32

سی ای سی کے رویے کے خلاف پی ٹی آئی کا ملک بھر میں ای سی پی دفاتر کے باہر احتجاجی مظاہرہ

پی ٹی آئی رہنما فواد چوہدری نے اتوار کو اعلان کیا کہ پارٹی چیف الیکشن کمشنر (سی ای سی) سکندر سلطان راجہ کے “رویے” کے خلاف ملک بھر میں الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) کے دفاتر کے باہر احتجاج کرے گی۔

ٹوئٹر پر فواد نے کہا کہ آج پی ٹی آئی کی سیاسی کمیٹی کا اجلاس ہوا اور ای سی پی سے متعلق “معاملات” کا جائزہ لیا۔


فواد نے الزام لگایا کہ سی ای سی کے راجہ “غیر جانبداری اور بے ایمانی کی انتہا” پر چلے گئے اور یہ بھی دعویٰ کیا کہ “ایک منصوبہ بندی کے تحت” ای سی پی پارٹی کے منحرف ایم این ایز کو ہٹانے کا نوٹیفکیشن جاری نہیں کر رہا تھا۔

فواد نے کہا کہ اس لیے پی ٹی آئی الیکشن کمشنر کے رویے کے خلاف 26 اپریل بروز منگل کو ملک بھر میں ای سی پی کے دفتر کے باہر احتجاج کرے گی۔

انہوں نے مزید کہا کہ تحریک انصاف کے تمام ضلعی دفاتر کو احتجاج کے حوالے سے ہدایات جاری کر دی گئی ہیں۔

جب سے اسلام آباد ہائی کورٹ نے الیکشن کمیشن کو پی ٹی آئی کے غیر ملکی فنڈنگ ​​کیس کو 30 دن میں نمٹانے کا حکم دیا ہے تب سے پی ٹی آئی ای سی پی پر غیر جانبداری سے کام کرنے کا الزام لگا رہی ہے۔

یہ احکامات 14 اپریل کو جسٹس محسن اختر کیانی نے پی ٹی آئی کی جانب سے دائر درخواستوں پر جاری کیے تھے، جس میں اکبر ایس بابر کی کیس سے علیحدگی، کیس کو خارج کرنے اور پی ٹی آئی کی دستاویزات کو خفیہ رکھنے کا کہا گیا تھا۔

پی ٹی آئی نے درخواست گزار بابر کو غیر ملکی فنڈنگ ​​کیس سے خارج کرنے کی ای سی پی کی درخواستوں کو چیلنج کیا تھا۔ اس نے یہ بھی مطالبہ کیا تھا کہ کیس کا تمام ریکارڈ بشمول اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے ذریعے طلب کی گئی دستاویزات بابر کے ساتھ شیئر نہ کی جائیں جنہوں نے نومبر 2014 میں مقدمہ دائر کیا تھا۔

تاہم، آئی ایچ سی نے فیصلہ دیا کہ ای سی پی کا کردار “اہم نوعیت کا ہے اور اسے کسی بھی طرح سے کم نہیں کیا جا سکتا”۔ اس نے نوٹ کیا کہ یہ ادارہ “پاکستان کے آئین، 1973 کے تحت ایک نگران، ریگولیٹری اور انتظامی ادارہ ہے، جو سیاسی جماعتوں کے معاملات، انتخابات اور اس کے نتائج سے نمٹتا ہے”۔

اس نے یہ بھی نوٹ کیا کہ “ای سی پی پر آرٹیکل 17(3) کے حوالے سے تفویض کردہ ڈیوٹی کے مینڈیٹ تک پہنچنے کے لیے انکوائری، تفتیش، جانچ پڑتال کے کسی بھی عمل کو اپنانے کے لیے کوئی پابندی نہیں لگائی جا سکتی ہے”۔

اگر پارٹی کی کوئی فنڈنگ ​​ممنوعہ ذرائع سے حاصل کی گئی ہے تو اس سے اس کے چیئرمین سمیت ایسی سیاسی جماعت کی حیثیت متاثر ہوگی، اس لیے سچائی کا پتہ لگانا ضروری ہے، سیاسی جماعت ہونے کے ناطے درخواست گزار کا بھی فرض ہے۔ اپنے وقار اور سالمیت کو برقرار رکھنے کے لیے، جس کے پاکستانی معاشرے میں دور رس اثرات مرتب ہوتے ہیں اور اگر کوئی غیر ملکی فنڈنگ ​​قانون اور آئین کے منافی ہے، تو درخواست گزار کو موسیقی کا سامنا کرنا پڑتا ہے،‘‘ فیصلے میں کہا گیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں