49

ٹک ٹاک اسٹار حریم شاہ کا پشاور دھماکے کے بعد ‘فرقہ وارانہ گفتگو’ کا جواب

پاکستانی ٹک ٹاک سٹار حریم شاہ نے انسٹاگرام پر اس سے باز رہنے کا فیصلہ کیا۔
پشاور حملے کے بعد سوشل میڈیا پر “فرقہ وارانہ باتیں” گردش کر رہی ہیں۔ انہوں نے پشاور دھماکے میں شہید ہونے والے افراد کو شہید قرار دیتے ہوئے ان کی تعظیم کی اور کہا کہ وہ “پاکیزگی کی اعلیٰ ترین حالت میں فوت ہوئے”۔

میں بیمار ہوں، لیکن اس معاملے کو حل کرنا ہوگا، ٹک ٹاک سنسنیشن نے کہا، جو اکثر تنازعات میں گھرے رہتے ہیں۔

یہ ویڈیو پشاور کی ایک مسجد میں ہونے والے مبینہ خودکش بم دھماکے کے چند دن بعد پوسٹ کی گئی تھی جس میں 60 سے زائد افراد کی جانیں گئی تھیں، جب کہ 200 کے قریب زخمی ہوئے تھے۔

شاہ نے دعویٰ کیا کہ حملے کے بعد، سوشل میڈیا پر ایسی بہت سی باتیں ہوئیں جو “معاملے کی سنگینی کے حوالے سے غیر حساس” تھیں کیونکہ انہوں نے متاثرین کے فرقوں پر اس حقیقت سے زیادہ توجہ مرکوز کی کہ ان کی موت “خدا کے گھر” میں ہوئی۔

“ہم کون ہوتے ہیں کہنے والے کہ وہ کسی خاص فرقے سے تعلق رکھتے تھے؟” اس نے پوچھا “ہم نہیں جانتے کہ کون حق پر ہے اور کون خدا کے زیادہ قریب ہے۔”

فیصلوں کے ریمارکس سے مایوس ہو کر جو لوگ متاثرین کے لیے دے رہے تھے، شاہ نے کہا کہ “ہم میں انسانیت باقی نہیں رہی۔”

ایس ایچ سی نے شاہ کو منی لانڈرنگ کی تحقیقات میں 18 اپریل تک ایف آئی اے کے سامنے پیش ہونے کو کہا
اس سے پہلے دن میں، شاہ کو سندھ ہائی کورٹ (ایس ایچ سی) نے منی لانڈرنگ کی مبینہ تحقیقات میں 18 اپریل تک وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) کے سامنے پیش ہونے کی ہدایت کی تھی۔

ایس ایچ سی نے یہ ہدایت ٹک ٹاک اسٹار کے خلاف منی لانڈرنگ کیس کی سماعت کے دوران جاری کی۔

سماعت کے آغاز میں، شاہ کی نمائندگی کرنے والے وکیل نے ترکی میں لکھی گئی ایک میڈیکل رپورٹ پیش کی جس میں بتایا گیا کہ مقدمہ کا مدعا علیہ بیمار ہے۔

وکیل نے عدالت کو بتایا کہ ‘میری موکل اس وقت ترکی میں ہے اور وہ پاکستان واپس نہیں آسکتی کیونکہ ڈاکٹروں نے اسے بیماری کی وجہ سے آرام کرنے کا مشورہ دیا ہے’۔

عدالت نے شاہ کو 18 اپریل تک ایف آئی اے کے سامنے پیش ہونے کی ہدایت کرتے ہوئے سماعت ملتوی کردی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں