40

وفاقی کابینہ کی تشکیل تکمیل کے قریب

صدارتی انتخابات کے اختتام کے بعد، اب توجہ وفاقی کابینہ کی تشکیل پر مرکوز ہو گئی ہے، جو 11 مارچ کو ہونے والی حلف برداری کی تقریب کے ساتھ حتمی شکل دینے کے قریب ہے۔

صدارتی انتخاب کا مرحلہ مکمل ہونے کے بعد وفاقی کابینہ کی ابتدائی تشکیل کا تعین کر دیا گیا ہے۔

قابل ذکر بات یہ ہے کہ پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل-این) نے پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کو ایک بار پھر وفاقی کابینہ میں شرکت کی دعوت دی ہے، اور حکمرانی میں اتحاد اور تعاون کی اہمیت پر زور دیا ہے۔

11 مارچ کو ہونے والی حلف برداری کی تقریب میں وفاقی کابینہ کے ابتدائی مرحلے میں 14 سے 16 وزراء کی شمولیت کا مشاہدہ کیا جائے گا۔ یہ تقریب حکومت کی انتظامی ذمہ داریوں کے باضابطہ آغاز کی علامت ہے اور مستقبل کے گورننس کے اقدامات کے لیے لہجہ متعین کرتی ہے۔

اہم وزارتی عہدوں سمیت کابینہ کی مکمل تشکیل کا اعلان ہونا باقی ہے۔

قبل ازیں مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف نے ہفتہ کو وزیر اعظم شہباز شریف کو وفاقی کابینہ کی تشکیل کے بعد منشور پر عمل درآمد کی ہدایت کی تھی۔

اسلام آباد میں وزیراعظم چیمبر میں مسلم لیگ ن کا مشاورتی اجلاس نواز شریف کی زیر صدارت ہوا۔ ذرائع نے بتایا کہ ملاقات کے دوران اتحادی جماعتوں کے ساتھ ہم آہنگی کے معاملات بھی زیر بحث آئے۔

سابق وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے نواز شریف کو اتحادی جماعتوں سے ہونے والے مذاکرات سے آگاہ کیا۔

پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے شریک چیئرمین آصف علی زرداری کے ملک کا صدر منتخب ہونے کے بارے میں بات کرتے ہوئے نواز شریف نے کہا: “آصف علی زرداری واضح اکثریت کے ساتھ ملک کے صدر منتخب ہو گئے ہیں۔”

مسلم لیگ (ن) کے سپریمو نے متعدد چیلنجز پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا، ’’عوام ہم سے بہت زیادہ توقعات لگائے بیٹھے ہیں۔ ملک میں مہنگائی پر قابو پانے کی اشد ضرورت ہے۔

ذرائع کے مطابق مسلم لیگ ن کے بعض رہنماؤں کا موقف تھا کہ پیپلز پارٹی کو وفاقی کابینہ کا حصہ بنایا جائے۔

مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں کے سوال کے جواب میں وزیراعظم شہباز شریف نے کہا کہ میں اس حوالے سے آصف علی زرداری سے درخواست کروں گا جب وہ صدر کا حلف اٹھائیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں