170

پاکستان نے اسرائیل فلسطین تنازع میں فوری جنگ بندی کا مطالبہ کیا ہے

پاکستان کے دفتر خارجہ نے ایک بیان جاری کیا ہے جس میں مشرق وسطیٰ میں اسرائیل اور فلسطینیوں کے درمیان مخاصمت میں حالیہ اضافے پر گہری تشویش کا اظہار کیا گیا ہے۔

ہفتہ کو جاری ہونے والے بیان میں جنگ بندی اور پرامن مذاکرات کی طرف واپسی کی فوری ضرورت پر زور دیا گیا ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ “ہم مشرق وسطیٰ میں ابھرتی ہوئی صورتحال اور اسرائیل اور فلسطینیوں کے درمیان مخاصمت کے بھڑکنے پر گہری نظر رکھے ہوئے ہیں۔ ہمیں بڑھتی ہوئی صورت حال کی انسانی قیمت پر تشویش ہے۔”

اسرائیل فلسطین تنازعہ پر پاکستان کا موقف مستقل رہا ہے، خطے میں پائیدار امن کی کلید کے طور پر دو ریاستی حل کی وکالت کرتا ہے۔ دفتر خارجہ نے بین الاقوامی قانون میں اور متعلقہ اقوام متحدہ اور او آئی سی (اسلامی تعاون تنظیم) کی قراردادوں کے مطابق مسئلہ فلسطین کے منصفانہ، جامع اور دیرپا حل کی اہمیت پر زور دیا۔

پاکستان کا مؤقف ہے کہ 1967 سے پہلے کی سرحدوں کی بنیاد پر ایک قابل عمل، خودمختار اور ملحقہ ریاست فلسطین قائم کی جائے، جس کا دارالحکومت القدس الشریف (یروشلم) ہو۔ یہ موقف طویل عرصے سے جاری تنازع کا پرامن حل تلاش کرنے کے لیے بین الاقوامی برادری کی کوششوں سے ہم آہنگ ہے۔

بیان میں مزید کہا گیا ہے کہ عالمی برادری دشمنی کے خاتمے، شہریوں کے تحفظ اور مشرق وسطیٰ میں دیرپا امن کے حصول کی حمایت کے لیے اکٹھے ہو۔ فوری کارروائی کا مطالبہ اسرائیل فلسطین تنازعہ کے پرامن حل کے لیے پاکستان کے عزم کی عکاسی کرتا ہے۔

یہ بیان اس وقت سامنے آیا جب زمینی صورتحال نے ڈرامائی موڑ اختیار کر لیا، اسرائیل پر حماس کے مزاحمتی جنگجوؤں کے ایک بے مثال کثیر محاذی حملے کی اطلاعات ہیں۔ حماس کے جنگجوؤں کی طرف سے اسرائیلی علاقے میں ہزاروں راکٹ داغے جانے کے نتیجے میں کم از کم 40 اسرائیلی ہلاک ہو گئے۔ یہ حملہ ہفتہ کو دن کے وقت ہوا، جس نے ملک کو ایک بڑی تعطیل کے موقع پر آف گارڈ پکڑ لیا۔

اطلاعات کے مطابق حماس کے جنگجوؤں نے فضائی، زمینی اور سمندری راستوں کو استعمال کرتے ہوئے کئی مقامات پر بھاری قلعہ بند سرحد پر دراندازی کی ہے۔ اس مربوط حملے نے جاری تنازعہ میں ایک نئی جہت کا اضافہ کیا ہے، جس سے مزید تشدد اور ہلاکتوں کے امکانات کے بارے میں خدشات بڑھ گئے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں