28

بجلی کی قیمت میں 5 روپے فی یونٹ اضافہ

ایک ماہ تک بجلی کی قیمت میں 5 روپے فی یونٹ کا اضافہ متوقع ہے، کیونکہ سینٹرل پاور پرچیزنگ ایجنسی (سی پی پی اے) نے اس حوالے سے نیشنل الیکٹرک پاور ریگولیٹری اتھارٹی (نیپرا) کو باضابطہ درخواست جمع کرادی ہے۔

قیمتوں میں اضافے کی درخواست فروری کی ماہانہ فیول ایڈجسٹمنٹ کی مد میں کی گئی ہے، جس کے لیے نیپرا 28 مارچ کو سماعت کرے گا۔ منظوری کی صورت میں بجلی کے اپ ڈیٹ کردہ ٹیرف سے صارفین پر بڑا مالی بوجھ پڑے گا، جس کا تخمینہ حد سے زیادہ ہو جائے گا۔ 40 ارب روپے۔

سی پی پی اے کے اعداد و شمار کے مطابق، فروری میں 6.876 بلین یونٹ بجلی فروخت کی گئی، جس میں توانائی کے مختلف ذرائع سے مختلف شراکت تھی۔

سی پی پی اے کی درخواست فروری کے دوران بجلی کی پیداوار کی ساخت کی تفصیلات ظاہر کرتی ہے۔ بجلی کا ایک بڑا حصہ، تقریباً 24.77%، پانی کے ذرائع سے پیدا کیا گیا، جو پاکستان کے توانائی کے مرکب میں پن بجلی کی اہمیت کو اجاگر کرتا ہے۔ مزید برآں، مقامی کوئلے نے بجلی کی پیداوار میں 13.94 فیصد حصہ ڈالا، جب کہ درآمدی کوئلے کا حصہ 1.89 فیصد ہے۔

مزید برآں، مقامی گیس اور درآمد شدہ مائع قدرتی گیس (ایل این جی) کا بالترتیب 11.04% اور 20.33% بجلی کی پیداوار ہے۔ فروری میں بجلی کی مجموعی پیداوار میں جوہری ایندھن کا 23.29 فیصد حصہ رہا۔

17 مارچ کو سوئی سدرن گیس کمپنی (ایس ایس جی سی) نے بھی آئل اینڈ گیس ریگولیٹری اتھارٹی (اوگرا) کو ایک درخواست جمع کرائی تھی جس میں یکم جولائی سے گیس کی قیمتوں میں خاطر خواہ اضافے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔

تجویز کے مطابق، ایس ایس جی سی نے اوگرا پر زور دیا کہ وہ گیس کی قیمتوں میں 324 روپے فی ملین برٹش تھرمل یونٹ (ایم ایم بی ٹی یو) اضافہ کرے، جس کا مقصد نئی اوسط قیمت 1740.80 روپے فی ایم ایم بی ٹی یو مقرر کرنا ہے۔ اگر یہ اضافہ منظور ہو گیا تو ملک بھر کے گیس صارفین پر 79.63 ارب روپے کا زبردست بوجھ پڑے گا۔

درخواست کے پیچھے مالی استدلال کو اجاگر کرتے ہوئے، ایس ایس جی سی نے آئندہ مالی سال کے لیے 79.63 بلین روپے کی متوقع آمدنی کی کمی کی نشاندہی کی ہے۔

اس خسارے میں سے 56.69 بلین روپے مقامی گیس کی فروخت سے منسوب ہیں، جبکہ 22 ارب روپے ری گیسیفائیڈ لیکویفائیڈ نیچرل گیس (آر ایل این جی) کے لین دین سے منسلک ہیں۔ مزید برآں، تزئین و آرائش میں 935 ملین روپے کی کمی کا تخمینہ لگایا گیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں