45

رمضان المبارک کے دوران بازاروں کو آدھی رات تک کھلا رکھنے کی اجازت دی گئی

لاہور ہائی کورٹ نے صوبے بھر کی مارکیٹیں اور بازار رمضان المبارک میں آدھی رات تک اور ویک اینڈ پر صبح ایک بجے تک کھلے رکھنے کی اجازت دے دی۔

یہ فیصلے مقدس مہینے کے دوران عوام کی ضروریات کو پورا کرنے کی کوششوں کے ایک حصے کے طور پر آتے ہیں، جبکہ اختتام ہفتہ پر خریداری اور تفریح کے لیے اضافی وقت بھی فراہم کرتے ہیں۔

یہ ہدایات جسٹس شاہد کریم نے سموگ کیس کی سماعت کے دوران جاری کیں۔ سماعت کے دوران عدالت نے ریسٹورنٹس میں پارکنگ کے حوالے سے بھی تحفظات کا اظہار کیا اور سہولیات کے حوالے سے لائحہ عمل طلب کرلیا۔

عدالتی کمیشن کے ایک رکن نے کہا، “ریستورانوں میں پارکنگ کی کم جگہ اور کھانے کے بڑے ہال ہوتے ہیں۔”

مزید برآں، عدالت نے ریسٹورنٹ مالکان کی جانب سے عدالتی کمیشن کے عملے کے ساتھ بدتمیزی کے رپورٹ ہونے والے واقعات کا بھی نوٹس لیا، تعاون اور باہمی احترام کی ضرورت پر زور دیا۔ عدالت نے فوری طور پر مالک کو ہدایت کی کہ اس کی نشاندہی کی جائے اور اس کے رویے سے آگاہ کیا جائے۔

جسٹس کریم نے متعلقہ ریسٹورنٹ کے مالک کو آئندہ سماعت پر عدالت میں پیش ہونے کی ہدایت بھی کی۔ عدالت نے شہری مسائل کو حل کرنے اور عوام کی فلاح و بہبود کو یقینی بنانے میں تمام اسٹیک ہولڈرز کے تعاون کی اہمیت پر زور دیا۔

دریں اثنا، کارروائی کے دوران ماحولیاتی خدشات کو دور کرنے کی کوششوں کو بھی اجاگر کیا گیا، عدالتی کمیشن کے رکن نے عدالت کو بتایا کہ لاہور کی ٹولنٹن مارکیٹ میں صفائی کے اقدامات شروع کر دیے گئے ہیں۔ ان کا مزید کہنا ہے کہ مردہ مرغیوں کے ٹرک روزانہ صبح بازار آتے ہیں اور اس کا گوشت شوارمے میں استعمال ہوتا ہے جس کی قیمت 30 روپے ہے۔

مزید برآں، انہوں نے قصور میں ٹینری کے پانی کے پھیلنے کے معاملے کی طرف بھی عدالت کی توجہ مبذول کرائی اور کہا کہ اس ماحولیاتی خطرے سے نمٹنے کے لیے کوئی کوشش نہیں کی جا رہی ہے۔

ٹینریز ایسوسی ایشن کے وکلاء نے عدالت کو بتایا کہ وہ کمشنر اور ڈپٹی کمشنر کے ساتھ مل کر کام کر رہے ہیں۔

جیسا کہ لاہور ہائی کورٹ شہری بہتری اور ماحولیاتی استحکام کے لیے اپنی کوششیں جاری رکھے ہوئے ہے، اسٹیک ہولڈرز پر زور دیا جاتا ہے کہ وہ ایک بہتر اور زیادہ مساوی معاشرے کی تعمیر کے لیے تعاون اور کردار ادا کریں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں