21

اڈیالہ جیل نے گھنٹوں کے ڈرامے کے بعد شہباز گل کو اسلام آباد پولیس کے حوالے کر دیا

جیو نیوز نے بدھ کو رپورٹ کیا کہ شہباز گل کی تحویل پر اسلام آباد اور راولپنڈی پولیس کے درمیان گرما گرم تعطل کے بعد، اڈیالہ جیل حکام نے پی ٹی آئی رہنما کی تحویل سابق کے حوالے کر دی۔

اسلام آباد پولیس گل کے ساتھ جیل سے نکل گئی کیونکہ پنجاب پولیس کے اہلکار جیل کے احاطے کے باہر گھنٹوں تک جاری رہنے والے ڈرامے کے بعد واپس لوٹ گئے۔ مزید معلوم ہوا کہ گل کو پہلے میڈیکل چیک اپ کے لیے پمز لے جایا جائے گا۔

عدالت کی ہدایت پر گل کو اسلام آباد پولیس کی تحویل میں دے دیا گیا ہے۔ پولیس ذرائع نے بتایا کہ طبی معائنے کے بعد اسے تھانے منتقل کر دیا جائے گا۔

اس سے قبل ذرائع نے جیو نیوز کے پاس دستیاب ’ایمرجنسی شفٹنگ‘ کے عنوان سے ایک دستاویز کا حوالہ دیتے ہوئے کہا تھا کہ گل کے چیک اپ کے بعد اڈیالہ جیل کے ڈاکٹروں اور متعلقہ حکام کو پی ٹی آئی رہنما کو ڈی ایچ کیو اسپتال راولپنڈی منتقل کرنے کی ہدایت کی گئی تھی۔

ہدایت کے بعد اسلام آباد پولیس اور راولپنڈی پولیس گل کو منتقل کرنے کے لیے اڈیالہ جیل پہنچ گئی تھی۔ تاہم، اس نے سابق کے ساتھ جانے سے انکار کر دیا۔ جس سے دونوں قانون نافذ کرنے والے اداروں کے درمیان گھنٹوں ڈرامہ ہوتا رہا۔

ایچ آر سی پی نے تشویش کا اظہار کیا۔
ہیومن رائٹس کمیشن آف پاکستان (ایچ آر سی پی) نے بھی عدالت کی جانب سے گل کو جسمانی ریمانڈ پر بھیجنے کے فیصلے پر تشویش کا اظہار کیا۔

کمیشن نے ٹویٹر پر لکھا کہ “ریمانڈ کے دوران ان کے ساتھ بدسلوکی کی جانے والی کسی بھی قسم کے الزامات کی بھی منصفانہ اور شفاف تحقیقات کی جانی چاہیے۔”


وفاقی اور پنجاب حکومتیں آمنے سامنے

راولپنڈی پولیس گل کو ڈی ایچ کیو ہسپتال منتقل کرنے پر بضد تھی جبکہ اسلام آباد پولیس عدالتی احکامات کے مطابق پی ٹی آئی رہنما کو وفاقی دارالحکومت منتقل کرنے پر اصرار کرتی رہی۔ دلائل کے بعد اسلام آباد پولیس کی اضافی نفری کو جیل طلب کر لیا گیا۔

جیل ذرائع کے مطابق معلوم ہوا ہے کہ گل کو مبینہ تشدد کی وجہ سے سانس لینے میں دشواری اور طبیعت کی خرابی کی شکایت ہوئی تھی جس کے بعد انہیں چیک اپ کے لیے جیل اسپتال منتقل کیا گیا تھا۔

ادھر ذرائع کا کہنا تھا کہ پی ٹی آئی کے چیئرمین عمران خان نے گل کو ایمرجنسی جیسی صورتحال پیدا کرنے کا حکم دیا تھا تاکہ انہیں اسپتال منتقل کیا جاسکے۔

جیل حکام کا کہنا ہے کہ اڈیالہ جیل کے قیدیوں کا ڈی ایچ کیو ہسپتال میں چیک اپ ہوتا ہے کیونکہ اسلام آباد سے آنے والی میڈیکل ٹیم اڈیالہ جیل کے قیدیوں کا چیک اپ نہیں کر سکتی۔

دریں اثناء حالات خراب ہونے کی اطلاعات کے بعد وزارت داخلہ نے عدالتی احکامات پر عملدرآمد کے لیے رینجرز اور ایف سی کو بھی طلب کر لیا تھا۔

فواد چوہدری نے کارکنوں کو تیار رہنے کو کہا
سابق وزیر اطلاعات فواد چوہدری نے اس پیش رفت کو اغوا قرار دیتے ہوئے کہا کہ اپنی مرضی کے بورڈ سے سرٹیفکیٹ لینا قانون کے مطابق نہیں۔

انہوں نے ٹوئٹر پر لکھا کہ ’پاکستان کو اس وقت بدترین فاشزم کا سامنا ہے، کارکن ہر قسم کے حالات کے لیے تیار رہیں۔


اس پیش رفت کے بعد، پی ٹی آئی نے اپنے آفیشل ٹویٹر ہینڈل پر گل کو آکسیجن ماسک کے ساتھ ایمبولینس میں پمز منتقل کیے جانے کی ویڈیو شیئر کی۔

“پاکستان بدترین قسم کی فاشزم سے گزر رہا ہے،” اس نے ویڈیو کے کیپشن میں لکھا۔


مریم نواز نے عمران خان پر قوانین کی خلاف ورزی کا الزام لگایا
وزیراطلاعات مریم اورنگزیب نے پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان پر الزام عائد کیا کہ انہوں نے شہباز گل کی حراست میں عدالتی احکامات کی کھلم کھلا خلاف ورزی کی اور پنجاب کی بیوروکریسی پر غیر ضروری دباؤ ڈالا۔

صحافیوں سے بات کرتے ہوئے وزیر اطلاعات نے کہا کہ پی ٹی آئی چیئرمین نے تمام قوانین کو نظر انداز کیا ہے اور پارٹی گل کو تحقیقات سے بچانے کے لیے ہر حربہ استعمال کر رہی ہے۔

اسلام آباد پولیس تمام الزامات کو مسترد کرتی ہے۔
اسلام آباد پولیس پر لگائے گئے تمام الزامات کو مسترد کرتے ہوئے ترجمان نے کہا کہ گل کو جسمانی ریمانڈ کے دوران کسی قسم کا تشدد کا نشانہ نہیں بنایا گیا۔

ترجمان نے مزید کہا کہ عدالت اور ججز کی ہدایت پر گل کا باقاعدہ میڈیکل چیک اپ کرایا گیا جس سے ثابت ہوتا ہے کہ ان پر تشدد نہیں کیا گیا۔

ترجمان نے مزید کہا کہ عدالت کے احکامات جیل انتظامیہ کو دے دیے گئے ہیں اور اسلام آباد پولیس نے تمام قانونی تقاضے پورے کر لیے ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ حکام عدالت کے احکامات پر عمل کریں گے اور جیل انتظامیہ سے تعاون کی توقع رکھتے ہیں۔

ترجمان نے مزید کہا کہ تفتیشی ٹیم کے سربراہ اور سینئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس ذاتی طور پر اس سارے عمل کی نگرانی کریں گے۔

‘مریم کو پروپیگنڈہ پھیلانے کا کام سونپا گیا’: فرخ حبیب
وزیر اطلاعات کی جانب سے لگائے گئے الزامات پر ردعمل دیتے ہوئے پی ٹی آئی رہنما فرخ حبیب نے دعویٰ کیا کہ مریم نواز کو گمراہ کن پروپیگنڈہ پھیلانے کا کام سونپا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ وہ پہلے اپنی پارٹی کے رہنماؤں پر تبصرہ کریں جنہیں اس وقت عدالتیں طلب کر رہی ہیں، انہوں نے مزید کہا کہ یہ وزیر اعظم شہباز شریف اور ان کے بیٹے حمزہ شہباز ہیں جو عدالتی احکامات کی خلاف ورزی کر رہے ہیں۔

اس بات کو یاد کرتے ہوئے کہ مسلم لیگ (ن) کے دونوں رہنماؤں پر فرد جرم عائد ہونے کے دن ملک پر “مسلط” کیا گیا تھا، انہوں نے سوال کیا: “کیا یہ قانون کی پابندی تھی؟”

انہوں نے ان پر قوانین کی خلاف ورزی کا الزام لگاتے ہوئے کہا کہ مسلم لیگ ن کے سپریمو نواز شریف نے ملک چھوڑنے کے لیے جھوٹ بولا۔

پی ٹی آئی رہنما نے کہا، “خان نے کبھی بھی قوانین کی خلاف ورزی کی حوصلہ افزائی نہیں کی،” انہوں نے مزید کہا کہ یہ ان کا منصوبہ ہے کہ گل کو تشدد کر کے خان کے خلاف بیان دینے پر مجبور کیا جائے۔

عدالت نے گل کو 48 گھنٹے کے لیے پولیس کے حوالے کرنے کا حکم دے دیا۔
اس سے قبل آج اسلام آباد کی ایک ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن عدالت نے غداری کے مقدمے میں گل کے جسمانی ریمانڈ کی درخواست پر اپنے فیصلے میں پی ٹی آئی رہنما کو 48 گھنٹے کے لیے پولیس کی تحویل میں دے دیا۔

عدالت نے گزشتہ روز تمام فریقین کے دلائل مکمل ہونے کے بعد فیصلہ محفوظ کر لیا تھا۔

عمران خان کا پارٹی سربراہ سے متعلق تشویش کا اظہار
پی ٹی آئی چیئرمین نے سیشن عدالت کے فیصلے کی مذمت کرتے ہوئے کہا تھا کہ انہیں گل کو ایک بار پھر پولیس حراست میں بھیجے جانے پر تشویش ہے۔


عمران نے ٹویٹر پر لکھا ، “گل کی ذہنی اور جسمانی صحت کی حالت نازک ہے کیونکہ جب اسے اغوا کیا گیا تھا اور اسے نامعلوم مقام پر لے جایا گیا تھا۔”

مسلہ
گِل کو گزشتہ منگل کی سہ پہر دارالحکومت کے بنی گالا چوک سے ایک نجی ٹی وی چینل پر متنازعہ ریمارکس کرنے کے ایک دن بعد گرفتار کیا گیا تھا۔ اس کے بعد ان پر بغاوت اور ریاستی اداروں کے ارکان کو پاک فوج کے خلاف اکسانے کے الزامات کے تحت مقدمہ درج کیا گیا۔

ان کے خلاف کوہسار پولیس اسٹیشن میں تعزیرات پاکستان کی متعدد دفعات کے تحت غداری کا مقدمہ درج کیا گیا تھا، جس میں 124-A (بغاوت)، 131 (بغاوت پر اکسانا، یا کسی فوجی، ملاح یا ایئر مین کو اپنی ڈیوٹی سے ہٹانے کی کوشش)، 153 شامل ہیں۔ (اگر فساد برپا ہو تو فساد برپا کرنے کے ارادے سے اشتعال انگیزی کرنا؛ اگر ارتکاب نہ کیا جائے)، 153-A (مختلف گروہوں کے درمیان دشمنی کو فروغ دینا وغیرہ) اور 505 (عوامی فساد کو ہوا دینے والے بیانات)، 506 (مجرمانہ دھمکی کی سزا) دوسروں کے درمیان.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں