53

مہنگائی کئی دہائیوں کی بلند ترین سطح پر پہنچنے کے بعد شیخ رشید نے ‘مارچ مارنے’ کا انتباہ دیا

عوامی مسلم لیگ (اے ایم ایل) کے صدر اور سابق وزیر داخلہ شیخ رشید احمد نے اتوار کو “مہنگائی کے احتجاج کے بجائے زبردست مارچ” کا انتباہ دیتے ہوئے افسوس کا اظہار کیا کہ حکومت کا بازاروں پر کوئی کنٹرول نہیں ہے کیونکہ انڈوں جیسی بنیادی چیزوں کی قیمتیں، دودھ کی مصنوعات اور گندم میں اضافہ۔

ایک ٹویٹ میں، انہوں نے کہا کہ لوگ یا تو بھوک سے مر رہے ہیں یا اس سال بھوک کا سامنا کرنا پڑے گا، انہوں نے دعویٰ کیا کہ 2023 میں بھوک سے پہلی موت سندھ کے شہر میرپور خاص میں ہوئی تھی۔

دو وقت کا کھانا مانگنے والی پہلی شہادت میرپور خاص میں ہوئی ہے۔ اب مہنگائی کے بجائے [حکومت کے خلاف] ایک زبردست مارچ ہو سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ زرمبادلہ کے ذخائر کم ہو کر 4.5 بلین ڈالر رہ گئے ہیں، جو تین ہفتوں کی درآمدات سے بھی کم ہیں۔


پاکستان کے زرمبادلہ کے ذخائر بمشکل ایک ماہ کی درآمدات کو پورا کر پاتے ہیں، جن میں سے زیادہ تر بیرون ملک سے توانائی کی خریداریوں کی وجہ سے ہوتے ہیں، جس میں بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (IMF) کے پروگرام کے تحت متوقع فنڈز میں تاخیر ہوئی ہے۔

سابق وزیر نے کہا کہ ہمیں نو ماہ کی تباہی اور ڈیفالٹ سے بچنے کے لیے ایک نقشے کی ضرورت ہے۔

وفاقی حکومت پر طنز کرتے ہوئے احمد نے کہا کہ 76 رکنی کابینہ عوام کو آٹے کی ایک بوری تک فراہم کرنے میں ناکام رہی ہے۔

انہوں نے 100 دن میں الیکشن شیڈول کا اعلان نہ کرنے کی صورت میں تباہی کا انتباہ بھی دیا۔

پاکستان بھر میں سبزیوں اور پھلوں کی قیمتیں بڑھ گئی ہیں کیونکہ تباہ کن بارشوں نے فصلوں کو تباہ کر دیا ہے اور رسد میں خلل پڑ رہا ہے، یہ اس بات کی علامت ہے کہ کس طرح مالیاتی بحران کے وقت دہائیوں میں بدترین سیلاب خوراک کی قلت پیدا کر رہا ہے۔

عوام کے ارکان سیلاب سے پہلے ہی مہنگائی کا سامنا کر رہے تھے اور معیشت بدحالی کا شکار ہے، تیزی سے کم ہوتے غیر ملکی ذخائر اور ڈالر کے مقابلے روپے کی ریکارڈ گراوٹ۔

پاکستان ملکی اور بین الاقوامی منڈیوں میں ڈیفالٹ کے خدشات کو دور کرنے کے لیے بھی جدوجہد کر رہا ہے، IMF کی 1.1 بلین ڈالر کی بیل آؤٹ قسط نویں پروگرام کے جائزے پر اختلافات کی وجہ سے پھنس گئی، جسے نومبر میں مکمل ہونا چاہیے تھا۔

دیگر اہم کثیر الجہتی اور دو طرفہ مالیاتی راستے بھی IMF پروگرام سے منسلک ہیں، جس کا مطلب ہے کہ قوم کو جون 2023 تک 30 بلین ڈالر سے زیادہ کی بیرونی مالیاتی ضروریات کو پورا کرنے کے لیے سخت دباؤ ہے، بشمول قرض کی ادائیگی اور توانائی کی درآمدات۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں