44

پریانتھا کمارا لنچنگ کیس: انسداد دہشت گردی عدالت نے 89 افراد پر فرد جرم عائد کی

انسداد دہشت گردی کی عدالت نے سیالکوٹ میں سری لنکن شہری پریانتھا کمارا کے وحشیانہ لنچنگ میں ملوث 89 افراد پر فرد جرم عائد کردی۔

گوجرانوالہ کی انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت کی جج نتاشا نسیم نے لاہور کی کوٹ لکھپت جیل میں کمارا قتل کیس کی سماعت کی۔

استغاثہ نے مقدمے میں ملزمان بالغوں اور نوعمروں کے خلاف الگ الگ چالان دائر کیے۔ پہلے چالان میں 80 ملزمان کو نامزد کیا گیا تھا جب کہ دوسرے چالان میں 9 نابالغوں کے نام شامل تھے۔

چالان میں استغاثہ نے 40 گواہوں کے اکاؤنٹس، واقعے کی ویڈیوز، ڈیجیٹل شواہد، ڈی این اے شواہد اور فرانزک شواہد شامل کیے تھے۔

عدالت نے استغاثہ کے 14 گواہوں کو 14 مارچ کو سماعت کے لیے طلب کر لیا۔

لنچنگ
سیالکوٹ میں ایک پرائیویٹ فیکٹری میں بطور منیجر کام کرنے والی دیا ودان پریانتھا کو 3 دسمبر 2021 کو ایک ہجوم نے توہین مذہب کا الزام لگا کر قتل کر دیا تھا۔

اس لرزہ خیز واقعے کو وزیر اعظم عمران خان نے “پاکستان کے لیے شرم کا دن” قرار دیا۔

سیالکوٹ کے وزیر آباد روڈ پر واقع گارمنٹس انڈسٹری کے کارکنوں نے الزام لگایا تھا کہ غیر ملکی نے توہین مذہب کا ارتکاب کیا ہے۔ اس کے بعد اسے مارا پیٹا گیا اور اس کے جسم کو آگ لگا دی گئی۔

پولیس کے مطابق، مشتعل ہجوم نے فیکٹری میں توڑ پھوڑ کی اور ٹریفک کو روک دیا۔

اس وحشیانہ قتل پر وزیر اعظم اور صدر سمیت اعلیٰ حکومتی عہدیداروں کے ساتھ ساتھ فوج کی اعلیٰ قیادت کی طرف سے بڑے پیمانے پر مذمت کی گئی تھی، جنہوں نے اس میں ملوث تمام افراد کو کتاب کے کٹہرے میں لانے کا وعدہ کیا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں