70

پاکستان کے اخراج میں 1 فیصد سے بھی کم اضافہ ہوا، لیکن 10 ممالک میں موسمیاتی تبدیلی کا سب سے زیادہ خطرہ ہے: وزیراعظم

وزیر اعظم عمران خان نے منگل کو کہا کہ پاکستان عالمی کاربن کے اخراج میں 1 فیصد سے بھی کم حصہ ڈالتا ہے، لیکن بدقسمتی سے موسمیاتی تبدیلیوں کے لیے سب سے زیادہ خطرے والے 10 ممالک میں شامل ہے۔

موسمیاتی تبدیلی کے چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے جنگلات میں اضافے اور ماحولیاتی نظام کے تحفظ کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے وزیراعظم نے قوم پر زور دیا کہ وہ آنے والی نسلوں کے لیے ملک کے ماحول کے تحفظ میں اپنا کردار ادا کرے۔

وفاقی دارالحکومت میں وزارت موسمیاتی تبدیلی اور عالمی بنک کے درمیان ’’گرین اسٹیمولس – تصور کو حقیقت میں بدلنے‘‘ کے آغاز کے لیے منعقدہ معاہدے پر دستخط کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ پاکستانیوں کے لیے ایک قوم کے طور پر سوچنا بہت ضروری ہے۔ اور ہماری آنے والی نسلوں کی حفاظت کریں۔

یہ بات قابل ذکر ہے کہ معاہدے کے تحت عالمی بینک ملک بھر میں 14 گرین انیشیٹوز کے لیے 22 ارب روپے کے فنڈز فراہم کرے گا۔

تقریب کے دوران، وزیر اعظم نے حکومت کے اقدامات پر روشنی ڈالی جن میں 10 بلین ٹری سونامی، 15 نیشنل پارکس، موجودہ جنگلات کے تحفظ کے لیے ڈیجیٹل کیڈسٹرل میپنگ وغیرہ شامل ہیں، تاکہ بڑھتے ہوئے درجہ حرارت اور آلودگی جیسے ماحولیاتی تبدیلیوں کے منفی اثرات سے نمٹنے کے لیے۔

انہوں نے کہا کہ گلیشیئر پگھلنے، بڑھتے ہوئے درجہ حرارت اور دیہی اور شہری علاقوں میں ماضی کے مقابلے میں کم بارشوں کو مدنظر رکھتے ہوئے پاکستان قدرتی حل کے ذریعے چیلنجز سے نمٹنے کے لیے اقدامات کر رہا ہے۔

“ہمیں اپنے موجودہ جنگلات کی حفاظت کرنا ہوگی، جنگلات کے رقبے کو بڑھانے کے لیے درخت لگانے کی مہم کو فروغ دینا ہوگا، اور مزید قومی پارکوں کو تیار کرنا ہوگا،” انہوں نے زور دیا۔

وزیراعظم عمران خان نے مزید کہا کہ انسانی وسائل کی خدمات حاصل کرنے کے ساتھ ساتھ ڈرون جیسی ٹیکنالوجی کو بھی ملک کے مختلف حصوں میں حکومت کی جانب سے اعلان کردہ 15 نیشنل پارکس کی نگرانی اور تحفظ کے لیے استعمال کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ اس سے نہ صرف جنگلات اور جنگلی حیات کے تحفظ میں مدد ملے گی بلکہ مقامی لوگوں کے لیے روزگار کے مواقع بھی پیدا ہوں گے۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ نہروں، ندیوں اور آبی ندیوں کے علاوہ لاہور جیسے شہر میں ہوا بھی آلودہ ہو رہی ہے جس سے لوگوں خصوصاً بزرگوں اور بچوں کی زندگیوں کو خطرات لاحق ہیں۔

تاہم، وزیر اعظم نے مزید کہا کہ شہروں کی باڑ لگانے کے ساتھ ساتھ، حکومت سبز علاقوں کی حفاظت اور تجاوزات کو روکنے کے لیے بڑے شہروں کے ماسٹر پلان پر کام کر رہی ہے۔

اسی طرح، انہوں نے کہا، سندھ اور بلوچستان کے ساحلی علاقوں میں مینگرووز کو بڑھایا اور محفوظ کیا جا رہا ہے، جس سے زمینی پانی کو ری چارج کرنے اور جنگلی حیات کے تحفظ میں مدد ملے گی۔

اس سے قبل وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے موسمیاتی تبدیلی ملک امین اسلم نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ گرین سٹیمولس پروگرام ورلڈ بینک کے تعاون سے شروع کیا جائے گا جس سے تمام صوبوں میں اگلے نو ماہ میں 135,000 ملازمتیں پیدا ہوں گی۔

موضوعاتی علاقوں میں جنگلات، محفوظ علاقے، صاف سبز شہر اور برقی نقل و حرکت شامل ہوں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں