56

اگر دنیا نے بروقت اقدامات نہ کیے تو افغانستان ’انسانی ساخت کی سب سے بڑی تباہی‘ بن جائے گا، وزیراعظم عمران خان

کابل کو انسانی امداد کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے وزیر اعظم عمران خان نے اتوار کو خبردار کیا کہ اگر دنیا نے بروقت کارروائی نہ کی تو افغانستان ممکنہ طور پر “انسانی ساختہ سب سے بڑی تباہی” بن سکتا ہے۔

وزیراعظم عمران خان نے یہ باتیں آج اسلام آباد میں منعقد ہونے والے تنظیم اسلامی تعاون (OIC) کے وزرائے خارجہ کی کونسل کے 17ویں غیر معمولی اجلاس سے اپنے کلیدی خطاب کے دوران کہیں۔

افغانستان میں تباہ ہونے والے ہسپتالوں، تعلیم کے شعبے اور بگڑتی ہوئی انسانی صورتحال پر روشنی ڈالتے ہوئے وزیراعظم نے دنیا سے مطالبہ کیا کہ وہ فوری ایکشن لے کیونکہ افغانستان افراتفری کی طرف بڑھ رہا ہے۔

اگر فوری طور پر ایکشن نہیں لیا گیا تو افغانستان افراتفری کی طرف بڑھ رہا ہے۔ جب وہ سرکاری ملازمین، ڈاکٹروں اور نرسوں کو تنخواہیں نہیں دے سکتا تو کوئی بھی حکومت گرنے والی ہے۔ لیکن افراتفری کسی کو سوٹ نہیں کرتی۔ یہ یقینی طور پر ریاست ہائے متحدہ امریکہ کے مطابق نہیں ہے، “انہوں نے مزید کہا.

‘اگر افغان حکومت دہشت گردی کا مقابلہ کرنے میں ناکام رہی تو دوسرے ممالک کو بھی اسپل اوور کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے’
وزیراعظم نے کہا کہ وسائل کی کمی کے باعث اگر افغان حکومت دہشت گردی کا مقابلہ کرنے میں ناکام رہی تو دیگر ممالک کو بھی اس کے اثرات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

افغانستان میں داعش کی موجودگی اور افغان سرحد کے اس پار سے پاکستان کے اندر دہشت گرد حملوں کا ذکر کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ دہشت گرد تنظیم سے نمٹنے کا واحد راستہ ایک مستحکم افغانستان ہے۔ انہوں نے کہا کہ داعش بین الاقوامی حملے کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ پاکستان کو بھی یہی پریشانی لاحق ہے، جس نے افغان جنگ میں 80,000 افراد کے نقصان اور تباہ شدہ معیشت، اور 3.5 ملین افراد کی نقل مکانی کے ساتھ سب سے بڑے نقصان کا سامنا کیا۔

وزیر اعظم نے پاکستان میں مندوبین کا خیرمقدم کیا اور کہا کہ ستم ظریفی یہ ہے کہ پاکستان نے 41 سال قبل افغانستان پر او آئی سی کے موٹ کی میزبانی کی تھی کیونکہ افغانستان جتنا کوئی ملک تنازعات کا شکار نہیں ہوا۔

ان کا کہنا تھا کہ افغانستان کی صورتحال بھی برسوں کی بدعنوان حکومت، غیر ملکی امداد کی معطلی، غیر ملکی اثاثے منجمد کرنے اور غیر فعال بینکنگ سسٹم کی وجہ سے ہوئی ہے جو کسی بھی ریاست کے خاتمے کا باعث بن سکتی ہے۔

‘او آئی سی کی بہت بڑی ذمہ داری ہے’
وزیراعظم نے کہا کہ او آئی سی پر بہت بڑی ذمہ داری عائد ہوتی ہے کیونکہ یہ ہمارا مذہبی فریضہ بھی ہے کہ وہ مصیبت زدہ افغان بھائیوں کی مدد کریں۔

وزیراعظم نے دنیا پر زور دیا کہ وہ اپنی حمایت کو طالبان سے نہ جوڑیں بلکہ 40 ملین لوگوں کا سوچیں۔

تاہم، انہوں نے یہ بھی کہا کہ طالبان کو یہ بھی سمجھنا ہو گا کہ ایک جامع حکومت کی تشکیل، انسانی حقوق، خاص طور پر خواتین کا احترام، اور دیگر ممالک میں دہشت گردی کے لیے افغان سرزمین کے استعمال کی اجازت دینے سے افغانستان کے لیے بین الاقوامی امداد کی راہ ہموار ہو گی۔

تاہم، وزیر اعظم نے عالمی برادری سے کہا کہ وہ افغانستان اور پاکستان کے ملحقہ علاقوں کی ثقافتی روایات، خاص طور پر لڑکیوں کی تعلیم کے حوالے سے حساسیت کا مظاہرہ کرے۔

انہوں نے کہا کہ اپنی روایات کی خلاف ورزی کی صورت میں اہل خانہ اپنی لڑکیوں کو کبھی بھی سکول نہیں بھیجیں گے چاہے وہ ترغیب دیں لیکن اگر وہ مطمئن ہوں گے تو وہ بغیر کسی وظیفے کے اپنی مرضی سے کریں گے۔

’افغانستان میں افراتفری مہاجرین کے بڑے پیمانے پر اخراج کا باعث بنے گی‘
وزیر اعظم نے کہا کہ افغانستان میں کسی بھی قسم کی افراتفری مہاجرین کے بڑے پیمانے پر انخلاء کا باعث بنے گی جو پاکستان کے لیے ناقابل برداشت ہو گا۔

انہوں نے کہا کہ ترقی یافتہ ممالک کو چند ہزار مہاجرین کا مسئلہ درپیش ہے تو پاکستان جیسا ترقی پذیر ملک ان لاکھوں کی میزبانی کیسے کر سکتا ہے۔

انہوں نے کشمیر اور فلسطین کے مسائل پر او آئی سی کے متفقہ ردعمل پر بھی زور دیا جہاں لوگ اقوام متحدہ کی طرف سے ضمانت یافتہ اپنے جمہوری حقوق کے لیے جدوجہد کر رہے تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں