60

حکومت کم آمدنی والے طبقوں کے لیے ہاؤسنگ یونٹس کی تعمیر میں سہولت فراہم کر رہی ہے، وزیراعظم عمران خان

وزیر اعظم عمران خان نے منگل کو کہا کہ حکومت تنخواہ دار اور کم آمدنی والے گروپوں کے لیے سبسڈی فراہم کر کے اور ہاؤس فنانسنگ پر سود کی شرح کو معاف کر کے سستی ہاؤسنگ یونٹس کی تعمیر میں سہولت فراہم کر رہی ہے۔

پاکستان ہاؤسنگ اتھارٹی (فیز) کے افسر کی رہائش گاہ، کُری روڈ کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے، وزیرِ اعظم نے “سرکاری ملازمین کے لیے دہائیوں پرانے تعطل کا شکار ہاؤسنگ پروجیکٹس” کو مکمل کرنے کے لیے وزارت ہاؤسنگ کی کوششوں کا اعتراف کیا، اور زور دیا کہ حکام کو بھی چاہیے کہ مزید 88,000 ہاؤسنگ یونٹس کی بروقت تکمیل کو یقینی بنائیں۔

وزیر اعظم عمران خان نے مزید کہا کہ تعمیراتی صنعت ملکی معیشت کو بلند کر سکتی ہے، 30 مزید متعلقہ صنعتوں پر انحصار کو اجاگر کیا جو کہ تعمیراتی شعبے میں تیزی آئے تو ترقی کر سکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ سرکاری ملازمین کے لیے ہاؤسنگ پراجیکٹس کی تکمیل اس لیے اہمیت کی حامل ہے کیونکہ وہ “اپنے گھر خرید اور مالک نہیں بن سکتے۔”

تعمیراتی شعبے کی ترقی کے لیے اپنی حکومت کی کوششوں پر روشنی ڈالتے ہوئے، انھوں نے کہا: “ماضی میں، عدالتوں میں پیشگی قانون کے زیر التوا ہونے کی وجہ سے لوگوں کے پاس آسان اقساط پر اپنے گھروں کی تعمیر کے لیے بینک سے قرض لینے کا کوئی آپشن نہیں تھا۔ .

“تاہم، اب عدالتوں کے ذریعہ قانون کو حتمی شکل دے دی گئی ہے اور اب اس سے بینک کریڈٹ حاصل کرنے کے طریقہ کار کو ہموار کرنے میں مدد ملی ہے۔”

وزیراعظم عمران خان نے اس بات پر زور دیا کہ ملکی تاریخ میں پہلی بار بینک قرضوں کے ذریعے 124 ارب روپے کے ہاؤسنگ منصوبوں کی منظوری دی گئی ہے اور بینکوں کی جانب سے 40 ارب روپے کے قرضے پہلے ہی جاری کیے جا چکے ہیں۔

“بینکنگ مارگیج قانون اب لوگوں کو اس قابل بنائے گا کہ وہ اپنے کرائے کے مکانات کی ادائیگی کو اپنی رہائش گاہوں کی تعمیر کے لیے آسان اقساط کی ادائیگی کے لیے موڑ سکیں،” انہوں نے مزید کہا کہ امریکہ اور یورپ میں مارگیج فنانسنگ کے برعکس جو کہ تقریباً 80 فیصد ہے۔ پاکستان میں یہ جی ڈی پی کے 1 فیصد سے بھی کم تھی۔

‘معاشی صورتحال مزید بہتر ہوگی’
وبائی امراض کی وجہ سے عالمی قیمتوں میں اضافے کا ذکر کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا کہ عالمی بینک کی رپورٹ نے پاکستان کی شرح نمو 5.37 فیصد کی تصدیق کی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ تعمیراتی سرگرمیوں میں تیزی کی وجہ سے مزدور طبقے کی آمدنی میں تقریباً 40-60 فیصد اضافہ نوٹ کیا گیا ہے۔

مزید یہ کہ گزشتہ سال پانچ بمپر فصلوں کی ریکارڈ پیداوار سے کسانوں کو 1400 ارب روپے کی رقم حاصل ہوئی۔

ورلڈ بینک کی رپورٹ – چار اشاریوں پر مبنی – ظاہر کرتی ہے کہ غربت میں کمی آئی ہے، انہوں نے کہا کہ کوویڈ 19 کی وبا کے دوران انہوں نے تعمیراتی صنعت کو بند نہیں کیا تھا۔

انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ملک کی برآمدات میں اضافہ ہوا ہے جبکہ ریکارڈ ترسیلات زر اور ٹیکس وصولی دیکھنے میں آئی ہے۔

وزیر اعظم نے کہا کہ ملک کا مستقبل درست سمت میں طے کیا گیا ہے جیسا کہ بلومبرگ نے اشارہ کیا ہے، جس نے اس بات کو تسلیم کیا کہ پاکستان کی معیشت کو بلندی پر لایا گیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں