60

ٹی ٹی پی پشاور میں بھتہ مانگ رہی ہے، شیخ رشید

وزیر داخلہ شیخ رشید نے انکشاف کیا کہ کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) نے پشاور میں بھتہ مانگنا شروع کر دیا ہے، اور نوشکی اور پنجگور میں سکیورٹی فورسز پر حملوں میں ٹی ٹی پی ملوث ہو سکتی ہے۔

جیو نیوز کے پروگرام آج شاہ زیب خانزادہ کے ساتھ میں ایک پیشی کے دوران، وزیر داخلہ نے کہا کہ بلوچ عسکریت پسند گروپوں اور کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کے ساتھ ساتھ دیگر عسکریت پسند گروپوں کے درمیان دہشت گردی کرنے کے لیے رابطہ ہے۔ پاکستان

انہوں نے مزید کہا کہ 11 جنوری کو بلوچ عسکریت پسند تنظیموں نے بلوچستان نیشنل آرمی (بنایا) بنائی اور پس پردہ کالعدم ٹی ٹی پی اور دیگر تنظیمیں بنایا کی حمایت کر رہی ہیں۔

سیکیورٹی فورسز پر حالیہ حملوں کے جواب میں جس میں سات فوجیوں کی شہادت ہوئی، وزیر داخلہ نے کہا کہ بی این پی نوشکی اور پنجگور میں حملے کرنے کی اہل نہیں تھی، لیکن ان حملوں کے پیچھے ٹی ٹی پی کا ہاتھ ہوسکتا ہے۔

شیخ رشید نے مزید کہا کہ دہشت گردوں کے بھارت میں رابطے اور افغانستان میں کیمپ ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ داعش اور دیگر عسکریت پسند تنظیمیں بھی ملک میں دہشت گردی کو بڑھا رہی ہیں۔

انہوں نے کالعدم ٹی ٹی پی کے ساتھ امن مذاکرات پر بھی روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ کالعدم تنظیم کے ساتھ مذاکرات میں طالبان نے کلیدی کردار ادا کیا تھا لیکن بعد میں مذاکرات کا عمل روک دیا گیا۔

بلوچستان میں حالیہ حملوں کے بارے میں بات کرتے ہوئے شیخ رشید نے کہا کہ دہشت گرد افغانستان سے پاکستان میں حملے کرنے کے لیے داخل ہوتے ہیں اور واپس چلے جاتے ہیں، جیسا کہ حال ہی میں سیکیورٹی فورسز پر دو بڑے حملوں میں ہوا۔ دہشت گرد حملے کرنے کے بعد واپس افغانستان چلے گئے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ یہ سب طالبان کی رضامندی کے خلاف ہو رہا ہے، نارتھ اٹلانٹک ٹریٹی آرگنائزیشن (نیٹو) کے ہتھیار بھی افغانستان میں فروخت ہو رہے ہیں اور پاکستان بھی آ رہے ہیں۔

‘دہشت گرد اب بھی پاکستان میں حملوں کے لیے افغان سرزمین استعمال کر رہے ہیں’
دوسری جانب وزیر اعلیٰ بلوچستان کے مشیر برائے داخلہ ضیا لانگو نے جیو نیوز کے پروگرام آج شاہ زیب خانزادہ کے ساتھ میں انکشاف کیا کہ دہشت گرد اب بھی افغان سرزمین کو پاکستان میں حملے کرنے کے لیے استعمال کر رہے ہیں اور ہمارے پاس اس کے واضح ثبوت موجود ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے دہشت گرد حملوں کے حوالے سے وفاقی حکومت کے ذریعے افغانستان کو پیغام بھیجا ہے کیونکہ افغان حکومت نے ہمیں یقین دہانی کرائی تھی کہ وہ کسی کو اپنی سرزمین پاکستان کے خلاف استعمال کرنے کی اجازت نہیں دیں گے۔

ضیا لانگو نے مزید کہا کہ دہشت گرد بھارت کے ساتھ مل کر پاکستان کے خلاف سازشیں کر رہے ہیں، ان حملوں میں بھارت براہ راست ملوث ہے۔

بلوچستان میں بدھ کی رات سیکیورٹی فورسز اور دہشت گردوں کے درمیان جھڑپ میں کم از کم 13 دہشت گرد اور سات فوجی مارے گئے۔

انٹر سروسز پبلک ریلیشنز (آئی ایس پی آر) کے مطابق، سیکیورٹی فورسز نے حملوں کو پسپا کرنے کے بعد بدھ کی شب بلوچستان کے بیان کردہ علاقوں میں چھپے مزید دہشت گردوں کی تلاش کے لیے کلیئرنس آپریشن کیا۔

آئی ایس پی آر کا کہنا تھا کہ “نوشکی میں سیکیورٹی فورسز نے مزید 5 دہشت گردوں کو مار گرایا، جس سے علاقے میں مارے جانے والے دہشت گردوں کی تعداد 9 ہوگئی، جب کہ مقابلے میں چار جوانوں نے جام شہادت نوش کیا۔”

آئی ایس پی آر کے مطابق پنجگور میں فائرنگ سے 3 فوجی شہید اور 4 زخمی ہوگئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں