209

پاکستان کی پہلی ٹرانس جینڈر ڈاکٹر سارہ گل سے ملیں

سارہ گل نے ایک ایسے معاشرے میں پاکستان کی پہلی ٹرانس جینڈر ڈاکٹر بننے کے بعد تاریخ رقم کی ہے جہاں خواجہ سراؤں کے ساتھ خارجی سلوک کیا جاتا ہے۔

تاہم کچھ گل جیسے امتیازی سلوک سے لڑتے رہتے ہیں اور اپنے خوابوں کا تعاقب کرنے میں کامیاب ہو جاتے ہیں۔

سارہ نے جناح میڈیکل اینڈ ڈینٹل کالج سے تعلیم حاصل کی، جو کراچی یونیورسٹی کا الحاق شدہ ادارہ ہے۔

سارہ نے کہا، “میں پاکستان کی پہلی ٹرانس جینڈر ڈاکٹر بننے پر فخر محسوس کرتی ہوں۔”

اس نے کہا کہ وہ اپنے پیشے کو دوسرے ٹرانس جینڈر افراد کی فلاح و بہبود اور خوشحالی کے لیے استعمال کرنے کا ارادہ رکھتی ہے۔

پاکستان کے ٹرانس جینڈر افراد نے بار بار ثابت کیا ہے کہ وہ معاشرے کے کسی بھی فرد سے کم نہیں ہیں اور ان میں ٹیلنٹ کی کمی نہیں ہے بلکہ صرف مواقع، وسائل اور مساوی حقوق ہیں۔

نشا راؤ، جو ایک وکیل اور کارکن ہیں، حال ہی میں پاکستان کی پہلی ٹرانس جینڈر طالبہ بنی ہیں جنہیں قانون کی تعلیم حاصل کرنے کے لیے ایم فل پروگرام میں داخلہ دیا گیا ہے۔ وہ کراچی یونیورسٹی سے ایل ایل ایم کی ڈگری حاصل کریں گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں