55

اپوزیشن نے وزیراعظم کے ریلیف اقدامات کو لانگ مارچ، تحریک عدم اعتماد کا نتیجہ قرار دے دیا

اپوزیشن جماعتوں نے وزیراعظم عمران خان کے پیٹرولیم اور بجلی کی قیمتوں میں کمی کے فیصلے کو لانگ مارچ اور حکومت کو ہٹانے کے لیے تحریک عدم اعتماد کا نتیجہ قرار دیتے ہوئے دعویٰ کیا کہ حکومت پریشان ہے اس لیے وزیراعظم نے عوام کے لیے ریلیف کا اعلان کیا۔ .

پیر کو ایک حیران کن اقدام میں وزیراعظم عمران خان نے قوم سے خطاب میں پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں 10 روپے فی لیٹر کمی کا اعلان کیا۔

انہوں نے کئی دیگر امدادی اقدامات کے علاوہ بجلی کی قیمتوں میں 5 روپے تک کمی کا بھی اعلان کیا۔

موجودہ حکومت کے خلاف لانگ مارچ کی قیادت کرنے والے پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے پیٹرولیم کی قیمتوں میں کمی پر عوام کو مبارکباد دیتے ہوئے مزید کہا کہ ’عمران خان کی ٹانگیں اب کانپ رہی ہیں‘۔

سابق وزیر خزانہ اور مسلم لیگ (ن) کے رہنما مفتاح اسماعیل نے بھی پٹرولیم کی قیمتوں میں کمی کو حکومت پر اپوزیشن کے دباؤ کے ہتھکنڈوں کا نتیجہ قرار دیا۔

جیو نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے مفتاح اسماعیل کا کہنا تھا کہ جو لوگ پریشان نہ ہونے کا مشورہ دیتے تھے، وہ اب وزیراعظم کے خلاف عدم اعتماد کے اقدام کی وجہ سے پریشان دکھائی دے رہے ہیں۔

پیپلز پارٹی کی سینیٹر شیری رحمان نے کہا کہ وزیراعظم کا یہ اعلان بلاول بھٹو کے لانگ مارچ کا نتیجہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے ابھی لانگ مارچ شروع کیا ہے، پی پی پی کے اسلام آباد پہنچنے سے پہلے مزید امدادی اقدامات کا اعلان کیا جائے گا۔

مسلم لیگ ن کی ترجمان مریم اورنگزیب نے کہا کہ وزیراعظم کا پیٹرول اور بجلی کی قیمتوں میں کمی کا فیصلہ اپنی نوکری بچانے کی ناکام کوشش ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ “ان کا [عمران خان کا] فیصلہ قومی اسمبلی میں ان کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک کے بڑھتے ہوئے خوف کی نشاندہی کرتا ہے”۔

پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما خورشید شاہ نے کہا کہ پیپلز پارٹی کے لانگ مارچ نے وزیراعظم کو عوام کے مسائل پر توجہ دینے پر مجبور کیا لیکن اب عمران خان کا کھیل ختم ہو چکا ہے۔

مسلم لیگ (ن) کے رہنما پرویز رشید نے کہا کہ عمران خان مخالفین پر بہتان تراشی کرتے تھے اور اب اپنی ہی سیٹ کھونے کا ڈر ہے۔

قوم سے خطاب میں وزیراعظم عمران خان نے معاشی ریلیف اقدامات کا اعلان کیا۔
وزیر اعظم عمران خان نے سوموار کو یوکرین-روس کے جاری بحران کے درمیان معاشی ریلیف کے متعدد اقدامات کا اعلان کیا اور ایک آزاد خارجہ پالیسی پر زور دیا۔

قوم سے خطاب میں وزیراعظم نے کہا کہ حکومت پیٹرول، ڈیزل اور بجلی کی قیمتوں میں کمی کر رہی ہے جب کہ اگلے بجٹ تک اضافہ نہیں کیا جائے گا جس کا اعلان جون میں کیا جائے گا۔

وزیراعظم نے کہا کہ حکومت نے پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں 10 روپے اور بجلی کے نرخوں میں 5 روپے کمی کا فیصلہ کیا ہے۔ اگلے بجٹ تک ان اشیاء کی قیمتیں نہیں بڑھیں گی۔

انہوں نے کہا کہ حکومت 10 ڈیموں کی تعمیر پر کام کر رہی ہے جو پاکستان کو عالمی قیمتوں میں اتار چڑھاؤ سے بچانے میں مدد کریں گے کیونکہ مستقبل میں ہائیڈل سسٹم کے ذریعے بجلی پیدا کی جائے گی۔

وزیر اعظم عمران خان نے کہا کہ حکومت نے احساس پروگرام کے کیش ہینڈ آؤٹ کو 12,000 روپے سے بڑھا کر 14,000 روپے کرنے کا بھی فیصلہ کیا ہے اور مزید کہا کہ بے روزگار گریجویٹس کو انٹرن شپ اور 30,000 روپے کا وظیفہ دیا جائے گا – لیکن طریقہ کار کی وضاحت نہیں کی۔

وزیر اعظم نے آئی ٹی سیکٹر – کمپنیوں اور فری لانسرز – کے لیے مکمل ٹیکس چھوٹ کا اعلان کرتے ہوئے مزید کہا کہ ان پر زرمبادلہ کی کوئی پابندی نہیں لگائی جائے گی۔ مزید یہ کہ آئی ٹی اسٹارٹ اپس کو اب کیپیٹل گین ٹیکس ادا نہیں کرنا پڑے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں