50

عمران خان کو وزیراعظم بنائے رکھنا ملک کے ساتھ ناانصافی ہوگی، چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو زرداری

وزیراعظم عمران خان پر طنز کرتے ہوئے پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے ہفتے کے روز کہا کہ وہ وزیراعظم کے عہدے پر برقرار رہنے کو یقینی بنا کر ملک کے ساتھ ناانصافی نہیں کرنا چاہتے۔

پاراچنار میں عوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے چیئرمین پی پی پی کا کہنا تھا کہ موجودہ حکومت کو ریاست مدینہ کہنا اس کے نام کی توہین ہے۔

بلاول نے سوال کیا کہ یہ کیسی ریاست مدینہ ہے جو امیروں کو ریلیف اور غریبوں کو مہنگائی فراہم کرتی ہے۔

بلاول نے عمران خان کی قیادت والی حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ معاشی بدانتظامی کی وجہ سے ملک کو “تاریخی مہنگائی” کا سامنا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ وزیر اعظم نے قوم سے 100 ملین ملازمتوں کا وعدہ کیا تھا اور وعدہ کیا تھا کہ وہ انٹرنیشنل مانیٹری فنڈ (آئی ایم ایف) سے رجوع نہیں کریں گے لیکن وہ ناکام رہے۔

پی پی پی کے چیئرمین نے کہا کہ پی ٹی آئی حکومت کی جانب سے آئی ایم ایف سے قرضہ لینے پر رضامندی کے بعد ملک کی مالی خودمختاری پر سمجھوتہ کیا گیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ عوام بھاری بل ادا کرکے عمران خان کی معاشی ناکامی کا بوجھ برداشت کررہے ہیں۔ پی ٹی آئی کے سونامی کو ’’تباہی‘‘ قرار دیتے ہوئے بلاول نے کہا کہ موجودہ حکومت نے چند لوگوں کا ساتھ دیا اور انہیں آخری بجٹ میں ریلیف دیا۔

ہم نے دکھایا ہے کہ عمران خان اکثریت کھو چکے ہیں۔ اس لیے اب وہ وزیراعظم نہیں رہے، بلاول نے مزید کہا کہ اگر عمران خان 172 ارکان لانے میں کامیاب ہوگئے تو اپوزیشن انہیں وزیراعظم سمجھے گی۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ اپوزیشن نے 8 مارچ سے وزیر اعظم کے خلاف تحریک عدم اعتماد پیش کی ہے۔ بلاول نے مزید کہا کہ ‘وزیراعظم کھیل کا مظاہرہ کریں اور اگر ہمت ہے تو ہمارا سامنا کریں’۔

وزیراعظم کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے بلاول نے کہا کہ وزیراعظم کہتے تھے کہ وہ کشمیر کے سفیر بنیں گے لیکن وہ آخر کلبھوشن جادھو کے وکیل بن گئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں