب) راولپنڈی کی جانب سے نواز شریف کے اثاثوں کی نیلامی کے لیے دائر درخواست منظور کر لی تھی۔

نیب کا مسلم لیگ ن کے سپریم لیڈر کے اثاثے نیلام کرنے کا فیصلہ توشہ خانہ ریفرنس میں اشتہاری قرار دیے جانے کے بعد سامنے آیا۔

اے سی نے کہا، “135 اپر مال لاہور کے نام سے مشہور جائیداد کی نیلامی جو کہ موضع میاں میر، تحصیل کینٹ لاہور میں واقع ہے، 19.11.2021 بروز جمعہ صبح 10:00 بجے اسسٹنٹ کمشنر آفس کینٹ کے احاطے میں ہونے والی ہے۔” ایک اطلاع میں

مئی میں اسلام آباد ہائی کورٹ (آئی ایچ سی) نے نواز شریف کی جائیدادوں کی نیلامی کے خلاف سماعت کے لیے جمع کرائی گئی تین درخواستیں مسترد کر دی تھیں۔

دوسری جائیداد کی ضبطی
احتساب عدالت نے گزشتہ ماہ توشہ خانہ گاڑیوں کے ریفرنس میں سابق وزیراعظم نواز شریف کی جائیداد ضبط کرنے کا حکم دیا تھا جس میں سابق وزیراعظم یوسف رضا گیلانی اور سابق صدر آصف علی زرداری بھی شامل ہیں۔

جائیداد میں لاہور میں 1650 کنال زرعی اراضی، ایک مرسڈیز، ایک لینڈ کروزر، دو ٹریکٹر، مقامی اور غیر ملکی بینک اکاؤنٹس، مری میں ایک بنگلہ اور شیخوپورہ میں 102 کنال اراضی شامل ہے۔

زرداری اور نواز کے خلاف دائر نیب ریفرنس میں الزام ہے کہ انہوں نے گاڑیوں کی قیمت کا 15 فیصد ادا کرکے توشہ خانہ (گفٹ ڈپازٹری) سے گاڑیاں حاصل کیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں