67

مری جان لیوا برفانی طوفان کے بعد اپنے پیروں پر کھڑا ہونے کی جدوجہد کر رہا ہے

مری کے لوگ اپنے معمولات، معمول کی زندگیوں پر واپس جانے سے قاصر ہیں کیونکہ پہاڑی تفریحی قصبہ تین دن بعد ایک مہلک برفانی طوفان نے تباہی مچا کر 20 سے زائد افراد کی ہلاکت کے بعد اپنے پیروں پر کھڑا ہونے کی جدوجہد کر رہا ہے۔

ملکہ کوہسار میں پانی اور بجلی کی فراہمی بدستور معطل ہے جبکہ موبائل سروس بدستور متاثر ہے،

امدادی کام ابھی بھی جاری ہے تاہم زیادہ تر سیاحوں کو آفت زدہ پہاڑی مقام سے نکال لیا گیا ہے۔

ذرائع نے بتایا کہ پاکستان واٹر اینڈ پاور ڈویلپمنٹ اتھارٹی (واپڈا) کی ایک ٹیم نے مری میں بجلی کی بحالی کے لیے کام کیا، لیکن وہ انتہائی موسمی حالات کی وجہ سے کام مکمل نہیں کر سکے۔

بزدار نے بلاامتیاز کارروائی کا عزم کیا
اتوار کو سانحہ مری کی تحقیقات کے لیے بنائی گئی کمیٹی کو حتمی شکل دے دی گئی، وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار نے اپنے فرائض میں غفلت برتنے والے تمام افراد کے خلاف “غیر جانبدارانہ کارروائی” کا عزم کیا۔

کمیٹی کو یہ معلوم کرنے کا کام سونپا گیا ہے کہ مری میں پیدا ہونے والی بحرانی صورتحال کے ذمہ دار کون سے سرکاری محکمے ہیں۔

یہ اس بات کا بھی جائزہ لے گا کہ زائرین اور گاڑیوں کی آمد کو کنٹرول کرنے کے لیے کیا اقدامات کیے گئے۔

مزید برآں، کمیٹی اس بات کا جائزہ لے گی کہ محکمہ موسمیات کی جانب سے جاری کردہ موسمی ایڈوائزری کی روشنی میں اداروں کی جانب سے کیا احتیاطی تدابیر اختیار کی گئیں۔ یہ اس بات کا تعین کرے گا کہ آیا لوگوں کو سیاحتی مقام کا سفر کرنے سے روکنے کے لیے میڈیا پر کوئی وارننگ چلائی گئی تھی۔

کمیٹی اس بات کی تحقیقات کرے گی کہ برفانی طوفان کے دوران ٹریفک کنٹرول کے کیا اقدامات کیے گئے اور موسم کی خراب صورتحال کی اطلاعات موصول ہونے کے بعد کیا حفاظتی اقدامات پر عمل درآمد کیا گیا۔

حاصل شدہ نتائج کی رپورٹ سات دنوں میں صوبائی حکومت کو پیش کی جائے گی۔

ابتدائی رپورٹ میں کاربن مونو آکسائیڈ زہر سے ہونے والی اموات کی وجہ بتائی گئی ہے۔
ایک روز قبل وزیراعلیٰ کو ابتدائی رپورٹ پیش کی گئی۔ جس میں بتایا گیا کہ 7 جنوری کو مری میں چار فٹ برف پڑی۔

رپورٹ کے مطابق 3 سے 7 جنوری کے درمیان 162,000 گاڑیاں شہر میں داخل ہوئیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ 7 جنوری کو مرنے والے 22 افراد کی موت کاربن مونو آکسائیڈ زہر کے باعث ہوئی۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ 16 مختلف مقامات پر درخت گرے، جس سے سڑکیں ٹریفک کے لیے بند ہو گئیں۔

رپورٹ کے مطابق مری جانے والی 21 ہزار گاڑیوں کو واپس بھیج دیا گیا۔

مرنے والوں کے ورثاء کے لیے مالی امداد
اے پی پی کی خبر کے مطابق، وزیراعلیٰ نے مرنے والوں کے لواحقین کے لیے 17.6 ملین روپے کی مالی امداد کا بھی اعلان کیا، جبکہ یہ نوٹ کرتے ہوئے کہ مالی امداد “انسانی زندگی کا کوئی متبادل نہیں”۔

وزیراعلیٰ نے سوگوار خاندانوں سے دلی ہمدردی کا اظہار کیا اور کہا کہ پنجاب حکومت ان کے دکھ میں برابر کی شریک ہے۔

اس نے بزدار کے حوالے سے یہ بھی کہا کہ مری میں گاڑیوں اور سیاحوں کا داخلہ اب سے کنٹرول کیا جائے گا۔

بزدار کے حوالے سے بتایا گیا کہ “مقررہ حد سے تجاوز کرنے والی گاڑیوں اور سیاحوں کو مری میں داخلے کی اجازت نہیں ہوگی۔”

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں