45

فیس بک ، ٹوئٹر اور لنکڈ ان افغان صارفین کے اکاؤنٹس کو طالبان کے قبضے میں محفوظ رکھتے ہیں

فیس بک ، ٹوئٹر اور لنکڈ ان نے اس ہفتے کہا کہ وہ افغان شہریوں کے اکاؤنٹس کو محفوظ بنانے کے لیے منتقل ہوئے ہیں تاکہ انہیں طالبان کے ملک پر قبضے کے دوران نشانہ بنانے سے بچایا جا سکے۔

فیس بک نے عارضی طور پر لوگوں کے افغانستان میں اکاؤنٹس کی فرینڈ لسٹ دیکھنے یا تلاش کرنے کی صلاحیت ختم کر دی ہے

گلیشر نے یہ بھی کہا کہ کمپنی نے افغانستان میں صارفین کے لیے اپنے اکاؤنٹس کو لاک کرنے کے لیے ’’ ایک کلک کا آلہ ‘‘ لانچ کیا ہے ، اس لیے جو لوگ ان کے فیس بک دوست نہیں ہیں وہ اپنی ٹائم لائن پوسٹس دیکھنے یا اپنی پروفائل فوٹو شیئر کرنے سے قاصر ہوں گے۔

انسانی حقوق کے گروپوں نے خدشات کا اظہار کیا ہے کہ طالبان افغانوں کی ڈیجیٹل ہسٹری یا سماجی روابط کو ٹریک کرنے کے لیے آن لائن پلیٹ فارم استعمال کرسکتے ہیں۔ ایمنسٹی انٹرنیشنل نے رواں ہفتے کہا تھا کہ ہزاروں افغان ، بشمول ماہرین تعلیم ، صحافی اور انسانی حقوق کے محافظ ، طالبان کے جوابی حملے کے شدید خطرے میں ہیں۔

افغان ویمن فٹ بال ٹیم کی سابق کپتان نے کھلاڑیوں پر زور دیا ہے کہ وہ سوشل میڈیا کو ڈیلیٹ کریں اور ان کی عوامی شناخت مٹا دیں۔

ٹویٹر انک نے کہا کہ وہ سول سوسائٹی کے شراکت داروں کے ساتھ رابطے میں ہے تاکہ ملک میں گروپوں کو مدد فراہم کی جا سکے اور انٹرنیٹ آرکائیو کے ساتھ کام کر رہا ہے تاکہ آرکائیوڈ ٹویٹس کو ہٹانے کے لیے براہ راست درخواستوں کو تیز کیا جا سکے۔

اس میں کہا گیا ہے کہ اگر افراد ایسی معلومات والے اکاؤنٹس تک رسائی حاصل کرنے سے قاصر ہیں جو انہیں خطرے میں ڈال سکتے ہیں ، جیسے براہ راست پیغامات یا پیروکار ، کمپنی عارضی طور پر ان اکاؤنٹس کو معطل کر سکتی ہے جب تک کہ صارفین دوبارہ رسائی حاصل نہ کر لیں اور ان کا مواد حذف نہ کر سکیں۔

ٹوئٹر نے یہ بھی کہا کہ وہ سرکاری اداروں سے وابستہ اکاؤنٹس کو فعال طور پر مانیٹر کر رہا ہے اور ان کی شناخت کی تصدیق کے لیے اضافی معلومات زیر التوا اکاؤنٹس کو عارضی طور پر معطل کر سکتا ہے۔

لنکڈ ان کے ترجمان نے کہا کہ مائیکروسافٹ کی ملکیت والی پروفیشنل نیٹ ورکنگ سائٹ نے افغانستان میں اپنے صارفین کے کنکشن عارضی طور پر چھپائے ہیں تاکہ دوسرے صارفین انہیں نہ دیکھ سکیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں