54

پی ایم ایل (ن) کے ‘نمبر گیم’ کے دعووں کے درمیان PA بدستور افراتفری کا شکار ہے

منگل کو وزیراعظم کے معاون خصوصی عطاء تارڑ نے دعویٰ کیا کہ پنجاب اسمبلی میں ان کے نمبرز مکمل ہو چکے ہیں۔

میڈیا سے بات کرتے ہوئے عطاء تارڑ نے کہا کہ پیر کو ان کے 177 ارکان اسمبلی میں موجود تھے جبکہ پنجاب حکومت کے ارکان کی تعداد 140 تھی۔ میں مکمل کام کے بعد نمبر بتا رہا ہوں اور مجھے یقین ہے کہ ہماری تعداد پوری ہو جائے گی۔ پرویز الٰہی کے نمبر پورے نہیں ہوں گے کیونکہ خواتین امیدوار بھی یہ کہہ رہی ہیں کہ وہ پرویز الٰہی کو ووٹ نہیں دینا چاہتیں۔

مسٹر تارڑ نے مزید کہا کہ پرویز الٰہی اعتماد کا ووٹ لینے سے گریزاں تھے اور حکومت مونس الٰہی کے ساتھ بھاگ گئی تھی۔ جلد یا بدیر اعتماد کا ووٹ لینا پڑے گا کیونکہ وزیر اعلیٰ کی کرسی پر ایک کھوکھلا شخص بیٹھا ہے۔

انہوں نے مزید دعویٰ کیا کہ وفاقی وزرا پنجاب اسمبلی میں داخل نہیں ہوسکے۔ پنجاب اسمبلی گجرات کی ضلعی کونسل نہیں ہے اور ایسا نہیں ہونے دیا جائے گا۔ پی ٹی آئی اور اس کے اتحادی اس بات پر لڑ رہے ہیں کہ کس نے زیادہ کرپشن کی۔ اس سے قبل معاون خصوصی کو پنجاب اسمبلی میں داخلے سے روک دیا گیا تھا۔

دریں اثناء پنجاب اسمبلی میں منگل کو دوسرے روز بھی صورتحال ہنگامہ خیز رہی، اپوزیشن ارکان اسمبلی نے وزیراعلیٰ پرویز الٰہی کے خلاف نعرے بازی کی۔

اجلاس کے آغاز سے قبل اسمبلی کے دروازے بند کر دیے گئے تھے اور کل کے اجلاس میں ہنگامہ آرائی کے بعد سکیورٹی گارڈز ہائی الرٹ رہے کیونکہ اپوزیشن نے وزیراعلیٰ الٰہی کو چیلنج کیا کہ وہ یہ ثابت کریں کہ ان کے پاس اعتماد کا ووٹ حاصل کرنے کے لیے مطلوبہ تعداد موجود ہے۔

تاہم، مسلم لیگ (ن) کے قانون ساز – جنہوں نے الٰہی اور پی اے کے اسپیکر سبطین خان پر پولیس کو ان کے داخلے پر پابندی عائد کرنے کی ہدایت کرنے کا الزام لگایا – وہ زبردستی اندر جانے میں کامیاب ہوگئے۔

تین گھنٹے کی تاخیر کے بعد شروع ہونے والے اجلاس کے دوران اپوزیشن قانون سازوں نے ایک بار پھر الٰہی کے خلاف نعرے لگائے اور انہیں ’’ڈاکو‘‘ (ڈاکو) قرار دیا جب وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ اور مسلم لیگ (ن) کے رہنما عطاء تارڑ مہمانوں کی گیلری سے دیکھ رہے تھے۔

مسلم لیگ (ن) کے مشہود نے اسمبلی کے فلور پر اظہار خیال کرتے ہوئے ایک بار پھر الٰہی کو چیلنج کیا کہ وہ ثابت کریں کہ ان کے پاس اعتماد کا ووٹ حاصل کرنے کے لیے مطلوبہ نمبر ہیں۔

بعد ازاں پی اے کا اجلاس کل (بدھ) سہ پہر تین بجے تک ملتوی کر دیا گیا۔

پی ٹی آئی مسلم لیگ ق کے اتحاد کو 188 ایم پی ایز کی حمایت حاصل ہے

دوسری جانب پی ٹی آئی کے نائب صدر فواد چوہدری نے کہا کہ پنجاب حکومت کو 188 قانون سازوں کی حمایت حاصل ہے اور اس نے پیر کے اجلاس میں 21 بل منظور کر کے اکثریت ثابت کر دی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ بلوں کی منظوری بھی وزیراعلیٰ الٰہی پر ’’اعتماد کا اظہار‘‘ ہے۔

پی ٹی آئی رہنما نے کہا کہ حکومت کو وزیراعلیٰ کے اعتماد کے ووٹ کے لیے مطلوبہ حمایت حاصل ہے اور وہ بدھ (آج) کو لاہور ہائی کورٹ کے فیصلے کے بعد اپنے لائحہ عمل کا اعلان کرے گی۔ ہم پنجاب اور کے پی اسمبلیوں کو تحلیل کرکے جلد از جلد آگے بڑھنا چاہتے ہیں۔

چوہدری نے الزام لگایا کہ مظفر گڑھ کے ایم پی اے نے عمران کو بتایا تھا کہ انہیں “نامعلوم نمبروں” سے کالز موصول ہو رہی ہیں اور رشوت کی پیشکش کی جا رہی ہے۔

چیف آف آرمی سٹاف جنرل عاصم منیر کو مخاطب کرتے ہوئے چوہدری نے کہا کہ ایسے معاملات کی تحقیقات ضروری ہے۔

مسلم لیگ ن کے ایم پی اے زبردستی پنجاب اسمبلی میں داخل ہو گئے۔

وزیر داخلہ رانا ثناء اللہ نے وزیراعلیٰ پرویز الٰہی اور پنجاب اسمبلی کے سپیکر سبطین خان پر پولیس کو اپوزیشن ارکان کے اسمبلی میں داخلے کے خلاف ہدایت دینے کے الزام کے بعد منگل کو مسلم لیگ (ن) کے ارکان پنجاب اسمبلی کے اندر جانے پر مجبور ہو گئے۔

کل کے اجلاس میں ہنگامہ آرائی کے بعد اسمبلی کے دروازے بند کر دیے گئے اور سکیورٹی گارڈز ہائی الرٹ رہے کیونکہ اپوزیشن نے وزیراعلیٰ الٰہی کو چیلنج کیا کہ وہ یہ ثابت کریں کہ ان کے پاس اعتماد کا ووٹ حاصل کرنے کے لیے مطلوبہ تعداد موجود ہے۔

منگل کو اسمبلی کے باہر فوٹیج میں شیخوپورہ سے مسلم لیگ (ن) کے ایم پی اے پیر محمد اشرف رسول اور میاں عبدالرؤف کو پولیس سے جھڑپ کرتے ہوئے دکھایا گیا۔ رسول کو ایک پولیس والے کو دھکیلتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے اور ان پر لعنت بھیجتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے جب وہ مین گیٹ کے اندر جاتے ہیں۔ “پیچھے ہٹو۔ یہ بکواس بند کرو۔‘‘ ایک مشتعل رسول کو یہ کہتے ہوئے سنا جا سکتا ہے۔

تصادم کے بعد اپوزیشن ارکان بشمول خلیل طاہر سندھو اور ذیشان رفیق پی اے گیٹ کھول کر احاطے میں داخل ہوگئے۔ دریں اثناء رینجرز اہلکار وزیراعظم کے معاون خصوصی عطاء اللہ تارڑ کے ہمراہ اسمبلی کے اندر موجود تھے۔

انہوں نے ایوان کے باہر صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ آج کہا گیا کہ وفاقی وزراء پی اے میں داخل نہیں ہو سکیں گے اور ان کے داخلے پر پابندی ہے۔ ’’میں نے ان سے کہا کہ ان کے باپ بھی مجھے [اسمبلی] میں داخل ہونے سے نہیں روک سکتے۔ اس سے قبل ثناء اللہ نے بھی ایسا ہی دعویٰ کرتے ہوئے کہا تھا کہ الٰہی نے اپوزیشن کے قانون سازوں کے ایوان میں داخلے پر پابندی لگا دی تھی۔

سلیمان نے ترین سے ملاقات کی۔

وزیراعظم شہباز شریف کے صاحبزادے سلیمان شہباز نے منگل کو لاہور میں جہانگیر ترین اور عون چوہدری سے ملاقات کی۔ ملاقات میں سلیمان شہباز نے پی ٹی آئی کے منحرف رہنماؤں جہانگیر ترین اور عون چوہدری سے ملک کی مجموعی سیاسی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا۔ مستقبل کی سیاسی حکمت عملی سے متعلق امور بھی زیر بحث آئے۔ سلیمان شہباز نے سینئر پی او کو وزیراعظم کا ’اہم‘ پیغام بھی دیا۔


پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سابق رکن اسمبلی علیم خان نے نئی سیاسی جماعت بنانے یا اس میں شمولیت کی خبروں کو مسترد کردیا۔ ایک بیان میں پی ٹی آئی کے سابق رہنما، جنہیں گزشتہ سال رکن اسمبلی کی حیثیت سے نااہل قرار دیا گیا تھا، نے کہا کہ ان کے جہانگیر ترین اور چوہدری سرور سے اچھے تعلقات ہیں لیکن فی الحال وہ صرف اپنے فلاحی منصوبے پر مرکوز ہیں اور ان کا کسی پارٹی میں شمولیت کا کوئی ارادہ نہیں ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں