40

خیبرپختونخوا میں بلدیاتی انتخابات کل ہوں گے

ایبٹ آباد، مانسہرہ، سوات اور مالاکنڈ سمیت خیبرپختونخوا کے 18 اضلاع میں کل (جمعرات) کو بلدیاتی انتخابات ہونے جا رہے ہیں۔

الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) نے بلدیاتی انتخابات کے دوسرے مرحلے کے لیے آزادانہ، شفاف اور پرامن انتخابات کے انعقاد کے لیے تمام انتظامات مکمل کر لیے ہیں۔

صوبائی الیکشن کمیشن کے مطابق، جمعرات کو ان اضلاع میں آٹھ ملین سے زائد رجسٹرڈ ووٹرز کے ووٹ کا حق استعمال کرنے کی توقع ہے۔

کل 8,057,974 رجسٹرڈ ووٹرز (مرد — 4,489,771 اور خواتین —3,567,703) 65 تحصیلوں میں میئر اور چیئرمین اور 1,830 گاؤں اور پڑوسی کونسلوں کی مختلف نشستوں کے لیے امیدواروں کو منتخب کرنے کے لیے تیار ہیں۔

دوسرے مرحلے میں بلدیاتی انتخابات ایبٹ آباد، مانسہرہ، بٹگرام، تورغر، اپر اور لوئر کوہستان، کولائی پلاس، سوات، مالاکنڈ، شانگلہ، لوئر اینڈ اپر دیر، اپر اور لوئر چترال، کرم، اورکزئی، اور شمالی اور جنوبی وزیرستان کے اضلاع۔

تحصیل کی 65 نشستوں کے لیے 561 امیدوار، جنرل نشستوں کے لیے 12,980، خواتین کی نشستوں کے لیے 2,668، کسانوں/مزدوروں کی نشستوں کے لیے 6,451، نوجوانوں کی نشستوں کے لیے 5,213 اور اقلیتوں کی 57 نشستوں کے لیے 561 امیدوار میدان میں ہیں۔

اسی طرح جنرل نشستوں پر 351 امیدوار، خواتین کی نشستوں پر 533، نوجوانوں کی 233، اقلیتی نشستوں پر 50 اور مزدوروں/کسانوں کی نشستوں پر 151 امیدوار بلا مقابلہ منتخب ہوئے۔

ای سی پی نے 6,176 پولنگ اسٹیشن قائم کیے ہیں جن میں 1,246 مردوں کے لیے، 1,164 خواتین کے لیے اور 3,766 مشترکہ طور پر ووٹرز کی سہولت کے لیے ہیں۔

اسی طرح 16,509 پولنگ بوتھ جن میں 9,218 مردوں کے لیے اور 7,291 خواتین کے لیے بھی شامل ہیں ووٹرز کی سہولت کے لیے بھی قائم کیے گئے ہیں جن میں نوجوان اور خواتین ووٹرز بھی شامل ہیں۔

ان پولنگ سٹیشنز میں سے 1646 حساس ترین جبکہ 2326 حساس قرار دیے گئے ہیں اس لیے سکیورٹی کے وسیع انتظامات کیے گئے ہیں۔

بلدیاتی انتخابات کے دوسرے مرحلے کے لیے سیکیورٹی کے فول پروف انتظامات کیے گئے ہیں۔

دریں اثنا، ووٹرز کو پولنگ سٹیشنوں کے اندر اسلحہ اور گولہ بارود لے جانے کی سختی سے ممانعت ہے۔

حساس ترین پولنگ اسٹیشنز کی سی سی ٹی وی کیمروں کے ذریعے نگرانی کی جائے گی۔

الیکشن کمیشن نے بلدیاتی انتخابات کے لیے ووٹرز کو متحرک کرنے کے لیے پریس کلبوں اور میڈیا کے تعاون سے آگاہی ورکشاپس کا ایک سلسلہ ترتیب دیا ہے۔

انتخابی مہم کا باضابطہ طور پر آج نصف شب (12 بجے) اختتام ہو جائے گا جس کے بعد کسی بھی امیدوار کو جلسہ عام سے خطاب یا ریلیاں کرنے کی اجازت نہیں ہوگی۔

ڈپٹی ڈائریکٹر لوکل گورنمنٹ الیکشنز محمد ناصر خان اور اسسٹنٹ ڈائریکٹر مصطفی جلال کی نگرانی میں صوبائی الیکشن کمشنر پشاور کے دفتر میں الیکشن سے متعلق شکایات کے فوری حل کے لیے ایک کنٹرول روم قائم کیا گیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں