42

مریم نواز نے نواز شریف پر الزامات لگانے پر پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان کو تنقید کا نشانہ بنایا

مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے منگل کو اپنی پارٹی کے سخت حریف عمران خان پر طنز کرتے ہوئے کہا کہ پی ٹی آئی کے چیئرمین جو دعویٰ کرتے تھے کہ نواز شریف کی سیاست اور حکومت ختم ہوگئی ہے، اب وہ مسلم لیگ (ن) کے سپریمو پر انہیں ہٹانے کا الزام لگا رہے ہیں۔ لندن میں بیٹھ کر اقتدار سے۔

کل تک کہتے تھے نواز شریف کی حکومت اور سیاست ختم ہوگئی۔ آج وہ کہہ رہے ہیں کہ نواز شریف نے لندن میں بیٹھ کر اپنی حکومت ختم کی،” مریم نے پنجاب کے نو منتخب وزیر اعلیٰ حمزہ شہباز کے ساتھ لاہور میں حلقہ این اے 128 کے ورکرز کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے کہا۔

پی ٹی آئی کی قیادت والی حکومت سے چھٹکارا پانے پر مسلم لیگ ن کے کارکنوں کو مبارکباد دیتے ہوئے مریم نے تباہی کے خلاف لڑنے پر اپنی پارٹی کے حامیوں کی تعریف کی۔

مریم نے سابق وزیر اعظم کو بتایا کہ انہوں نے توشہ خانہ سے جو تحائف لیے اور بیچے وہ ریاست کے تھے، انہوں نے مزید کہا کہ پی ٹی آئی چیئرمین نے تحائف فروخت نہیں کیے بلکہ اس اقدام کے ذریعے “پاکستان کے دوسرے ممالک کے ساتھ تعلقات کو بیچا”۔

مریم نے کہا کہ عمران خان آپ کو جواب دینا پڑے گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ پی ٹی آئی چیئرمین کو سابق وزیراعظم کی اہلیہ کی دوست فرح خان کے ساتھ جوڑنے کے الزامات کا جواب دینا ہوگا۔

مسلم لیگ ن کے رہنما نے کہا کہ عمران خان آپ کو بتانا پڑے گا کہ آپ کی اہلیہ کے فرح خان سے کیا تعلقات تھے۔

مسلم لیگ (ن) کے رہنما نے کارکنوں کو یاد دلایا کہ سابق وزیراعظم دعویٰ کرتے تھے کہ ان کے والد کی سیاست ختم ہوگئی ہے لیکن مسلم لیگ (ن) کے سپریمو امیدوار شہباز شریف وزیراعظم اور حمزہ شہباز وزیراعلیٰ بنے۔

نیازی آپ کو سیاست نہیں آتی، نواز شریف کا مقابلہ کیسے کریں گے؟ مسلم لیگ ن کے رہنما نے سوال کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ پی ٹی آئی چیئرمین کو خدشہ ہے کہ اگر مسلم لیگ (ن) کی حکومت آئی تو ان کے کرپشن کیسز کھل کر سامنے آئیں گے۔

پی ٹی آئی کی جانب سے نئے انتخابات کے مطالبے پر مریم نے کہا کہ ن لیگ انتخابات سے نہیں ڈرتی کیونکہ عوام کی طاقت ان کے ساتھ ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ جو لوگ الیکشن سے ڈرتے ہیں وہی لوگ “دھوکہ دہی” سے گزر جاتے ہیں۔

آدھی رات کو عدالتیں کھولنے سے متعلق پی ٹی آئی چیئرمین کے سوال پر تبصرہ کرتے ہوئے مریم نے کہا کہ عدالتیں اس لیے کھولی گئیں کیونکہ سابق وزیراعظم نے آئین توڑا تھا۔

مریم نواز نے کہا کہ آپ نے وزیراعظم ہاؤس کو بنی گالہ دیکھنا شروع کردیا جس کی وجہ سے عدالتیں کھولی گئیں۔ صدر عارف علوی کو نشانہ بناتے ہوئے مریم نے کہا کہ یہ 220 ملین کا ملک ہے ان کا ڈینٹل کلینک نہیں۔

مریم نے کہا کہ عارف علوی اگر آپ عمران خان کو اتنا سننا چاہتے ہیں تو استعفیٰ دے کر گھر چلے جائیں۔

اپنی طرف سے پنجاب کے نومنتخب وزیراعلیٰ حمزہ شہباز نے کہا کہ ان کی حکومت کسی سے انتقام نہیں لے گی۔

مسلم لیگ (ن) کے رہنما نے پی ٹی آئی چیئرمین سے کہا کہ وہ کسی سازش کے بارے میں “رونا” بند کریں اور انہیں خبردار کیا کہ وہ دھرنا دینے کے بارے میں نہ سوچیں۔

حمزہ کا کہنا تھا کہ ’عمران خان دعویٰ کرتے تھے کہ عثمان بزدار وسیم اکرم پلس ہیں، لیکن نیازی کے دور میں ایک افسر تک چپراسی کی نوکری کے لیے بولی لگائی گئی۔ انہوں نے پی ٹی آئی چیئرمین کو بھی خبردار کیا کہ وہ ہوش میں آئیں اور اداروں کو متنازعہ نہ بنائیں۔

عمران خان آپ نے 126 دن قوم کا وقت ضائع کیا۔ دوبارہ دھرنا دینے کا نہ سوچنا۔‘‘ حمزہ نے کہا۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر پی ٹی آئی چیئرمین نے ایسا کیا تو ان کی سیاست کو سمندر میں پھینک دیا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں