24

فرح خان کے ملازمین نے آمدن سے زائد اثاثہ جات کیس میں نیب کو جواب جمع کرا دیا

سابق خاتون اول بشریٰ بی بی کی قریبی دوست فرح خان (جن کا اصل نام فرحت شہزادی ہے) کے چاروں ملازمین جن کا نام ان کے خلاف آمدن سے زائد اثاثوں کے کیس میں ہے، نے عدالت میں اپنے جوابات جمع کرائے ہیں۔

قومی احتساب بیورو (نیب) لاہور نے فرح خان کے خلاف آمدن سے زائد اثاثہ جات کیس میں ان کے بزنس مینیجر، کیشیئر اور بینکرز سمیت چار ملزمان کو طلب کیا تھا۔

چاروں افراد کو 30 مئی کو متعلقہ ریکارڈ سمیت نیب کے سامنے پیش ہونے کا کہا گیا تھا۔ تاہم، پیر کو انہوں نے اپنے وکیل کے ذریعے اپنے تحریری جوابات جمع کرائے تھے۔

عدالت میں جمع کرائے گئے جواب میں کہا گیا کہ چاروں ملازمین پبلک ہولڈر نہیں تھے، ان میں سے ایک ان کے بچوں کا ٹیوٹر تھا۔ نیب کی جانب سے فرح خان کے ملازمین کو نوٹس جاری کرنے کے فیصلے کو غیر قانونی قرار دیا گیا ہے۔ جواب میں کہا گیا کہ فرح خان کبھی پبلک ہولڈر نہیں رہی۔ نیب پہلے اپنے دائرہ اختیار کے بارے میں فیصلہ کرے پھر نوٹس جاری کرے۔

8 مئی کو، نیب نے فرح خان کے خلاف ان کے معلوم ذرائع آمدن سے زائد اثاثے بنانے اور مبینہ منی لانڈرنگ کے الزامات پر تحقیقات کا آغاز کیا۔ انکوائری کی منظوری گزشتہ ماہ بیورو کے ہیڈ کوارٹر میں ہونے والی میٹنگ میں دی گئی تھی۔

ملاقات کے بعد جاری ہونے والی نیب کی پریس ریلیز کے مطابق، “گزشتہ 3 سالوں کے دوران ان کے اکاؤنٹ میں 847 ملین روپے کا بڑا ٹرن اوور پایا گیا، جو ان کے بیان کردہ اکاؤنٹ پروفائل سے مطابقت نہیں رکھتا۔”

پریس ریلیز میں کہا گیا کہ “فرحت شہزادی (عرف فرح خان) کے انکم ٹیکس گوشواروں کا جائزہ لیتے ہوئے، مبینہ طور پر یہ دیکھا گیا کہ ان کے اثاثوں میں سال 2018 کے بعد سے نامعلوم وجوہات کی بنا پر نمایاں اضافہ ہوا ہے۔”

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں