74

وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ سابق رہنماؤں نے ملک کو قرضوں کا غلام بنایا

بدھ کو وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت کابینہ کا اجلاس ہوا جس میں منی بجٹ 2021-22 پر غور کیا گیا۔

ذرائع کے مطابق وزیراعظم نے کہا کہ چونکہ سابق وزیراعظم نواز شریف اور سابق صدر آصف علی زرداری کی بنائی گئی معاشی پالیسیوں کا خمیازہ ملک کو بھگتنا پڑا، اس لیے منی بجٹ ضروری ہے۔

انہوں نے سابق حکومتوں کو بھی تنقید کا نشانہ بنایا اور کہا کہ جب سے سیاسی رہنماؤں نے اپنے دور حکومت میں بین الاقوامی اداروں سے بھاری قرضے لیے، ملک قرضوں کا غلام بن چکا ہے۔

وزیراعظم عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ ملک بین الاقوامی اداروں سے قرضہ لیتا ہے اور واپس نہ کرنے کے بعد قرضوں کی ادائیگی کے لیے انہی اداروں سے مزید قرضے لینے پڑتے ہیں۔

ملک میں گیس کے جاری بحران پر بات کرتے ہوئے وزیراعظم نے ایل این جی ٹرمینلز اور ورچوئل پائپ لائنوں کی تعمیر سے مسائل حل کرنے کی یقین دہانی بھی کرائی۔

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کی جانب سے اپنے 6 بلین ڈالر کے قرضوں کی بحالی کے لیے مقرر کردہ شرائط کو پورا کرنے کے لیے، پی ٹی آئی حکومت کی جانب سے آئندہ ہفتے پارلیمنٹ کے سامنے ایک منی بجٹ پیش کرنے کی توقع ہے۔
اس سے قبل وزارت خزانہ کے ترجمان مزمل اسلم نے کہا تھا کہ حکومت آئندہ منی بجٹ میں عام آدمی کے زیر استعمال اشیاء پر کوئی ٹیکس نہیں لگائے گی۔

دوسری جانب اپوزیشن نے منی بجٹ کی شدید مذمت کرتے ہوئے حکومتی فیصلے کے خلاف احتجاج کا فیصلہ کیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں