53

پارلیمانی پینل نے جسٹس عائشہ ملک کی سپریم کورٹ میں ترقی کی منظوری دے دی

جیو نیوز نے رپورٹ کیا کہ ججوں کی تقرری سے متعلق پارلیمانی کمیٹی نے بدھ کو لاہور ہائی کورٹ (ایل ایچ سی) کی جسٹس عائشہ ملک کو سپریم کورٹ (ایس سی) کے جج کے عہدے پر ترقی دینے کی منظوری دے دی۔

رپورٹ کے مطابق فاروق حامد نائیک کی سربراہی میں قائم کمیٹی نے جسٹس عائشہ کی ترقی کی منظوری دینے کا فیصلہ کیا۔

فاروق نائیک کے مطابق، جوڈیشل کمیشن آف پاکستان (جے سی پی) نے 7 جنوری کو جسٹس عائشہ ملک کی سپریم کورٹ کی جج کے طور پر تقرری کے لیے نو میں سے پانچ ووٹوں سے منظوری دی۔

انہوں نے مزید کہا کہ عدالت ججوں کی سنیارٹی کی بنیاد پر تقرری کے طریقہ کار کو ختم نہیں کر رہی ہے، انہوں نے مزید کہا کہ ملک سپریم کورٹ کی جج بننے والی پہلی خاتون ہوں گی اور “ان سے ملک کو فائدہ ہو گا”۔

اگر تقرری ہوئی تو ملک پاکستان کی عدالتی تاریخ میں سپریم کورٹ کی پہلی خاتون جج ہوں گی۔

واضح رہے کہ جسٹس عائشہ ملک سنیارٹی کے لحاظ سے لاہور ہائی کورٹ میں چوتھے نمبر پر ہیں۔

پاکستان بار کونسل نے جسٹس عائشہ ملک کی تقرری کے خلاف ہڑتال کا اعلان کیا تھا۔

سپریم کورٹ میں تعینات 17 ججوں میں سے جسٹس عائشہ ملک کو اس نشست کے لیے نامزد کیا گیا ہے جو 17 اگست کو جسٹس مشیر عالم کی ریٹائرمنٹ کے بعد خالی ہوئی تھی۔

چیف جسٹس آف پاکستان اور چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ نے جسٹس عائشہ کا نام تجویز کیا تھا جس پر انہوں نے تحریری طور پر اتفاق بھی کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں