38

بلقیس ایدھی 74 سال کی عمر میں انتقال کر گئیں

معروف انسان دوست اور انسان دوست عبدالستار ایدھی کی اہلیہ بلقیس بانو ایدھی مختصر اسپتال میں داخل ہونے کے بعد جمعہ کو 74 برس کی عمر میں انتقال کر گئیں۔

آج سے پہلے، اس کے اہل خانہ نے کہا تھا کہ اس کی حالت مستحکم ہو گئی ہے۔ وہ تین دن تک کراچی کے ایک اسپتال میں داخل رہیں اور اچانک بلڈ پریشر گرنے کے بعد انہیں وہاں لے جایا گیا۔ ایدھی فاؤنڈیشن کے ترجمان کے مطابق بلقیس گزشتہ ایک ماہ سے علیل تھیں۔

ایدھی فاؤنڈیشن کے ترجمان محمد بلال کا کہنا تھا کہ ’اگرچہ ان کی حالت تشویشناک نہیں ہے، لیکن وہ مزید کچھ دن اسپتال میں رہیں گی۔

بلال نے مزید کہا کہ بلقیس کو دل کی خرابی تھی اور وہ پہلے ہی دو بار ہارٹ بائی پاس سے گزر چکی ہیں۔

بدھ کو وزیر اعظم شہباز شریف کے بندرگاہی شہر کے پہلے دورے کے دوران خاتون اول تہمینہ درانی نے بھی ان کی عیادت کی تھی۔

اس سے قبل اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کے نمائندہ پروفیسر یانگھی لی اور امریکی ماہر اخلاق اسٹیفن سولڈز کے ساتھ پاکستان کے بلند پایہ انسان دوست اور انسان دوست کو ’’عشرے کا فرد‘‘ قرار دیا گیا تھا۔

ایدھی فاؤنڈیشن کے ترجمان نے اے پی پی کو بتایا کہ امپیکٹ ہال مارکس کے جمعہ کو اعلان کردہ ڈومینو ایفیکٹ فیصلے کے مطابق بلقیس ایدھی کو 21ویں صدی کی پہلی دو دہائیوں کی سب سے زیادہ متاثر کن شخصیت قرار دیا گیا۔

بلقیس ایک پیشہ ور نرس تھی اور بلقیس ایدھی فاؤنڈیشن کی سربراہ تھی۔ عبدالستار ایدھی نے انہیں شادی کی پیشکش کی اور اپریل 1966 میں ان کی شادی ہوگئی۔

اس نے اپنی زندگی کی چھ دہائیوں سے زیادہ ضرورت انسانیت کی خدمت میں گزاری۔

اس کی چیریٹی نے ملک بھر میں ایدھی ہومز اور مراکز میں “جھولے” [جھولے] رکھ کر اب تک 42,000 سے زیادہ ناپسندیدہ بچوں کو بچایا ہے۔

انہوں نے عبدالستار ایدھی کے ساتھ اپنی شادی سے چار بچے فیصل، کبریٰ، زینت اور الماس چھوڑے ہیں۔

تعزیتیں برس رہی ہیں۔
صدر مملکت عارف علوی نے بلقیس ایدھی کے انتقال پر دکھ کا اظہار کیا۔

“وہ ہمیشہ عبدالستار ایدھی کے ساتھ ان کی انسان دوستی کی کوششوں میں کندھے سے کندھا ملا کر رہیں اور ان کی موت کے بعد بھی اپنا کام جاری رکھا۔ اللہ مرحوم کی روح کو جنت نصیب کرے،” ایوان صدر نے ٹویٹ کیا۔


وزیر اعظم شہباز شریف نے کہا کہ بلقیس ایدھی نے اپنے شوہر کے انسانی خدمت کو جاری رکھا۔


وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے ان کے انتقال پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کیا اور ملک کے لیے ان کے فلاحی کاموں کو سراہا۔


سابق وزیر خارجہ اور پی ٹی آئی رہنما شاہ محمود قریشی نے لکھا: “مجھے محترمہ بلقیس ایدھی کے انتقال کا سن کر بہت دکھ ہوا ہے۔”


معروف مصنفہ فاطمہ بھٹو نے بھی افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بلقیس نے پوری زندگی پاکستان کے غریبوں کی خدمت کی اور بڑے جذبے سے دست بردار رہے۔


ایم کیو ایم پی کے سینیٹر فیصل سبزواری نے کہا کہ پاکستانی انہیں ہمیشہ یاد رکھیں گے کیونکہ انہوں نے ان کی مغفرت کی دعا کی تھی۔


سابق وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے لکھا، “بلقیس ایدھی پاکستانی معاشرے کا ہمدرد اور انسان دوست چہرہ تھیں۔”


پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے بھی سماجی کارکن کے انتقال پر دکھ کا اظہار کیا۔


معروف صحافی اور اینکر پرسن حامد میر نے ان کے انتقال پر تعزیت کا اظہار کرتے ہوئے ان کی مغفرت کی دعا کی۔


پی ٹی آئی کے سینیٹر فیصل جاوید خان نے بھی ان کے انتقال پر دکھ کا اظہار کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں