58

ایف آئی اے نے سوشل میڈیا پر وزیراعظم عمران خان کے خلاف ’سستا ٹرینڈ‘ چلانے پر صحافی کو گرفتار کر لیا

جیو نیوز نے رپورٹ کیا کہ وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) نے پیر کو ایک صحافی کو سوشل میڈیا پر وزیر اعظم کے خلاف ٹرینڈ چلانے پر گرفتار کر لیا۔

ایف آئی اے سائبر کرائم ونگ نے لاہور کے علاقے ماڈل ٹاؤن میں کارروائی کرتے ہوئے صابر ہاشمی نامی ملزم کے خلاف مقدمہ درج کرلیا۔

ایف آئی اے کے مطابق صابر پر وزیراعظم عمران خان کے خلاف ’غیر مہذب‘ ٹرینڈ چلانے کا الزام تھا۔ ایجنسی نے ہاشمی کا موبائل فون اور دیگر سامان قبضے میں لے لیا ہے۔

سستا اور ناقابل برداشت عمل: وزیراعظم خان
اس سے قبل وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت پارٹی کی سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی (سی ای سی) کا اجلاس ہوا، جس میں انہوں نے ذاتی حملوں پر مشتمل غیر مہذب رجحان پر برہمی کا اظہار کیا۔

اس عمل کی مذمت کرتے ہوئے، وزیر اعظم نے اسے “سستا اور ناقابل برداشت” قرار دیا، انہوں نے مزید کہا کہ “ایسے عناصر کو بے لگام نہیں چھوڑا جا سکتا اور ان کے اعمال کی مذمت کی جانی چاہیے۔”

ملزمان کے خلاف سخت کارروائی کی جائے۔
دوسری جانب وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے سیاسی رابطے شہباز گل نے اتوار کو کہا تھا کہ حکومت نے خاتون اول بشریٰ بی بی کے بارے میں ’توہین آمیز اور من گھڑت‘ بیان دینے والے صحافی کے خلاف ملکی عدالتوں سے رجوع کیا ہے۔

ایس اے پی ایم نے کہا کہ “خاتون اول کے بارے میں غلط خبریں پھیلانے والوں کے خلاف سخت قانونی کارروائی کی جائے گی۔”

ایک روز قبل ایک صحافی نے دعویٰ کیا تھا کہ بشریٰ بی بی کا ’وزیراعظم عمران خان سے جھگڑا‘ ہو گیا تھا اور وہ اپنی سہیلی فرح خان کے گھر رہنے کے لیے بنی گالہ سے لاہور چلی گئی تھیں۔ یہ افواہ جلد ہی سوشل میڈیا اور واٹس ایپ گروپس پر پھیلنے لگی۔

جب جیو نیوز سے رابطہ کیا گیا تو فرح خان نے بھی جوڑے کی مبینہ لڑائی اور علیحدگی کی خبروں کی تردید کی اور اس بات کی تردید کی کہ خاتون اول ان کی جگہ پر ٹھہری ہوئی ہیں۔

سینیٹر فیصل جاوید نے معاملے کی تحقیقات کا مطالبہ کر دیا۔
ادھر سینیٹر فیصل جاوید نے وزیراعظم کے اہل خانہ کے خلاف افواہیں پھیلانے کے معاملے کی تحقیقات کا مطالبہ کردیا۔

سینیٹر نے “زرد صحافت اور سستی حرکتوں” میں حصہ لینے والے ملزمان کے خلاف سخت اقدامات کرنے کا مطالبہ کیا۔

ملزمان کو “ریاست کے دشمن” قرار دیتے ہوئے جاوید نے کہا کہ اس طرح کی حرکتیں ملک اور وزیر اعظم کے خلاف ہیں، جو کبھی بدعنوانی میں ملوث نہیں رہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں