12

انٹرا ڈے چالوں میں امریکی ڈالر کے مقابلے روپے کی قدر بڑھ گئی

پاکستانی روپے نے بین بینک مارکیٹ میں امریکی ڈالر کے مقابلے میں لچک کا مظاہرہ کیا، جس نے منگل کو ابتدائی تجارتی اوقات میں 0.07 فیصد کا نمایاں اضافہ کیا۔

اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) نے رپورٹ کیا کہ گرین بیک کے مقابلے میں روپیہ 278.25 تک مضبوط ہوا، جو 15 روپے کے اضافے کی عکاسی کرتا ہے۔ یہ مثبت رفتار پیر کے بند ہونے کے بعد ہے جہاں روپیہ 278.40 پر طے ہوا، حالانکہ Re0.01 سے معمولی کم ہے۔

اس کرنسی کو فروغ دینے میں ایک اہم پیشرفت بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (IMF) کے پاکستان کے اقتصادی اصلاحاتی پروگرام کے اپنے حتمی جائزے کی تکمیل سے ہوتی ہے۔

آئی ایم ایف نے، 3 بلین ڈالر کے اسٹینڈ بائی ارینجمنٹ (SBA) کے ذریعے اپنی حمایت بڑھاتے ہوئے، 1.1 بلین ڈالر کی فوری تقسیم کی اجازت دی۔ یہ فیصلہ پاکستان کی اقتصادی رفتار پر عالمی اعتماد کی نشاندہی کرتا ہے، خاص طور پر جب ملک استحکام کے اقدامات کے ذریعے سفر جاری رکھے ہوئے ہے۔

مزید برآں، پاکستان کی مانیٹری پالیسی میں استحکام، جیسا کہ SBP کی مانیٹری پالیسی کمیٹی (MPC) نے تصدیق کی ہے، نے سرمایہ کاروں کے اعتماد کو بڑھانے میں اہم کردار ادا کیا ہے۔ مسلسل ساتویں میٹنگ میں کلیدی شرح سود 22 فیصد پر برقرار رہی۔

یہ فیصلہ میکرو اکنامک استحکام کو برقرار رکھنے کے لیے ایک اسٹریٹجک اقدام کی عکاسی کرتا ہے، جس کے نتیجے میں افراط زر میں بہتری اور معتدل معاشی بحالی کے درمیان بیرونی پوزیشن کو فروغ ملتا ہے۔

بین الاقوامی سطح پر، مارکیٹ کی حرکیات نے کرنسی کی نقل و حرکت کو بھی متاثر کیا، خاص طور پر امریکی ڈالر کے مقابلے چین کے یوآن میں اتار چڑھاؤ۔ دریں اثنا، فیڈرل ریزرو کی مانیٹری پالیسی میٹنگ اور چین کی ماہ کے آخر میں ہونے والی پولیٹ بیورو کی میٹنگ کے بارے میں توقعات بڑھ رہی ہیں، جس میں تاجر مستقبل کے کرنسی کے رجحانات کے بارے میں بصیرت کا قریب سے مشاہدہ کر رہے ہیں۔

اس کے متوازی طور پر، اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ بندی کے مذاکرات میں مثبت پیش رفت کے بعد تیل کی قیمتوں میں معمولی کمی واقع ہوئی، جس سے مشرق وسطیٰ میں بڑھتے ہوئے تنازعے کے خدشات دور ہوئے۔

تاہم، امریکی شرح سود کے بارے میں خدشات مارکیٹ پر دباؤ ڈالتے رہتے ہیں، جو تیل کی قیمتوں کی رفتار کو متاثر کرتے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں