16

توہین عدالت کیس میں عمران خان کو چھ ماہ قید کی سزا ہو سکتی ہے

سندھ ہائی کورٹ کے سابق چیف جسٹس جسٹس (ریٹائرڈ) شائق عثمانی کا کہنا ہے کہ پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان کو توہین عدالت کیس میں چھ ماہ قید کی سزا ہوسکتی ہے۔

انہوں نے پیر کو جیو نیوز کے پروگرام ‘آج شاہ زیب خانزادہ کے ساتھ’ میں گفتگو کرتے ہوئے کہا، “اگر اس مقدمے میں سزا ہو گئی تو وہ [عمران خان] نااہل ہو جائیں گے اور پانچ سال تک الیکشن نہیں لڑ سکیں گے۔”

“عمران خان کا توہین عدالت کیس دیگر عام توہین عدالت کے مقدمات سے مختلف ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ انہوں نے ایک جج کا نام لیا اور کہا کہ وہ اس کے خلاف کارروائی کریں گے۔”

عثمانی نے کہا کہ اگر عدالت آپ کے خلاف فیصلہ دے تو آپ فیصلے پر تنقید کر سکتے ہیں جج پر نہیں۔ انہوں نے کہا کہ وہ پی ٹی آئی کے چیئرمین کو خطرے میں دیکھ رہے ہیں کیونکہ انہوں نے جوش میں آکر بہت بڑی غلطی کی ہے۔

انہوں نے کہا کہ عمران خان کی معافی شاید انہیں نہیں بچا سکتی۔

اسی کرنٹ افیئر پروگرام میں بات کرتے ہوئے پیپلز پارٹی کے رہنما قمر زمان کائرہ نے وفاقی حکومت سے عمران خان کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ عدلیہ نے ایک جوڈیشل افسر کو دھمکی دینے پر کارروائی کی ہے۔ “کیا آئی جی اور ڈی آئی جی مجسٹریٹ سے کم اہم عہدے ہیں؟” کائرہ نے پوچھا۔

مسلم لیگ (ن) کے رہنما طلال چوہدری نے کہا کہ ایسا تاثر ہے کہ عمران خان صرف لاڈلا نہیں بلکہ ’’لاڈلا پلس‘‘ (اضافی پسندیدہ) ہیں۔

انہوں نے زور دے کر کہا کہ عمران خان کو گرفتار کرنا محض حکومت کی خواہش نہیں بلکہ اس کی ذمہ داری ہے۔

مسلم لیگ ن کے رہنما نے کہا کہ حکومت خان کو جب چاہے گرفتار کر لے گی۔

عمران خان کے خلاف اے ٹی اے کے تحت مقدمہ درج
وفاقی دارالحکومت کے ایف نائن پارک میں ریلی کے دوران اسلام آباد پولیس کے ایڈیشنل سیشن جج اور سینئر پولیس افسران کو دھمکیاں دینے پر عمران خان کے خلاف انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت مقدمہ درج کر لیا گیا۔

ایف آئی آر اسلام آباد کے مارگلہ تھانے میں مجسٹریٹ علی جاوید کی شکایت پر اے ٹی اے کی دفعہ 7 کے تحت درج کی گئی۔

ایف آئی آر میں کہا گیا ہے کہ پی ٹی آئی چیئرمین نے ایڈیشنل سیشن جج زیبا چوہدری اور پولیس افسران کو پولیس حکام اور عدلیہ کو “دہشت گردی” کرنے کی دھمکی دی۔ ایف آئی آر میں کہا گیا ہے کہ دھمکی کا بنیادی مقصد پولیس افسران اور عدلیہ کو اپنی قانونی ذمہ داریوں کو نبھانے سے روکنا تھا۔

ایف آئی آر میں کہا گیا ہے کہ عمران خان کی تقریر کا مقصد عوام میں بدامنی اور دہشت پھیلانا تھا۔

عمران خان نے کیا کہا؟
F-9 پارک میں ایک عوامی اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے، عمران خان نے خبردار کیا کہ وہ اسلام آباد کے انسپکٹر جنرل، ڈپٹی انسپکٹر جنرل، اور خاتون مجسٹریٹ کو “نہیں چھوڑیں گے”، اور شہباز گل پر تشدد کرنے پر ان کے خلاف مقدمات درج کرنے کے عزم کا اظہار کیا۔

انہوں نے کہا کہ ہم آئی جی اور ڈی آئی جی کو نہیں چھوڑیں گے۔ سابق وزیراعظم نے ایڈیشنل ڈسٹرکٹ اینڈ سیشن جج زیبا چوہدری کو بلایا جنہوں نے گزشتہ ہفتے کیپٹل پولیس کی درخواست پر گل کا دو روزہ جسمانی ریمانڈ منظور کیا تھا اور کہا کہ وہ بھی خود کو تیار کریں کیونکہ ان کے خلاف بھی مقدمہ درج کیا جائے گا۔ اس کا

پی ٹی آئی کے چیئرمین نے یہ ریمارکس اسلام آباد میں زیرو پوائنٹ سے F-9 پارک تک جیل میں قید رہنما شہباز گل کی حمایت میں ایک ریلی کی قیادت کرتے ہوئے دیے، جنہیں پارٹی کا کہنا تھا کہ پولیس کی حراست میں مبینہ طور پر “بہیمانہ تشدد” کا نشانہ بنایا گیا۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ گل کے خلاف مقدمہ درج ہوا تو فضل الرحمان، نواز شریف اور رانا ثناء اللہ کو بھی عدالتی کارروائی کا سامنا کرنا پڑے گا۔

انہوں نے کہا، “وہ [اتحادی حکومت] ہمیں گل پر تشدد کر کے ڈرانے کی کوشش کر رہے ہیں،” انہوں نے مزید کہا کہ یہ ملک کے لوگوں کے لیے “فیصلہ کن لمحہ” ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں