46

پاکستان کو ایندھن کی قلت کا سامنا ہوسکتا ہے، تیل کمپنیوں نے حکومت کو خبردار کردیا

جیو نیوز نے رپورٹ کیا، وزیر اعظم عمران خان کی جانب سے اگلے بجٹ تک پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں منجمد کرنے کے اعلان کے تناظر میں آئل مارکیٹنگ کمپنیوں اور ریفائنریز نے حکومت کو ملک میں ایندھن کا بحران پیدا کرنے سے خبردار کیا ہے۔

پیر کو وزیراعظم عمران خان نے معاشی ریلیف اقدامات کا اعلان کیا۔ قوم سے اپنے خطاب میں وزیراعظم نے کہا کہ حکومت پیٹرول، ڈیزل اور بجلی کی قیمتوں میں کمی کر رہی ہے اور اگلے بجٹ تک ان میں اضافہ نہیں کیا جائے گا، جس کا اعلان جون میں کیا جائے گا۔

وزیراعظم کے اعلان کے اثرات کے جواب میں آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی (اوگرا) اور پیٹرولیم ڈویژن کے درمیان اسلام آباد میں ورچوئل میٹنگ ہوئی، جس میں آئل مارکیٹنگ کمپنیوں اور ریفائنریز نے شدید تحفظات کا اظہار کیا اور فیول پرائس ایڈجسٹمنٹ کے طریقہ کار پر سوال اٹھایا۔

جب ہم بین الاقوامی مارکیٹ سے مہنگے داموں خرید رہے ہیں تو ہم پٹرولیم مصنوعات کو سستے داموں کیسے بیچ سکتے ہیں؟ اور قیمت کا فرق کون ادا کرے گا؟ اجلاس میں حکام نے آئل مارکیٹنگ کمپنیوں اور ریفائنریز سے پوچھ گچھ کی۔

ذرائع کے مطابق سیکرٹری پٹرولیم نے کہا ہے کہ حکومت پرائس ایڈجسٹمنٹ کا طریقہ کار بنا رہی ہے۔ تاہم حکومت بعد میں ادائیگی کرے گی۔ تب تک تیل کی مارکیٹنگ کمپنیوں اور ریفائنریوں کو قیمت کا فرق برداشت کرنا چاہیے۔

سیکرٹری پٹرولیم کے جواب میں آئل مارکیٹنگ کمپنیوں اور ریفائنریز نے کہا کہ صورتحال پائیدار نظر نہیں آ رہی کیونکہ ملک کو پٹرولیم مصنوعات کی سپلائی میں رکاوٹ کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔

تاہم، حکومت کو قیمتوں کی ایڈجسٹمنٹ کی ادائیگیوں کے لیے ضمانت فراہم کرنی چاہیے۔

پیٹرول کی قیمت میں 10 روپے فی لیٹر کمی بجٹ تک نرخوں میں اضافہ نہیں کیا جائے گا۔
پیر کو حیران کن اقدام کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے اعلان کیا کہ وہ پیٹرول اور ڈیزل کی قیمتوں میں 10 روپے فی لیٹر کمی کررہے ہیں۔

اپنی تقریر کے آغاز میں وزیراعظم عمران خان نے اعلان کیا کہ ہر ایک کا خیال ہے کہ اشیاء اور تیل کی قیمتوں میں اضافہ ایک عارضی رجحان ہے۔ تاہم یوکرین میں جاری صورتحال کے پیش نظر حکومت نے محسوس کیا کہ بین الاقوامی منڈی میں قیمتیں نہیں گریں گی۔

وزیراعظم عمران خان کا مزید کہنا تھا کہ چونکہ پاکستان پیٹرول درآمد کرتا ہے، اگر عالمی منڈی میں قیمتیں بڑھیں تو حکومت کچھ نہیں کرسکتی۔

دوسرے ممالک میں پیٹرول کی قیمتوں کی تفصیلات بتاتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان میں پیٹرول کی قیمت اب بھی دنیا میں سب سے کم ہے۔

پیٹرول کی نئی قیمت 149.86 روپے مقرر
فنانس ڈویژن کی طرف سے جاری کردہ ایک بیان کے مطابق عالمی سطح پر پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتیں یوکرین روس جنگ کا پتہ لگا رہی ہیں اور اس کے نتیجے میں یہ 100 ڈالر فی بیرل تک بڑھ گئی ہیں۔

اس نے کہا، “غیر معمولی اضافہ گھریلو ایندھن کی قیمتوں اور افراط زر کے لیے بہت خطرناک ہے،” اس نے مزید کہا کہ صورتحال حکومت کے لیے بہت کم آپشنز چھوڑتی ہے۔

اس میں مزید کہا گیا ہے کہ 28 فروری کو ہونے والے پندرہ روزہ جائزے میں اوگرا نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 10 روپے فی لیٹر اضافے کی سفارش کی ہے۔

قوم سے اپنے خطاب میں وزیراعظم نے نہ صرف اس اضافے کو مسترد کیا بلکہ محدود مالیاتی جگہ کے باوجود صارفین کو زیادہ سے زیادہ ریلیف فراہم کرنے کے لیے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 10 روپے فی لیٹر کمی کے منصوبے کا اعلان بھی کیا۔ بیان

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں