38

لانگ مارچ کے دوران عمران خان کے کنٹینر تلے کچل کر خاتون صحافی کو قتل کر دیا گیا

ایک خاتون صحافی صدف نعیم کو پارٹی کے لانگ مارچ کے دوران پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے چیئرمین عمران خان کے کنٹینر سے گرنے کے بعد کچل کر ہلاک کر دیا گیا۔

صحافی ایک مقامی ٹیلی ویژن چینل، چینل 5 سے وابستہ تھیں۔ وہ پی ٹی آئی کے لانگ مارچ کی کوریج کر رہی تھیں جو پچھلے تین دنوں سے پنجاب کے گرد گھوم رہا تھا۔

عینی شاہدین کا کہنا تھا کہ نعیم پارٹی کے سربراہ عمران سمیت پی ٹی آئی کے سینئر رہنماؤں کا انٹرویو کرنے کے لیے کنٹینر پر سوار ہوا تھا۔

جب وہ ہجوم سے بھرے کنٹینر کے اوپر پارٹی سربراہ تک پہنچنے کے لیے جھٹک رہی تھی، مبینہ طور پر وہ اپنا توازن کھو بیٹھی اور گر گئی۔

شام کے دوپہر میں ٹرک کی طرف سے اٹھائی گئی دھول اور بھیڑ میں کھو کر وہ کنٹینر کے پہیوں سے نیچے غائب ہو گئی اور کچل کر ہلاک ہو گئی۔

پی ٹی آئی کے سربراہ کے کنٹینر کے ساتھ ساتھ چلنے والے رضاکاروں اور حامیوں نے دیکھا کہ کیا ہوا، وہ قافلے کو روکنے اور منیر کو ٹرک کے پہیوں سے نکالنے کے لیے دوڑے۔

پی ٹی آئی کے سربراہ عمران خان بھی کنٹینر سے اترے تاکہ ذاتی طور پر معلوم کیا جا سکے کہ کیا ہوا ہے۔

اس کے بعد اس کی لاش کو تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال (ٹی ایچ کیو) کاموکے پہنچایا گیا جہاں پہنچنے پر ڈاکٹروں نے اسے مردہ قرار دے دیا۔

مذمت
رپورٹر کی موت کی خبر آن لائن پھیلنے کے فوراً بعد مذمتوں کا سلسلہ شروع ہو گیا۔

وزیر اعظم شہباز شریف کا کہنا ہے کہ مجھے اس خبر سے بہت دکھ ہوا ہے۔

انہوں نے کہا کہ رپورٹر ایک محنتی تھی اور اس نے ان کے اہل خانہ کے ساتھ ہمدردی اور تعزیت کا اظہار کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں