59

وزیراعظم عمران خان نے پی ٹی آئی کے نئے پارٹی ڈھانچے کا اعلان کردیا

وزیر اعظم عمران خان، جو حکمران پی ٹی آئی کے چیئرمین بھی ہیں، نے خیبرپختونخوا کے بلدیاتی انتخابات میں دھچکے کے بعد پی ٹی آئی کی تمام باڈیز کو تحلیل کرنے کے ایک دن بعد پارٹی کے نئے ڈھانچے کا اعلان کیا ہے۔

وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات فواد چوہدری نے اتوار کو پیشرفت شیئر کی۔


نئے پارٹی سیٹ اپ میں اسد عمر کو سیکرٹری جنرل کا عہدہ دیا گیا ہے جب کہ پرویز خٹک، علی حیدر زیدی، قاسم سوری، شفقت محمود اور خسرو بختیار کو خیبرپختونخوا، سندھ اور بلوچستان میں پارٹی کا نیا صوبائی سربراہ مقرر کیا گیا ہے۔ ، بالترتیب پنجاب اور جنوبی پنجاب۔

وزیر نے مزید کہا کہ عامر محمود کیانی کو پارٹی کا ایڈیشنل سیکرٹری جنرل بنا دیا گیا ہے۔

ایک روز قبل فواد چوہدری نے کہا تھا کہ وزیراعظم نے پارٹی کے سینئر رہنماؤں سے مشاورت کے بعد پارٹی سیٹ اپ تحلیل کر دیا ہے۔

یہاں پی ٹی آئی کی اعلیٰ قیادت کے اجلاس کے بعد میڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے فواد نے کہا تھا کہ پی ٹی آئی کے تنظیمی سیٹ اپ کے تمام عہدیداران کو ان کے عہدوں سے ہٹا دیا گیا ہے، کیونکہ فورم میں کے پی کے بلدیاتی انتخابات اور ملک کی مجموعی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

وزیر نے کہا تھا کہ وزیراعظم عمران خان نے کے پی میں بلدیاتی انتخابات کے پہلے مرحلے میں پی ٹی آئی کی کارکردگی اور ٹکٹوں کی تقسیم پر عدم اطمینان کا اظہار کیا تھا۔

فواد نے وضاحت کی تھی کہ پی ٹی آئی کی قومی قیادت پر مشتمل 21 رکنی آئینی کمیٹی تشکیل دی گئی ہے جو پارٹی کے نئے آئین پر کام کر رہی ہے۔

اس میں خیبر پختونخوا سے پرویز خٹک، محمود خان، مراد سعید، اسد قیصر، علی امین گنڈا پور، فواد، شاہ محمود قریشی، حماد اظہر، خسرو بختیار، چوہدری محمد سرور، سیف اللہ نیازی، عامر کیانی اور پنجاب سے عثمان بزدار شامل ہیں۔

اسی طرح انہوں نے کہا کہ میر جان محمد جمالی اور قاسم سوری بلوچستان کی نمائندگی کریں گے جب کہ سندھ سے عمران اسماعیل اور علی زیدی اور وفاقی دارالحکومت سے اسد عمر کو کمیٹی کا حصہ بنایا گیا ہے۔

وفاقی وزیر نے بتایا کہ سینئر ممبران پر مشتمل کمیٹی کی منظوری کے بعد پی ٹی آئی کی نئی تنظیمیں تشکیل دی جائیں گی۔

انہوں نے زور دے کر کہا تھا کہ پی ٹی آئی پاکستان کی سب سے بڑی سیاسی جماعت ہے جسے قومی وفاقی پارٹی کا درجہ حاصل ہے جبکہ عمران خان وفاق کے سربراہ ہیں اور ان کا ووٹ بینک گوادر سے خیبر تک اور کراچی سے لاہور تک ہر جگہ تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں